مرکزی مینیو کھولیں

تبدیلیاں

44 بائٹ کا اضافہ ،  4 سال پہلے
م
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
=== سرنامے
علامہ راغب اصفہانی لکھتے ہیں :
کتب کا معنی ہے چمڑے کے دو ٹکڑوں کو سی کر ایک دوسرے کے ساتھ ملا دینا‘ اور عرف میں اس کا معنی ہے : بعض حروف کو لکھ کر بعض دوسرے حروف کے ساتھ ملانا‘ اور کبھی صرف ان ملائے ہوئے حروف پر بھی کتاب کا اطلاق ہوتا ہے اسی اعتبار سے اللہ کے کلام کو کتاب کہا جاتا ہے اگرچہ وہ لکھا ہوا نہیں ہے‘ قرآن مجید میں ہے : ’’ الم ذَلِكَ الْكِتَابُ‘‘ کتاب اصل میں مصدر ہے‘ پھر مکتوب کا نام کتاب رکھ دیا گیا‘ نیز کتاب اصل میں لکھے ہوئے صحیفہ کا نام ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
’’يَسْأَلُكَ أَهْلُ الْكِتَابِ أَنْ تُنَزِّلَ عَلَيْهِمْ كِتَابًا مِنَ السَّمَاءِ: (النساء : ١٥٣) اھل کتاب آپ سے یہ سوال کرتے ہیں کہ آپ ان پر آسمان سے کوئی صحیفہ نازل کردیں۔
فرض اور تقدیر کے معنی میں کتاب کا لفظ مستعمل ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
اللہ کی طرف سے حجت ثابتہ کے معنی میں بھی کتاب کا لفظ مستعمل ہے‘ قرآن کریم میں ہے :
’’ أَمْ آتَيْنَاهُمْ كِتَابًا مِنْ قَبْلِهِ‘‘۔ (الزخرف : ٢١) کیا ہم نے اس (قرآن) سے پہلے انہیں کوئی حجت ثابتہ دی ہے ؟
’’ فاتوا بکتبکم ان کنتم صدقین (الصافات : ١٥٧) تم اپنی حجت ثابۃ لے آؤ اگر تم سچے ہو
کتاب کا لفظ حکم کے معنی میں بھی وارد ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
’’ لولا کتب من اللہ سبق لمسکم فیما اخذتم عذاب عظیم (الانفال : ٦٨) اگر پہلے (معاف کردینے کا) حکم‘ اللہ کی طرف سے نہ ہوتا تو (کافروں سے) جو (فدیہ کا مال) تم نے لیا تھا‘ تمہیں اس میں ضرور بڑا عذاب پہنچتا
قرآن مجید میں جہاں اہل کتاب کا لفظ آتا ہے تو اس کتاب سے تورات‘ انجیل یا یہ دونوں کتابیں مراد ہوتی ہیں۔ (المفردات ص ٤٢٥۔ ٤٢٣‘ مطبوعہ المکتبۃ المرتضویہ‘ ایران‘ ١٣٤٢ ھ)
=== کتاب کا اصطلاحی معنی ===
کتاب کا اصطلاحی معنی یہ ہے : وہ صحیفہ جو ایسے متعدد مسائل جامع ہو جو جنسا متحد ہوں اور نوعا اور صنفا مختلف ہوں اور وہ صحیفہ ابواب اور فصول پر منقسم ہو‘ جیسے کتاب الطہارۃ‘ کتاب الزکوۃ وغیرہ۔
اس آیت میں کتاب سے مراد آسمانی صحیفہ ہے یعنی قرآن مجید<ref>تفسیر تبیان القرآن مولانا غلام رسول سعیدی جلد اول صفحہ 240،241فرید بکسٹال لاہور</ref>۔<br />