"محمد افضل خان" کے نسخوں کے درمیان فرق

1,393 بائٹ کا اضافہ ،  4 سال پہلے
م
حوالہ جات درج کیے
م
م (حوالہ جات درج کیے)
== سوانح ==
=== صوبۂ بلخ کا اختیار ===
[[ترکستان|تُرکِستان]] میں افغان سرکار کمزور ہوتی دکھائی دے رہی تھی اور [[1849ء]] میں یہاں [[دوست محمد خان]] کے صاحبزادوں کا آپسی اختلاف اِس کی وجہ بنی۔ دوست محمد نے اپنے لئے [[غلام حیدر]] کو بطور حقیقی وارث نامزد کیا اور یوں [[صوبہ بلخ|صوبۂ بلخ]] اِن کے نام کر رکھا تھا۔ [[1851ء]] میں [[کابل|کابُل]] بُلائے جانے پر، غلام حیدر نے اپنے سوتیلے بھائی افضل خان کے نام اِس صوبے کی سربراہی سونپ دی۔ افضل خان [[1852ء]] میں صوبۂ بلخ کے گورنر تو منتخب ہو گئے لیکن غلام حیدر نے اِس صوبے کے ایک ضلع [[خلم|تاشقورغان]] کا اختیار اپنے پاس ہی رکھا۔ خود غلام حیدر کابُل سے تاشقورغان کی سربراہی تو کر نہیں سکتے تھے اسلئے اُنہوں نے اپنے سگے بھائی، محمد شریف، کو اِس پر سربراہی کرنے کا کہا۔ اِس بات کو لے کر افضل خان نے خوب ناراضگی کا اظہار کیا۔{{حوالہ
|نام=سوانح_1
|ربط=https://books.google.co.in/books?id=ylTi-e2C_0IC&pg=PA115
|عنوان=افغانستان کی ریاست اور قبائل انیسویں صدی میں: امیر دوست محمد خان کا راج (1826ء-1863ء)
|مصنف=کرسٹین نوئیل
|ناشر=رٹلیج
|تاریخ=2012ء
|صفحہ=115
|تاریخ اخذ=4 دسمبر 2015ء}} [[1851ء]] میں [[کابل|کابُل]] بُلائے جانے پر، غلام حیدر نے اپنے سوتیلے بھائی افضل خان کے نام اِس صوبے کی سربراہی سونپ دی۔ افضل خان [[1852ء]] میں صوبۂ بلخ کے گورنر تو منتخب ہو گئے{{حوالہ
|نام=سوانح_2
|ربط=https://books.google.com.pk/books?id=AAHna6aqtX4C&pg=PA15
|عنوان=لغت التاریخ افغانستان
|مصنف=لوڈوگ ایڈمیک
|ناشر=سکیئرکرو پریس
|تاریخ=2012ء
|صفحہ=15
|تاریخ اخذ=4 دسمبر 2015ء}} لیکن غلام حیدر نے اِس صوبے کے ایک ضلع [[خلم|تاشقورغان]] کا اختیار اپنے پاس ہی رکھا۔<ref name="سوانح_1" /> خود غلام حیدر کابُل سے تاشقورغان کی سربراہی تو کر نہیں سکتے تھے اسلئے اُنہوں نے اپنے سگے بھائی، محمد شریف، کو اِس پر سربراہی کرنے کا کہا۔ اِس بات کو لے کر افضل خان نے خوب ناراضگی کا اظہار کیا۔
 
=== سوتیلے بھائیوں سے اختلاف ===
صوبے کا اختیار ملتے ساتھ ہی، افضل خان ہر ایسا منصوبہ بنانے لگے جس سے کسی طرح محمد شریف کو تاشقورغان کی کُرسی سے برطرف کریں۔ آپ کے تعلقات اپنے اِس سوتیلے بھائی سے نسبتاً اچھے تھے لیکن آپ تاشقورغان کے اُس ایک علاقے پر براجمان ہونے کیلئے اکثر اِن کو نیچا دکھانے کی کوشش کرتے تھے۔ اکثر و بیشتر آپ محمد شریف سے متعلق نازیبا شکایات کابُل بھجوایا کرتے تھے۔ [[1854ء]]، اور پھر [[1855ء]] میں، آپ نے کابُل ایک پیغام بھجوایا جس میں آپ نے کھل کر محمد شریف کی شکایت کی اور کہا کہ اپنے اس سوتیلے بھائی کی وجہ سے 1852ء سے ہی آپ کی بلخ میں سربراہی زوال پذیر رہی تھی۔<ref name="سوانح_1" />
 
