حیات اللہ انصاری صحافی و افسانہ نگار لکھنؤ میں پیدا ہوئے۔ فرنگی محل کے عربی مدرسے سے سند حاصل کی۔ علی گڑھ سے بی۔ اے کیا۔ ابتدا میں ترقی پسند ادب کی تحریک سے وابستہ رہے۔ پھر کانگرس میں شامل ہو گئے۔ وہ ایم پی بھی رہے۔ کچھ دنوں ہفتہ وار ’’ہندوستان‘‘ کے ایڈیٹر رہے۔ اس کے بعد آل انڈیا کانگرس کے سرکاری اخبار ’’قومی آواز ‘‘ کے ایڈیٹر ہوئے۔ اخبار نویسی کے علاوہ افسانے بھی لکھتے رہے۔ 1936ء میں افسانوں کا ایک مجموعہ ’’انوکھی مصیبت‘‘ لکھنؤ میں چھپا۔ بعد میں بھرے بازار کے نام سے یہی مجموعہ چھپا۔ 1969ء میں ہندوستان کی جہدوجہد آزادی کی تاریخ پر مبنی اور پانچ جلدوں پر مشتمل ناول ’’لہو کے پھول‘‘ شائع ہوا۔ دہلی دوردرشن پر یہ ناول ایک سیریل کی صورت میں ’’لہو کے پھول‘‘ ہی کے عنوان سے پیش ہوا ہے۔ ’’مدار‘‘ اور ’’گھروندہ‘‘ ان کے دو اور ناول ہیں۔ آخرالذکر ناول پر ’’ٹھکانہ‘‘ کے عنوان سے ہندی فلم بھی بنی ہے۔

حیات اللہ انصاری
معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش سنہ 1912ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات 18 فروری 1999ء (86–87 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت بھارت (26 جنوری 1950–)
برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی علی گڑھ مسلم یونیورسٹی   ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان ،  مصنف   ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو   ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
ساہتیہ اکادمی ایوارڈ   (برائے:لہو کے پھول ) (1970)[2]  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

حوالہ جات

ترمیم
  1. کتب خانہ کانگریس اتھارٹی آئی ڈی: https://id.loc.gov/authorities/n85019760 — اخذ شدہ بتاریخ: 3 نومبر 2020 — ناشر: کتب خانہ کانگریس
  2. http://sahitya-akademi.gov.in/awards/akademi%20samman_suchi.jsp#URDU