"وفات مسیح پر اسلامی نقطہ نظر" کے نسخوں کے درمیان فرق

م
خودکار: خودکار درستی املا ← سے، سے، اور، علما
م (خودکار: خودکار درستی املا ← سے، سے، اور، علما)
{{نامکمل حوالہ حدیث}}
{{مسیح|}}
[[یسوع مسیح]] جو اسلامی دنیا میں [[عیسیٰ علیہ السلام]] کے نام سے بطور [[نبی]] مانے جاتے ہیں، اسلام میں مسیح کی [[تصلیب مسیح#مسلمانوں کا عقیدہ|صلیبی موت]] اور [[وفات]] کا مسئلہ مسیح کی [[آمد ثانی]] کی طرح بہت اہمیت رکھتا ہے۔ مسلمانوں کی بڑی تعداد [[قرآن]] کی ان آیات جن میں مسیح کو آسمان پر اٹھا لینے کا ذکر ہے، ان سے مسیح کی زمینی وفات کا انکار کرتے اور مسیح کو چوتھے آسمان پر زندہ مانتے ہیں، مگر چند علماءعلما ان آیات سے ایک دوسرا معنی اخذ کرتے ہیں کہ مسیح کی وفات ہوئی اور اس کے بعد وہ زندہ کیے گئے اور آسمان پر اٹھا لیے گئے، مگر اس پر مسلمانوں کا اجماع ہے کہ مسیح دوبارہ قریب قیامت زمین پر نزول کریں گے اور اسلامی حکومت قائم کریں، سور اور یہودیوں کو قتل کریں گے۔
 
== قرآن و سنت میں ==
{{ع}} '''وان من اهل الكتاب الاّ ليؤمن بہ قبل موتہ (الآية) - <ref>[[سورہ]]4 [[النساء]] آیت 159</ref>''' {{ف}}
 
اور (قربِ قیامت نزولِ [[مسیح (ضدابہام)|مسیح]] علیہ السلام کے وقت) اہلِ کتاب میں سے کوئی (فرد یا فرقہ) نہ رہے گا مگر وہ عیسٰی (علیہ السلام) پر ان کی موت سے پہلے ضرور (صحیح طریقے سے ) ایمان لے آئے گا،گا اور قیامت کے دن عیسٰی (علیہ السلام) ان پر گواہ ہوں گے۔
 
یعنی عیسٰی علیہ السلام کی وفات سے پیشتر جب ان کا آسمان سے نزول ہوگا تو اہل کتاب ان کو دیکھ کر ان کو مانیں گے اور ان کے بارے میں اپنے عقیدے کی تصحیح کریں گے۔
103,737

ترامیم