جمیل صدقی الزھاوی ( عربی: جميل صدقي الزهاوي، ALA-LC : جمال صادق الزاہویā۔ 17 جون 1863ء - جنوری 1936ء) ایک ممتاز عراقی شاعر اور فلسفی تھے۔ انہیں عرب دنیا کے ایک بڑے معاصر شاعروں میں شمار کیا جاتا ہے اور وہ خواتین کے حقوق کے دفاع کے لیے جانے جاتے ہیں۔

جمیل صدقی
(عربی میں: جميل صدقي الزهاوي ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
 

معلومات شخصیت
پیدائش 18 جون 1863ء [1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 24 فروری 1936ء (73 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت سلطنت عثمانیہ
مملکت عراق
مملکت عراق   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نسل کرد [2]  ویکی ڈیٹا پر (P172) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن عرب اکیڈمی دمش   ویکی ڈیٹا پر (P463) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
والد محمد فیضی الزھاوی   ویکی ڈیٹا پر (P22) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
تلمیذ خاص کاطم الدخیلی   ویکی ڈیٹا پر (P802) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ شاعر ،  فلسفی ،  مصنف ،  صحافی [3][4]  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان عربی [5][6]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت دار الفنون   ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

سوانح

ترمیم

جمیل 18 جون 1863ء کو بغداد میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کے والد، عراقی کرد نژاد، عراق کے مفتی اور علمی بابن قبیلے کے رکن تھے۔ کرد عراق میں ایک طاقتور اور ممتاز خاندان ہے۔ ان کی والدہ ترکمانی تھیں۔ ان کے والدین بچوں کی پیدائش کے فورا بعد ہی الگ ہو گئے اور بچوں کی والدہ اپنے بچوں کو اپنے ساتھ لے گئیں۔ ان کے والد، جو جمیل کی ذہانت اور جزوی مزاج کا جزو تھے، نے خود لڑکے کی پرورش کرنے کا فیصلہ کیا۔ ان کے والد نے بہت چھوٹی عمر ہی سے انھیں شاعری کی تعلیم دی تھی اور ان کی حوصلہ افزائی کی تھی کہ وہ ایک دلچسپ ذہن کو فروغ دیں۔ [7]

مزید دیکھیے

ترمیم

حوالہ جات

ترمیم
  1. ^ ا ب Большая российская энциклопедия — اخذ شدہ بتاریخ: 23 جنوری 2017 — اجازت نامہ: کام کے حقوق نقل و اشاعت محفوظ ہیں
  2. https://sayyaraljamil.com/2010/10/01/1888.html
  3. عنوان : تاريخ الصحافة العربية — جلد: 1-4
  4. https://projectjaraid.github.io
  5. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb15574798m — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: فرانس کا قومی کتب خانہ — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  6. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb15574798m
  7. Badawī، M. M.، A Critical Introduction to Modern Arabic Poetry، Cambridge University Press, 1975, p. 45; Na Na, Autobiography and the Construction of Identity and Community in the Middle East، Springer, 2016. pp 111-112