"خیبر" کے نسخوں کے درمیان فرق

2 بائٹ کا اضافہ ،  3 سال پہلے
م
درستی املا بمطابق فہرست املا پڑتالگر + ویکائی
م (خانہ معلومات کے اندراج کی درستی)
م (درستی املا بمطابق فہرست املا پڑتالگر + ویکائی)
'''خیبر''' ( [[عربی]]: محافظة خيبر) [[سعودی عرب]] کا ایک رہائشی علاقہ ہے۔
<ref>{{cite web |author =انگریزی ویکیپیڈیا کے مشارکین |url =https://en.wikipedia.org/w/index.php?title=Khaybar&redirect=no&oldid=646762382 |title =Khaybar|date = }}</ref>
خیبر عبرانی لفظ ہے، جس کے معنی قلعہ کے ہیں، اس بستی کویہود سے بڑا قدیم تعلق ہے اور پھراس سرزمین کوقلعوں کی سرزمین کہا جائے توصحیح بھی ہے، اس لیے کہ یہاں بہت سے قلعے تھے جن کی یادگار آج تک باقی ہے، خیبر حجاز کا بڑا زرخیز علاقہ ہے جس کوتجارتی لحاظ سے بھی بڑی اہمیت حاصل تھی یہاں کے یہود اقتصادی حیثیت سے بہت ممتاز تھے؛ انہوں نے متعد دجنگی قلعے بنارکھے تھے، جن میں سات قلعے بہت مشہور تھے: #ناعم (2)قموص (3)حصن الشق (4)حصن النطاۃ (5)حصن السلالم (6)حصن الوطیح (7)حصن الکتیبہ۔<ref>معجم البلدان،مؤلف: ابو عبد الله ياقوت بن عبد الله الرومی الحموی،ناشر: دار صادر، بيروت </ref>
(1)ناعم (2)قموص (3)حصن الشق (4)حصن النطاۃ (5)حصن السلالم (6)حصن الوطیح (7)حصن الکتیبہ۔<ref>معجم البلدان،مؤلف: ابو عبد الله ياقوت بن عبد الله الرومی الحموی،ناشر: دار صادر، بيروت </ref>
شمال حجاز میں یہود کابڑا مرکز خیبر تھا جوشام کے راستے میں مدینہ منورہ سے تقریباً آٹھ منزل پر واقع ہے، یہ نہیں معلوم ہو سکا کہ یہاں کی یہودی آبادی کہیں سے ہجرت کرکے آئی تھی یایہیں کی خود عرب آبادی نے یہودیت قبول کرلی تھی، بعض قرائن سے پتہ چلتا ہے کہ یہ قدیم آبادی ہے، معجم البلدان نے خیبر کی وجہ تسمیہ کے سلسلہ میں لکھا ہے کہ یہ بستی خیبر بن قانیہ کی طرف منسوب ہے، اس لحاظ سے ان کے اور انصار کے جدّ اعلی ایک ہی ہیں، انصار کے جداعلیٰ یثرب بن قانیہ تھے۔
یعقوبی کا بیان ہے کہ اسی میں بیس ہزار سپاہی رہتے تھے <ref>یعقوبی:2/52</ref> یعقوبی کے اس بیان سے خیبر کی وسعت اور اس کی آبادی کی کثرت کا اندازہ ہوتا ہے۔
[[زمرہ:تاریخی یہودی اسماج]]
[[زمرہ:سعودی عرب میں یہودی تاریخ]]
خیبر مدینہ منورہ سے 60میل کے فاصلے پر واقعہ یہودیوں کا بڑا شہر تھا.تھا۔ یہودی سازشیں کرتے تھے، جس کی وجہ سے آپ صلی اللہ علیہ و سلم نے ان پر حملہ کر کے قلعہ خیبر فتح کر لیا.لیا۔ یہاں کی زمینوں کی پیداوار کا نصف حصہ اسلامی حکومت کے تصرف میں آیا.آیا۔