"معاہدہ عمر" کے نسخوں کے درمیان فرق

5 بائٹ کا ازالہ ،  3 سال پہلے
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
(ٹیگ: ترمیم ماخذ 2017ء)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
''' معاہدہ ِعمر  '''  (جو   '''میثاقِ عمر''', ''' پیمانِ عمر''' یا '''قوانینِ عمر   '''; {{Lang-ar|شروط عمر}} یا {{Lang|ar|عهد عمر}} یا {{Lang|ar|عقد عمر}}  کے طور پر بھی جانا جاتا ہے   ) مسلمانوں اور [[سوریہ|شام]], [[بین النہرین|میسوپوٹامیا]]{{Sfn|Roggema|2009}} یا [[یروشلم]]{{Sfn|Meri|2005}} کے عیسائیوں کے درمیان ایک معاہدہ ہے جس نے  بعد میں [[فقہ|اسلامی فقہ]]  میں مذہبی حیثیت حاصل کی ۔  ساخت اور شِقوں کے  حوالے سے  معاہدے  کے کئی ترجمے  اور  تشاریح   ہیں .{{Sfn|Abu-Munshar|2007}} جبکہ معاہدہ روایتی طور پر [[خلفائے راشدین|الراشد]] [[خلافت|خلیفہ]] [[عمر بن خطاب|عمر ابن خطاب]],{{Sfn|Thomas|Roggema|2009}} سے منسوب ہے ، جبکہ کچھ فقہا اور مستشرقین  نے اس انتساب  پر  شک بھی  کیا ہے  {{Sfn|Abu-Munshar|2007}} اور اسے  ٩ صدی  کے  [[اجتہاد|مجتہدین]]  یا [[خلافت امویہ|اموی]] خلیفہ[[عمر بن عبدالعزیز| عمر الثانی]] کیساتھ منسوب کیا ہے . اس معاہدے  کو   ایلیا  کے لوگوں کیجانب  حفاظت کی ضمانتِ عمر    (یعنی اردو  : <font face="Jameel Noori Kasheeda, Jameel Noori Nastaleeq, Amiri, Georgia, sans-serif"> عہدعمر   </font>, {{Lang-ar|العهدة العمرية}})  کے ساتھ خلط نہیں کرنا چاہیے .
 
یہ معاہدہ عام طور پر غیر مسلموں - [[ذمی|ذمیوں]]  کے حقوق اور پابندیوں پر مشتمل ہے    پابند  کرنے سے  غیر مسلموں کے  افراد ، خاندان، مال اور املاک کے  امان   کی ذمہ داری لی جاتی ہے. دیگر حقوق اور شرائط و تصریحات  بھی لاگو ہو سکتی ہیں. [[ابن تیمیہ]]  کے مطابق جنہوں نے خود بھی اس معاہدہ کو فقہی اعتبار سے صحیح گردانا ہے ، [[ذمی]]<nowiki/>کو   معاہدہ ِعمر سے  خود   کو آزاد کرنے کا  حق حاصل ہے اور مسلمانوں کی سی حیثیت حاصل ہوتی ہے "اگر وہ مسلمان ریاستی فوج میں بھرتی ہو اور دوسرے مسلمانوں کے شانہ بشانہ جنگ میں لڑے ."<ref name="Ipgrave">{{Cite book|publisher=Georgetown University Press|isbn=1589017226|last=Ipgrave|first=Michael|title=Justice and Rights: Christian and Muslim Perspectives|year=2009|page=58}}</ref>
1,518

ترامیم