بشیر احمد بلور یکم اگست 1943ءکو قیام پاکستان سے چار سال قبل پشاور میں پشاور کے معروف تاجر، سماجی و سیاسی خاندان میں بلور دین کے ہاں پیدا ہوئے -

بشیر احمد بلور
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 1 اگست 1943  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 22 دسمبر 2012 (69 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مذہب اسلام
جماعت عوامی نیشنل پارٹی  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد عثمان بلور، ہارون بلور
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

زندگیترميم

قانون میں گریجویٹ کیا اور پشاور ہائیکورٹ بار کے رکن بھی رہے - 1970ء میں اے این پی جو اس وقت این اے پی کے نام سے زیر قائم تھی اس میں شمولیت اختیار کی- 2008ءکے عام انتخابات میں پانچویں مرتبہ صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے، دو مرتبہ اے این پی کے صوبائی صدر بھی رہے - 1970ءمیں انہوں نے اے این پی سے اپنے سیاسی زندگی کا آغاز کیا اور سیاست میں اہم مقام حاصل کیا۔ 2008ءکے عام انتخابات میں وہ صوبائی حلقہ پی ایف تھری پشاور سے صوبائی اسمبلی کے رکن منتخب ہوئے اور بعد ازاں چوتھی مرتبہ اے این پی کے سینئر صوبائی وزیر کی حیثیت سے حلف لیا۔ وہ دو مرتبہ اے این پی کے صوبائی صدر بھی رہے۔

وفاتترميم

22 دسمبر 2012 کو عوامی نیشنل پارٹی کی ایک ریلی میں ایک خودکش حملہ آور شامل ہوا اور اس نے خود کو دھماکے سے اڑا دیا۔ اس واقعے میں بلور کے علاوہ ان کے سیکرٹری اور ایک اعلی پولیس اہلکار بھی جاں بحق ہوئے -

تدفینترميم

بشیر احمد بلور کی نمازجنازہ کرنل شیر خان شہید اسٹیڈیم میں پڑھائی گئی- جنازے میں اسفندیارولی، امیر حیدر خان ہوتی، یوسف رضا گیلانی سمیت ہزاروں لوگوں نے شرکت کی۔

سوگترميم

بشیر بلور کی وفات پر پورے پاکستان میں مختلف سطحوں پر سوگ کا اعلان کیا۔

حکومت پاکستانترميم

ایک روزہ سوگ اور قومی پرچم سرنگوں

حکومت خیبر پختونخواترميم

تین روزہ سوگ

حکومت سندھترميم

دو روزہ سوگ

حکومت بلوچستانترميم

تین روزہ سوگ

حکومت پنجابترميم

ایک روزہ سوگ

عوامی نیشنل پارٹیترميم

دس روزہ سوگ

پاکستان پیپلز پارٹیترميم

دو روزہ سوگ

متحدہ قومی تحریکترميم

تین روزہ سوگ

پاکستان مسلم لیگ فنکشنلترميم

تین روزہ سوگ