"بلی" کے نسخوں کے درمیان فرق

3 بائٹ کا ازالہ ،  6 سال پہلے
م
clean up, replaced: ← (2) using AWB
م (clean up, replaced: ← (2) using AWB)
تمام معلوم تاریخ میں، بلیوں کو پالنے کا مقصد یہ تھا کہ وہ چوہے کھاتی ہیں اور اس طرح اناج کو اس نقصان سے محفوظ رکھا جا سکتا ہے۔<br />
قدیم [[مصر|مصری]] لوگ بلیوں کی پوجا بھی کرتے تھے اور ان کی لاشوں کو محفوظ کرتے تھے تا کہ انھیں ہمیشہ کے لیے حفاظت مل سکے۔ آج کے دور میں بلیاں پالتو جانوروں کے طور پر پالی جاتی ہیں، اس کے علاوہ بھی بلی انسانی آبادیوں میں آوارہ پائی جاتی ہے۔<br />
ترقی یافتہ ممالک میں بلیوں کو پالتو جانوروں کو پالنے کا رواج بہت زیادہ ہے اور ان کے لیے مخصوص خوراک تیار کرنے کے کاروبار کو ایک بڑی صنعت کی حیثیت حاصل ہے۔
==اسلام==
 
اسلام میں بلی حلال نہیں ہے لیکن اس کو پاکیزہ اور طاہر حیوانات میں شمار کیا جاتا ہے۔
 
انسان کے لیے شرعى طور پر جائز ہے کہ وہ مباح اشیاء کو اپنى ملکیت بنا سکتا ہے، جو کسى نے بھى ملکیت میں نہ لى ہوں، مثلا صحرا سے ایندھن اکٹھا کرنا، یا جنگل سے لکڑیاں لینا، اور اسى طرح بلیاں پکڑ کر ان کو پالنا اور تربیت کرنا، اور مباح چیز پر ہاتھ رکھنے، یا اس پر فعلى غلبہ حاصل کرنے سے مباح چیز کى ملکیت حاصل ہو جاتى ہے، جب کہ وہ کسى کى ملکیت نہ ہو.
 
:" ایک عورت کو بلى کى وجہ سے عذاب دیا گیا، اس عورت نے بلى کو باندھ دیا حتى کہ وہ مر گئى وہ اسے نہ تو کھانے کے لیے کچھ دیتى اور نہ ہى پینے کے لیے، اور نہ ہى اسے چھوڑا کہ وہ زمین کے کیڑے مکوڑے کھائے، تو وہ عورت بلى کى وجہ سے آگ میں داخل ہو گئى "
 
 
اور بلى اگر کھانے میں سے کچھ کھا جائے، یا پانى پى جائے تو وہ پلید اور نجس نہیں ہو جاتا، کیونکہ ابوداود<ref>سنن ابو داود حدیث نمبر ( 69 )</ref> وغیرہ میں حدیث ہے:
86,585

ترامیم