"حیدرآباد، سندھ" کے نسخوں کے درمیان فرق

م
نیرون قلعہ پر محمّد بن قاسم کا حملہ
م (تاریخ - نیرون کوٹ)
م (نیرون قلعہ پر محمّد بن قاسم کا حملہ)
== تاریخ ==
===نیرون کوٹ===
موجودہ حیدرآباد شہر کی جگہ پہلے '''نیرون کوٹ''' نامی ایک بستی قائم تھی؛ یہ سندھوُ دریا (اب [[دریائے سندھ]]) کے کنارے مچھیروں کی ایک چھوٹی بستی تھی۔ اِس کا نام اِس کے سردار نیرون کے نام سے اخذ کیا جاتا تھا۔ دریائے سندھ کے متوازن میں ایک پہاڑی سلسلہ واقع ہے جسے [[گنجو ٹاکر]] کہتے ہیں۔ یہ بستی جوں جوں ترقی کرتی گئی ویسے ہی دریائے سندھ اور اِن پہاڑوں کے درمیان بڑھنے لگی۔تھوڑےلگی۔ ہی[[چچ عرصےنامہ]] میں اِسایک پہاڑیسردار سلسلےکا پراکثر کُچھذکر بدھمتملتا پجاریہے آجس بسے۔کا شہرنام میں[[آغم اچھیلوہانہ]] تجارت کے خواہشمند لوگ اِن پجاریوں کے پاس اپنی التجائیں لے کر آتے تھے۔تھا۔ یہ بستی[[منصورہ ایک(برہمن تجارتیآباد)‎|برہمن مرکزآباد]] توشہر بنکا ہیسردار گئیتھا لیکناور اِس کے ساتھ ساتھ دوسری اقوام کی نظریںملکیت اِسمیں کیدو اِسعلاقے بڑھتیآتے مقبولیتتھے کو دیکھےلوہانہ نہاور رہساما۔ سکیں۔636ء نیرونمیں کوٹلوہانہ کے لوگوںجنوب کےمیں پاسایک ہتھیاربستی توکا تھےذکر نہیں،ملتا بسہے فصلیںجسے کاشت'''نارائن کرنےکوٹ''' کےکہا کُچھگیا اوزارہے۔ تھے۔تاریخ چنانچہ،نویسوں جبکا 711ءماننا میںہے مسلمانکہ عربینارائن افواجکوٹ نےاور اِسنیرون بستیکوٹ پرایک دھاوا بولا تو یہ لوگ اپنا دفاع نہ کر سکے اور یہہی بستی تقریباً فناکا ہونام گئی۔تھا۔
 
تھوڑے ہی عرصے میں اِس پہاڑی سلسلے پر کُچھ بدھمت پجاری آ بسے۔ شہر میں اچھی تجارت کے خواہشمند لوگ اِن پجاریوں کے پاس اپنی التجائیں لے کر آتے تھے۔ یہ بستی ایک تجارتی مرکز تو بن ہی گئی لیکن اِس کے ساتھ ساتھ دوسری اقوام کی نظریں اِس کی اِس بڑھتی مقبولیت کو دیکھے نہ رہ سکیں۔ نیرون کوٹ کے لوگوں کے پاس ہتھیار تو تھے نہیں، بس فصلیں کاشت کرنے کے کُچھ اوزار تھے۔ چنانچہ، جب 711ء میں مسلمان عربی افواج نے اِس بستی پر دھاوا بولا تو یہ لوگ اپنا دفاع نہ کر سکے اور یہ بستی تقریباً فنا ہو گئی: یہاں بس ایک قلعہ اور اِس کے مکین باقی رہ گئے تھے۔بمطابق چچ نامہ، اِس قلعہ کو نیرون قلعہ کے نام سے جانا جاتا تھا۔ [[محمد بن قاسم|محمّد بن قاسم]] اپنے لشکر سمیت اِس قلعہ کے باہر آ کھڑا ہوا اور راجہ داہر کو اپنی آمد کی اطلاع بھجوائی۔{{حوالہ|نام=محمد_بن_قاسم_اور_نیرون_قلعہ|ربط=http://www.pdfbookspk.com/downloads/2015/07/fathe-nama-sindh-urf-chach-nama.html|عنوان=فتح نامہ عرف چچ نامہ|مصنف=نبی بخش خان بلوچ|تاریخ=2008ء|ناشر=سندھی ادبی بورڈ|صفحہ=147–148|تاریخ اخذ=30 نومبر 2015ء}} بعد از، محمّد بن قاسم نے قلعہ کو بغیر جنگ و جتن ہی فتح کر لیا۔<ref name="محمد_بن_قاسم_اور_نیرون_قلعہ" />
[[چچ نامہ]] میں ایک سردار کا اکثر ذکر ملتا ہے جس کا نام [[آغم لوہانہ]] تھا۔ یہ [[منصورہ (برہمن آباد)‎|برہمن آباد]] نامی شہر کا سردار تھا اور اِس کی ملکیت میں دو علاقے آتے تھے — لوہانہ اور ساما۔ 636ء کی اِس تحریر میں، لوہانہ کے جنوب میں ایک بستی کا ذکر ملتا ہے جسے '''نارائن کوٹ''' کہا گیا ہے۔ تاریخ نویسوں کا ماننا ہے کہ نارائن کوٹ اور نیرون کوٹ ایک ہی بستی کا نام تھا۔
 
==شہر کے لوگ==
1,262

ترامیم