"وزیر اعظم بھارت" کے نسخوں کے درمیان فرق

اضافہ مواد
(درستی)
(اضافہ مواد)
وزیر اعظم کئی وفود، اعلیٰ درجہ کی میٹنگ اور بین الاقوامی تنظیموں میں ملک نمائندگی کرتا ہے۔ <ref>{{cite web |url=http://pmindia.nic.in/visits.htm |title=Recent Visit of the Prime Minister |publisher=pmindia.nic.in |accessdate=5 جون 2008 |last= |first= |deadurl=yes |archiveurl=https://web.archive.org/web/20080420093915/http://pmindia.nic.in/visits.htm |archivedate=20 اپریل 2008 |df=dmy-all}}</ref> اور متعدد موقعوں پر قوم سے خطاب بھی کرتا ہے۔<ref>{{cite web |url=http://pmindia.nic.in/message.htm |title=Recent National Messages of the PM |publisher=pmindia.nic.in |accessdate=5 جون 2008 |last= |first= |deadurl=yes |archiveurl=https://web.archive.org/web/20080420085705/http://pmindia.nic.in/message.htm |archivedate=20 اپریل 2008 |df=dmy-all}}</ref>
دفعہ 78 کے تحت صدر اور کابینہ کے درمیان میں رسمی گفتگو وزیر اعظم کے وسطے سے کی جاتی ہے۔
 
=== انتظامی اور تقرری اختیارات ===
دوسرے لوگوں کے ساتھ وزیر اعظم مندرجہ ذیل عہدوں کے لئے صدر کے سامنے تجاویز پیش کرتا ہے:
* [[چیف الیکشن کمشنر آف انڈیا]] اور دیگر الیکشن کمشنرز۔
* [[بھارتی ناظر حسابات و محاسب عام]]
* [[ چیف انفارمیشن کمشنر آف انڈیا]] اور [[بھارت کے بین الاقوامی کنشنرز]]
* چیرمین اور دیگر ممبران برائے[[ یو پی ایس سی]]۔
* [[فائننس کمیشن]] کا چیرمین۔
* [[اٹارنی جنرل آف انڈیا]] اور [[ سولیسٹر جنرل آف انڈیا]]۔
* چونکہ وزیر اعظم [[اپائنٹمنٹ کمیٹی آف دی کیبینیٹ]] (اے سی سی ) کا چیئر مین ہوتا ہے، لہذا وہ سینئر سیلیکشن بورڈ کی تجویز پر سول سروینٹ کو سکریٹری، ایڈشنل سکریٹری، جوئنٹ سکریٹری جیسے عہدوں پر فائز کرتا ہے۔ <ref name="Governance in India2">{{Cite book|title=Governance in India|last=Laxmikanth|first=M.|publisher=[[McGraw-Hill Education]]|year=2014|isbn=978-9339204785|edition=2nd|location=[[نوئیڈا]]|publication-date=25 اگست 2014|pages=3.16–3.17}}</ref><ref name=":12">{{Cite web|url=http://www.rediff.com/news/2006/may/31spec.htm|title=What does the Cabinet Secretary do?|last=Iype|first=George|date=31 مئی 2006|website=[[Rediff.com]]|access-date=24 ستمبر 2017}}</ref><ref name=":22">{{Cite web|url=http://dopt.gov.in/committeereports/current-system|title=The Current System|last=|first=|date=|website=Department of Personnel and Training, [[حکومت ہند]]|access-date=12 فروری 2018}}</ref> اسی طرح وزیر اعظم [[بھارتی فوج کا چیف]]، [[بھارتی فضائیہ کا چیف]] اور [[بھارتی بحریہ کا چیف]] اور ا ن تینوں کے کمانڈروں کا انتخاب کرتا ہے۔ <ref>{{Cite web|url=https://www.indiatoday.in/magazine/from-india-today-magazine/story/20170102-indian-army-chief-bipin-rawat-praveen-bakshi-modi-government-infantry-officer-830076-2016-12-22|title=New chief on the block|last=Unnithan|first=Sandeep|date=22 دسمبر 2016|website=[[انڈیا ٹوڈے]]|publisher=[[Aroon Purie]]|issn=0254-8399|access-date=8 اپریل 2018}}</ref> اس کے علاوہ اے سی سی [[بھارتی پولس سروس]]، [[آل انڈیا سروس]] برائے پولس کے افسروں کا بھی فیصلہ کرتی ہے۔
