"راحیل شریف" کے نسخوں کے درمیان فرق

1,455 بائٹ کا اضافہ ،  5 سال پہلے
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
م
27 نومبر 2013 کو [[وزیر اعظم پاکستان|وزیر اعظم]] [[نواز شریف]] نے انہیں [[پاک فوج|پاکستانی فوج]] کا سپاہ سالار مقرر کیا-<ref name="et"/> ذرائع کے مطابق راحیل شریف سیاست میں عدم دلچسپی رکھتے ہیں- انہیں دو سینئر جرنیلوں، لیفٹیننٹ جنرل ہارون اسلم اور لیفٹیننٹ جنرل راشد محمود پر فوقیت دی گئی-<ref>{{cite web|last=Waraich |first=Omar |url=http://world.time.com/2013/11/27/a-very-important-man-meet-pakistans-new-army-chief/#ixzz2m6wMnXd0 |title=Gen. Raheel Sharif: Pakistan's New Army Chief Assumes Pivotal Job &#124; TIME.com |publisher=World.time.com |date=2013-11-27 |accessdate=2013-12-03}}</ref> ایک سینئر جنرل لیفٹیننٹ جنرل ہارون اسلم نے اسی وجہ سے فوج سے استعفی دیا-<ref>{{cite web | url=http://tribune.com.pk/story/638239/haroon-aslam-tenders-resignation-following-gen-sharifs-promotion-to-army-chief/ | title=Haroon Aslam resigns following Gen Sharif's promotion to army chief | publisher=Tribune | date=28 November 2013 | accessdate=3 December 2013}}</ref> ایک اور سینئر جنرل، لیفٹیننٹ جنرل راشد محمود کو بعد ازاں چیئرمین جوائنٹ چیف آف سٹاف کمیٹی مقرر کر دیا گیا-<ref>{{cite news | url=http://www.thenews.com.pk/Todays-News-13-26924-Gen-Raheel-Sharif-new-COAS-Gen-Rashad-Mahmood-CJCSC | title=Gen Raheel Sharif new COAS, Gen Rashad Mahmood CJCSC | work=The News International | date=28 November 2013 | accessdate=21 December 2013}}</ref><br>
20 دسمبر 2013 کو راحیل شریف کو نشان امتیاز(ملٹری) سے نوازا گیا-<ref>{{cite news | url=http://tribune.com.pk/story/648203/president-honours-army-chief-jcsc-head-with-nishan-e-imtiaz/ | title=President honours army chief, JCSC head with Nishan-e-Imtiaz | work=Tribune | date=20 December 2013 | accessdate=21 December 2013}}</ref>
 
==عوامی مقبولیت اور پذیرائی==
راحیل شریف نے جس وقت پاکستانی آرمی کی کمانڈ سنبھالی تو ملک میں امن و امان کی صورتحال انتہائی ابتر تھی۔انھوں نے دہشت گردوں کے خلاف سخت موقف اخیتار کیا اور سانحہ پشاور کے بعد پاکستان آرمی نے تمام تر ملک دشمن قوتوں کے خلاف بلا تفریق کاروائیاں کی۔اس سے امن و امان کی صورتحال میں بہتری ہونے لگی اور راحیل شریف ملک میں ایک مقبول آرمی چیف کی حثیت سے ابھرے۔حالیہ ایران سعودیہ کشیدگی میں وہ بھی ملکی وزیر اعظم میاں نواز شریف کے ساتھ دونوں ملکوں کے درمیان کشیدگے کم کرنے کیلئے دورے پر تھے۔<br />
راحیل شریف ایک آرمی چیف کی حثیت سے نومبر 2016 تک خدمات انجام دے سکتے ہیں۔انکے عہدے کے دورانیے میں توسیع کے حوالے سے زیر گردش افواؤں پر انھوں نے آئی ایس پی آر کے ذریعے اعلان کیاہے کہ "پاکستانی فوج ایک عظیم ادارہ ہے۔ میں ایکسٹینشن میں یقین نہیں رکھتا۔"<ref>http://www.bbc.com/urdu/pakistan/2016/01/160125_raheel_sharif_no_extension_rh</ref>
 
== اعزازات ==
256

ترامیم