غلام حیدر نے آپ پر نظر رکھنے کیلئے ایک جاسوس بھیجا جس نے خبر دی کہ آپ 1854ء سے ہی محمد شریف کو زبردستی کُرسی سے برطرف کرنے کے منصوبے بنا رہے تھے۔ اِس خبری نے یہ بھی اطلاع دی کہ آپ اپنے بقیہ سوتیلے بھائیوں، آقچہ میں والی محمد اور نملک میں محمد زمان، سے ڈرتے نہ تھے۔<ref name="سوانح_1" />
 
=== کابل میں مزاکرات ===
بہرحال، جون 1855ء میں آپ خود کابُل تشریف لے گئے اور ترکستان کی کل سرزمین کی گورنرشپ مانگ ڈالی۔{{حوالہ
بہرحال، جون 1855ء میں آپ خود کابُل تشریف لے گئے اور ترکستان کی کل سرزمین کی گورنرشپ مانگ ڈالی۔ [[28 جون]] کو امیرِ وقت کے لیے آپ صوبے سے لیے گئے محصول کی مد میں 60,000 روپیے لائے۔ [[10 جولائی]] کو امیر نے آپ کو کل ترکستان پر اقتدار سمبھالنے کا وعدہ دیا۔ آپ کے ماتحت 30,000 افراد کی ایک فوج تھی جس کی سربراہی آپ نے [[جنرل شیر محمد]] کے سپرد کی۔ آپ کے صاحبزادے، [[امیر عبدالرحمن خان|عبدالرحمن خان]]، صرف 13 برس کے تھے جب آپ نے اِنہیں [[خلم|ضلع تاشقورغان]] کا نائب گورنر بنا دیا۔ جنرل شیر محمد کی موت کے بعد آپ نے اپنے بیٹے کو اپنی فوج کا سربراہ بھی بنا دیا۔
|نام=سوانح_3
 
|ربط=https://books.google.co.in/books?id=ylTi-e2C_0IC&pg=PA116
|عنوان=افغانستان کی ریاست اور قبائل انیسویں صدی میں: امیر دوست محمد خان کا راج (1826ء-1863ء)
|مصنف=کرسٹین نوئیل
|ناشر=رٹلیج
|تاریخ=2012ء
|صفحہ=116
بہرحال،|تاریخ جون 1855ء میں آپ خود کابُل تشریف لے گئے اور ترکستان کی کل سرزمین کیاخذ=4 گورنرشپدسمبر مانگ ڈالی۔2015ء}} [[28 جون]] کو امیرِ وقت کے لیے آپ صوبے سے لیے گئے محصول کی مد میں 60,000 روپیے لائے۔ [[10 جولائی]] کو امیر نے آپ کو کل ترکستان پر اقتدار سمبھالنے کا وعدہ دیا۔ آپ کے ماتحت 30,000 افراد کی ایک فوج تھی جس کی سربراہی آپ نے [[جنرل شیر محمد]] کے سپرد کی۔ اسلام قبول کرنے سے پہلے شیر محمد کا نام کیمپبل تھا اور یہ ایک [[اسکاچستانی]] سپاہی تھا جسے [[قندہار]] میں گرفتار کیا گیا تھا۔ آپ کے صاحبزادے، [[امیر عبدالرحمن خان|عبدالرحمن خان]]، صرف 13 برس کے تھے جب آپ نے اِنہیں [[خلم|ضلع تاشقورغان]] کا نائب گورنر بنا دیا۔<ref name="سوانح_2" /> جنرل شیر محمد کی موت کے بعد آپ نے اپنے بیٹے کو اپنی فوج کا سربراہ بھی بنا دیا۔
 
[[زمرہ:1811ء کی پیدائشیں]]
1,262

ترامیم