بحیثیت [[وزیر برائے عملہ، عوامی شکایات اور پنشن]]، وزیر اعظم کو بھارت کے پریمیئر [[ دیوانی ملازمت]] <ref name="Governance in India">{{Cite book|title=Governance in India|last=Laxmikanth|first=M.|publisher=[[McGraw-Hill Education]]|year=2014|isbn=978-9339204785|edition=2nd|location=[[نوئیڈا]]|publication-date=25 اگست 2014|pages=7.6}}</ref> [[بھارتی انتظامی خدمات]] (آئی اے ایس) پر بھی اختیار حاصل ہے۔ <ref name="Profile IAS">{{Cite web|url=http://persmin.gov.in/ais1/Docs/ServiceProfile.pdf|title=Service Profile for the Indian Administrative Service|last=|first=|date=|website=|publisher=Department of Personnel and Training, [[حکومت ہند]]|language=en|format=PDF|accessdate=13 اگست 2017}}</ref><ref name=":19">{{Cite book|title=Public Administration in India|last=Tummala|first=Krishna Kumar|publisher=[[Allied Publishers]]|year=1996|isbn=978-8170235903|location=[[ممبئی]]|pages=154–159|oclc=313439426}}</ref> آئی اے ایس کا عملہ ہی زیادہ تر سینئر سول عہدوں پر فائز ہوتا ہے؛ <ref name="Profile IAS" /><ref name=":19" /> جیسے پبلک انٹرپرائزز سیلیکشن بورڈ (پی ای ایس بی)، <ref name="Governance in India23">{{Cite book|title=Governance in India|last=Laxmikanth|first=M.|publisher=[[McGraw-Hill Education]]|year=2014|isbn=978-9339204785|edition=2nd|location=[[نوئیڈا]]|publication-date=25 اگست 2014|pages=7.37}}</ref><ref name=":6">{{Cite web|url=http://dopt.gov.in/about-us/functions/organisation-under-mop-list|title=Organisation Under DOPT|website=Department of Personnel and Training, [[حکومت ہند]]|access-date=7 مارچ 2018}}</ref> اور[[ سینٹرل بیورو آف انویسٹیگیشن]] (سی بی آئی) <ref name="Governance in India23" /><ref name=":6" /> سوائے اس کے ڈائریکٹر کے کہ اس کا انتخاب ایک کمیٹی کرتی ہے جس میں (الف) وزیر اعظم بحیثیت چیئر پرسن، (ب) لوک سبھا کر حزب مخالف کا لیڈر اور (ج) چیف جسٹس ہوتے ہیں۔ <ref>{{Cite web|url=https://www.indiatoday.in/india/story/cbi-director-appointment-cji-kehar-narendra-modi-mallikarjun-kharge-ptm-955305-2017-01-16|title=All about CBI director's appointment as PM Modi, CJI Kehar, Kharge meet to vet names|date=16 جنوری 2017|website=[[انڈیا ٹوڈے]]|publisher=[[Aroon Purie]]|publication-place=[[نئی دہلی]]|issn=0254-8399|access-date=8 اپریل 2018}}</ref>
دوسرے ممالک کے برخلاف بھارت کے وزیر اعظم کو ججوں کے انتخاب اور تقرری میں زیادہ اختیار نہیں ہوتا ہے۔ کیونکہ ان کی تقرری ججوں کی کالیجیم کرتی ہے جو [[بھارت کا چیف جسٹس]]، عدالت عظمی کے چار سب سے سینئر جج اور [[بھارتی عدالت ہائے عالیہ کی فہرست]] کے کے چیف جسٹس یا سب سے سینئر ججوں پر مشتمل ہوتی ہے۔ <ref name="Where Angles Fear to Tread">{{cite book|url=https://www.worldcat.org/title/supreme-but-not-infallible-essays-in-honour-of-the-supreme-court-of-india/oclc/882928525?referer=di&ht=edition|title=Supreme but not infallible: Essays in honour of the Supreme Court of India|publisher=[[اوکسفرڈ یونیورسٹی پریس]]|year=2013|isbn=978-0-19-567226-8|editor=Kirpal|editor-first=Bhupinder N.|edition=6th impr.|location=[[نئی دہلی]]|pages=97–106|oclc=882928525}}</ref><ref>{{Cite web|url=http://www.thehindu.com/2001/08/07/stories/05072524.htm|title=Higher judicial appointments – II|last=Iyer|first=V. R. Krishna|authorlink=V. R. Krishna Iyer|date=7 اگست 2001|website=[[دی ہندو]]|publisher=[[The Hindu Group]]|issn=0971-751X|oclc=13119119|access-date=8 اپریل 2018}}</ref>