"بلی" کے نسخوں کے درمیان فرق

1,607 بائٹ کا ازالہ ،  5 سال پہلے
←‏اسلام: غیر ضروری مواد کا اخراج
(←‏تاریخ: درستی املا)
(←‏اسلام: غیر ضروری مواد کا اخراج)
ترقی یافتہ ممالک میں بلیوں کو پالتو جانوروں کو پالنے کا رواج بہت زیادہ ہے اور ان کے لیے مخصوص خوراک تیار کرنے کے کاروبار کو ایک بڑی صنعت کی حیثیت حاصل ہے۔
 
== اسلام ==
{{اس|اسلام اور بلیاں|معزه}}
 
اسلام میں بلی حلال نہیں ہے لیکن اس کو پاکیزہ اور طاہر حیوانات میں شمار کیا جاتا ہے۔ہے۔جو بلیاں کسى کى ملکیت نہ ہوں انہیں پالنے میں کوئى حرج نہیں۔صحیح بخارى<ref>صحیح بخارى حدیث نمبر ( 3223 )</ref> اور صحیح مسلم<ref>صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1507 )</ref> میں [[عبد اللہ بن عمر]] سے حدیث ثابت ہے کہ رسول کریم {{درود}} نے فرمایا:
 
انسان کے لیے شرعى طور پر جائز ہے کہ وہ مباح اشیاء کو اپنى ملکیت بنا سکتا ہے، جو کسى نے بھى ملکیت میں نہ لى ہوں، مثلا صحرا سے ایندھن اکٹھا کرنا، یا جنگل سے لکڑیاں لینا، اور اسى طرح بلیاں پکڑ کر ان کو پالنا اور تربیت کرنا، اور مباح چیز پر ہاتھ رکھنے، یا اس پر فعلى غلبہ حاصل کرنے سے مباح چیز کى ملکیت حاصل ہو جاتى ہے، جب کہ وہ کسى کى ملکیت نہ ہو.
 
اس بنا پر جو بلیاں کسى کى ملکیت نہ ہوں انہیں رکھنے میں کوئى حرج نہیں، لیکن شرط یہ ہے کہ انسان انہیں کھانے پینے کو دے، اور انہیں تکلیف مت دے، لیکن اگرعلم ہو کہ وہ بلى نقصان دہ ہے مثلا بیمار ہے، یا یہ خدشہ ہو کہ اس کى بنا پر کسى کو کوئى بیمارى منتقل ہو جائے گى، تو اسے نہیں رکھنا چاہیے، کیونکہ [[محمد|رسول کریم صلى اللہ علیہ و آلہ سلم]] کا فرمان ہے:
 
:" نہ تو اپنا نقصان کرو، اور نہ ہى کسى کو نقصان دو "
 
تو جسے بلى کے وجود سے نقصان اور ضرر پہنچتا ہو اسے بلى نہیں رکھنى چاہیے، اور اسى طرح جو اسے کھلانے اور پلانے کى استطاعت نہ رکھے تو وہ بھى اسے چھوڑ دے تا کہ وہ زمین کے چھوٹے موٹے [[جانور]] کھا کر گزر بسر کر لے، اور وہ اسے اپنے گھر میں محبوس نہ کرے.
 
صحیح بخارى<ref>صحیح بخارى حدیث نمبر ( 3223 )</ref> اور صحیح مسلم<ref>صحیح مسلم حدیث نمبر ( 1507 )</ref> میں [[عبد اللہ بن عمر]] سے حدیث ثابت ہے کہ رسول کریم {{درود}} نے فرمایا:
 
:" ایک عورت کو بلى کى وجہ سے عذاب دیا گیا، اس عورت نے بلى کو باندھ دیا حتى کہ وہ مر گئى وہ اسے نہ تو کھانے کے لیے کچھ دیتى اور نہ ہى پینے کے لیے، اور نہ ہى اسے چھوڑا کہ وہ زمین کے کیڑے مکوڑے کھائے، تو وہ عورت بلى کى وجہ سے آگ میں داخل ہو گئى "
 
