"کتاب" کے نسخوں کے درمیان فرق

2,588 بائٹ کا ازالہ ،  4 سال پہلے
←‏کتاب کا لغوی معنی: غیر ضروری مواد کا اخراج
(←‏کتاب کا لغوی معنی: اضافہ سانچہ/سانچہ جات)
(←‏کتاب کا لغوی معنی: غیر ضروری مواد کا اخراج)
کتابوں کے شوقین یا کتابیں زیادہ پڑھنے والے کو عموماً ، کتابوں کا رَسیا یا کتابوں کا کیڑا کہاجاتا ہے. <br />
[[کتب خانہ]] ایک جگہ ہے جہاں پر کتابیں صرف پڑھنے کے لئے مہیا کی جاتی ہیں. کتب خانے میں کتابوں کی خرید و فروخت نہیں کی جاتی. <br />
=== کتاب کا لغوی معنی ===
علامہ راغب اصفہانی لکھتے ہیں :
کتب کا معنی ہے چمڑے کے دو ٹکڑوں کو سی کر ایک دوسرے کے ساتھ ملا دینا‘ اور عرف میں اس کا معنی ہے : بعض حروف کو لکھ کر بعض دوسرے حروف کے ساتھ ملانا‘ اور کبھی صرف ان ملائے ہوئے حروف پر بھی کتاب کا اطلاق ہوتا ہے اسی اعتبار سے اللہ کے کلام کو کتاب کہا جاتا ہے اگرچہ وہ لکھا ہوا نہیں ہے‘ قرآن مجید میں ہے : ’’ الم ذَلِكَ الْكِتَابُ‘‘ کتاب اصل میں مصدر ہے‘ پھر مکتوب کا نام کتاب رکھ دیا گیا‘ نیز کتاب اصل میں لکھے ہوئے صحیفہ کا نام ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
{{قرآن-سورہ نساء آیت 153}} اھل کتاب آپ سے یہ سوال کرتے ہیں کہ آپ ان پر آسمان سے کوئی صحیفہ نازل کردیں۔
فرض اور تقدیر کے معنی میں کتاب کا لفظ مستعمل ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
’’ يَاأَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَى الَّذِينَ مِنْ قَبْلِكُمْ‘[[(البقرہ : ١٨٣)]] اے ایمان والو ! تم پر روزہ رکھنا فرض کیا گیا ہے جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر فرض کیا گیا تھا۔
’’ قُلْ لَنْ يُصِيبَنَا إِلَّا مَا كَتَبَ اللَّهُ لَنَا‘‘ [[(التوبہ : ٥١)]] آپ کہیے : ہمیں صرف وہی چیز پہنچے گی‘ جوہمارے لیے اللہ نے مقدر کردی ہے۔
کتاب کا لفظ بنانے اور شمار کرنے کے معنی میں بھی آتا ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
’’ فَاكْتُبْنَا مَعَ الشَّاهِدِينَ[[(آل عمران : ٥٣)]] سو گواہی دینے والوں کے ساتھ ہمارا شمار کرلے،
اللہ کی طرف سے حجت ثابتہ کے معنی میں بھی کتاب کا لفظ مستعمل ہے‘ قرآن کریم میں ہے :
’’ أَمْ آتَيْنَاهُمْ كِتَابًا مِنْ قَبْلِهِ‘‘۔ [[(الزخرف : ٢١)]] کیا ہم نے اس (قرآن) سے پہلے انہیں کوئی حجت ثابتہ دی ہے ؟
’’ فاتوا بکتبکم ان کنتم صدقین [[(الصافات : ١٥٧)]] تم اپنی حجت ثابۃ لے آؤ اگر تم سچے ہو
کتاب کا لفظ حکم کے معنی میں بھی وارد ہے‘ قرآن مجید میں ہے :
’’ لولا کتب من اللہ سبق لمسکم فیما اخذتم عذاب عظیم [[(الانفال : ٦٨)]] اگر پہلے (معاف کردینے کا) حکم‘ اللہ کی طرف سے نہ ہوتا تو (کافروں سے) جو (فدیہ کا مال) تم نے لیا تھا‘ تمہیں اس میں ضرور بڑا عذاب پہنچتا،
قرآن مجید میں جہاں اہل کتاب کا لفظ آتا ہے تو اس کتاب سے تورات‘ انجیل یا یہ دونوں کتابیں مراد ہوتی ہیں۔ [[(المفردات ص ٤٢٥۔ ٤٢٣‘ مطبوعہ المکتبۃ المرتضویہ‘ ایران‘ ١٣٤٢ ھ)]]
 
==حوالہ جات==