"کتاب استثنا" کے نسخوں کے درمیان فرق

م
خودکار: خودکار درستی املا ← چھ
م (خودکار درستی+ترتیب+صفائی (9.7))
م (خودکار: خودکار درستی املا ← چھ)
کتاب استثنا کا مقصد یہ تھا کہ [[بنی اسرائیل]] کی نئی نسل جو [[یشوع]] کی قیادت میں [[کنعان]] کی [[ارض موعود|موعود سرزمین]] پر قدم رکھنے والی تھی بخوبی جان لے کہ احکام خداوندی کو ماننے کے فوائد اور نہ ماننے کے نقصانات کیا ہیں۔ خداوند خدا کا بنی اسرائیل سے تقاضا تھا کہ اُس کی برگذیدہ قوم پاک زندگی بسر کرے اور خدا کی وفادار رہے تاکہ وہ زندہ رہے، برکت، صحت، خوشحالی اور کامیابی سے ہمکنار ہو۔ لیکن اگر وہ عہد شکنی کی مرتکب ہوگی اور راہ راست سے دور ہو جائے گی تو لعنت، بیماری، افلاس اور موت کا شکار ہو گی۔
 
شروع شروع میں [[یہود|یہودیوں]] کے ہاں یہ کتاب یعنی کتاب استثنا نہیں پائی جاتی تھی، موسیٰ کے کوئی چھےچھ سو سال بعد ایک جنگ کے زمانے میں ایک شخص ملک کے اس وقت کے یہودی بادشاہ کے پاس ایک کتاب لایا اور کہا یہ مجھے یہ کتاب ایک غار سے ملی ہے۔ معلوم نہیں کس کی ہے؟ مگر اس میں دینی احکام نظر آتے ہیں۔ بادشاہ نے اپنے زمانے کی ایک نبیہ عورت(یہودیوں کے ہاں عورتیں بھی نبی رہی ہیں یا کم از کم وہ اس کا دعویٰ کرتے ہیں) کے پاس بھیجا۔ اس نبیہ نے جس کا نام [[ہلدا]] (Hulda) بیان کیا جاتا ہے یہ کہلا بھیجا کہ یہ حضرت موسیٰ علیہ السلام ہی کی کتاب ہے۔ چنانچہ موسیٰ کے چھ سوسال بعد اسے موسیٰ کی طرف منسوب کیا جانے لگا۔
 
== حوالہ جات ==
111,622

ترامیم