اور بلى اگر کھانے میں سے کچھ کھا جائے، یا پانى پى جائے تو وہ پلید اور نجس نہیں ہو جاتا، کیونکہ ابوداود<ref>سنن ابو داود حدیث نمبر ( 69 )</ref> وغیرہ میں حدیث ہے:
 
ایک عورت نے [[عائشہ]] رضى اللہ تعالى عنہا کو [[ہریسہ]] بھیجا تو وہ نماز پڑھ رہى تھیں، انہوں نے نماز میں ہى اشارہ کیا کہ وہ اسے رکھ دے، تو بلى آئى اور آکر اس میں سے کھا گئى، عائشہ رضى اللہ تعالى عنہا نے نماز کے بعد اسى جگہ سے ہریسہ کھایا جہاں سے بلى نے کھایا تھا، اور فرمایا: بلا شبہ رسول کریم {{درود}} کا فرمان ہے:
 
:" یہ ( بلى ) پلید اور نجس نہیں، بلکہ یہ تو تم پر آنے جانے والیاں ہیں"
 
عائشہ رضى اللہ تعالى عنہا بیان کرتى ہیں
: میں نے رسول کریم صلى اللہ علیہ وسلم کو بلى کے بچے ہوئے پانى سے وضوء کرتے ہوئے دیکھا ہے"
 
اور ایک روایت<ref>سنن ابو داود حدیث نمبر ( 68 )</ref> میں ہے:
[[کبشہ بنت کعب]] بن مالک جو کہ [[ابن ابى قتادہ]] کى بیوى ہیں وہ بیان کرتى ہیں کہ [[ابو قتادہ]] رضى اللہ تعالى عنہ ہمارے گھر آئے تو میں نے ان کے وضوء کے لیے پانى برتن میں ڈالا تو بلى آئى اور اس سے پینے لگى، تو انہوں نے اس کے لیے برتن ٹیڑھا کر دیا حتى کہ اس نے پانى پى لیا.لیا۔
 
[[کبشہ بنت کعب]] بن مالک جو کہ [[ابن ابى قتادہ]] کى بیوى ہیں وہ بیان کرتى ہیں کہ [[ابو قتادہ]] رضى اللہ تعالى عنہ ہمارے گھر آئے تو میں نے ان کے وضوء کے لیے پانى برتن میں ڈالا تو بلى آئى اور اس سے پینے لگى، تو انہوں نے اس کے لیے برتن ٹیڑھا کر دیا حتى کہ اس نے پانى پى لیا.
 
کبشہ بیان کرتى ہیں کہ انہوں نے مجھے دیکھا کہ میں ان کى طرف دیکھے جارہى ہوں تو وہ فرمانے لگے:
 
میرى بھتیجى کیا تم تعجب کر رہى ہو ؟
تو میں نے جواب دیا: جى ہاں.ہاں۔
 
تو میں نے جواب دیا: جى ہاں.
 
تو وہ کہنے لگے: رسول کریم {{درود}} نے فرمایا ہے:
 
:" یہ نجس اور پلید نہیں، بلکہ یہ تو تم پر گھومنے پھرنے والیاں ہیں "
 
ان دونوں روایتوں کو امام بخارى اور دار قطنى وغیرہ نے صحیح کہا ہے.<ref>دیکھیں: التلخیص ابن حجر ( 1 / 15 )</ref>
شریعت اسلامیہ میں بلیوں کى خرید و فروخت منع ہے.ہے۔
 
شریعت اسلامیہ میں بلیوں کى خرید و فروخت منع ہے.
 
صحیح مسلم<ref>صحیح مسلم حدیث نمبر ( 2933 )</ref> میں ابو زبیر سے حدیث مروى ہے وہ کہتے ہیں کہ میں نے جابر رضى اللہ تعالى عنہ سے کتے اور بلى کى قیمت کے متعلق دریافت کیا تو وہ کہنے لگے:
 
:" نبى کریم صلى اللہ علیہ وسلم نے اس سے روکا ہے "