"قمری تقویم" کے نسخوں کے درمیان فرق

259 بائٹ کا اضافہ ،  7 سال پہلے
کوئی خلاصۂ ترمیم نہیں
کوئی خلاصۂ ترمیم نہیں
اس [[تقویم]] کی بنیاد [[چاند]] کے سائز اور اس کے [[طلوع]] و [[غروب]] ہونے پر ہےہے۔ [[تقویم]]اس کامیں یہمہینے طریقہکی سبمعیاد سے’’شمسی پراناکی اوربنیاد سببھی سےیہی آسانتھی‘‘ ہےچاند چنانچہکے پہلےدو زمانےمسلسل کےطلوعات لوگکا [[چاند]]درمیانی کوعرصہ دیکھہے۔ کریہ عرصہ 29 یا 30 [[دن]] گناکا کرتےہوتا تھےہے اور چونکہاس کی ابتداء اور انتہاء [[چاندرؤیت ہلال]] پر منحصر ہوتی ہے۔ ایک قمری ماہ کا سائزکل ہردورانیہ روز29.530588 بدلتا رہتادن ہے ہے۔ اس لئےطرح اسقمری کےسال ذریعےکا حسابکل لگانادورانیہ بھی آسان354.367056 دن بنتا ہے۔
::اس [[تقویم]] کے مطابق [[مہینہ]] کبھی [[انتیس]] [[دن]] کا ہوتا ہے اور کبھی [[تیس]] [[دن]] کا، ہر پہلی [[رات]] کے [[چاند]] سے [[مہینے]]([[مہینہ]] کی [[جمع]]) کا آغاز ہوتا ہے، جب [[انتیس]] [[دن|دنوں]]([[دن]] کی [[جمع]]) کے بعد نظر آئے تو [[مہینہ]] [[انتیس]] [[دن]] کا ہوتا ہے ورنہ [[تیس]] [[دن]] کا۔
 
::اس [[تقویم]] کے مطابق [[مہینہ]] کبھی [[انتیس]] [[دن]] کا ہوتا ہے اور کبھی [[تیس]] [[دن]] کا، ہر پہلی [[رات]] کے [[چاند]] سے [[مہینے]]([[مہینہ]] کی [[جمع]]) کا آغاز ہوتا ہے، جب [[انتیس]] [[دن|دنوں]]([[دن]] کی [[جمع]]) کے بعد نظر آئے تو [[مہینہ]] [[انتیس]] [[دن]] کا ہوتا ہے ورنہ [[تیس]] [[دن]] کا۔
قمری سال شمسی سال سے تقریبی طور پر 11 دن چھوٹا ہوتا ہے۔ اس میں مہینے کی معیاد ’’شمسی کی بنیاد بھی یہی تھی‘‘ چاند کے دو مسلسل طلوعات کا درمیانی عرصہ ہے۔ یہ عرصہ 29 یا 30 دن کا ہوتا ہے اور اس کی ابتداا اور انتہا قمری سال میں رویت ہلال پر منحصر ہوتا ہے۔ یہ سال موسموں اور تاریخوں میں بہت سے تغیر و تبدل کا باعث ہوتا ہے۔ قمری تاریخ کو شمسی تاریخ میں تبدیل کرنا سہل نہیں۔
 
[[تقویم]] کا یہ طریقہ سب سے پرانا اور سب سے آسان ہے چنانچہ پہلے زمانے کے لوگ [[چاند]] کو دیکھ کر [[دن]] گنا کرتے تھے اور چونکہ [[چاند]] کا سائز ہر روز بدلتا رہتا ہے اس لئے اس کے ذریعے حساب لگانا بھی آسان ہے۔
اسلامی یا [[اسلامی تقویم|ہجری تقویم]] داراصل ایک قمری [[تقویم (ماہ و سال)|تقویم]] ہے جو اسلام سے پہلے بھی عرب میں رائج تھی۔ بعد میں اس میں مناسب تبدیلیاں کر کے اسے حضرت [[محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم|محمد]] {{درود}} کی [[ہجرت]] سے شروع کیا گیا۔
 
قمری سال شمسی سال سے تقریبی طور پر 11 دن چھوٹا ہوتا ہے۔ اس میں مہینے کی معیاد ’’شمسی کی بنیاد بھی یہی تھی‘‘ چاند کے دو مسلسل طلوعات کا درمیانی عرصہ ہے۔ یہ عرصہ 29 یا 30 دن کا ہوتا ہے اور اس کی ابتداا اور انتہا قمری سال میں رویتموسم ہلالیکساں پرمہینوں منحصرمیں ہوتا ہے۔ یہ سالنہیں موسموںآتے اور تاریخوں میں بہت سے تغیر و تبدل کاہو باعث ہوتاجاتا ہے۔ قمری تاریخ کو شمسی تاریخ میں تبدیل کرنا سہل نہیں۔نہیں قدرے مشکل ہے۔
 
اسلامی یا [[اسلامی تقویم|ہجری تقویم]] داراصلدراصل ایک قمری [[تقویم (ماہ و سال)|تقویم]] ہے جو [[اسلام]] سے پہلے بھی [[عرب]] میں رائج تھی۔ بعد میں اس میں مناسب تبدیلیاں کر کے اسے حضرت [[محمد صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم|محمد]] {{درود}} کی [[ہجرت]] کو بنیاد بنا کر اس میں مناسب تبدیلیاں کر کے نئے سرے سے شروع کیا گیا۔
 
== مزید دیکھیے ==
22,177

ترامیم