"موسیٰ بیگی" کے نسخوں کے درمیان فرق

1,912 بائٹ کا اضافہ ،  2 سال پہلے
 
ناگزیر حالات میں بھی موسیٰ بیگی نے [[روس]] میں اپنا قیام رکھا اور [[1926ء]] میں منعقد ہونے والی مسلم کانگریس میں اُنہوں نے اپنے ملک کی نمائندگی کی۔ وہ [[مئی]] [[1926ء]] میں [[مکہ مکرمہ]] ایک وفد کے ہمراہ پہنچے اور وہاں سے [[قاہر]] چلے گئے۔ آئندہ سال ([[1927ء]]) میں موسیٰ بیگی نے [[حج]] اداء کیا جس کی اجازت اُنہیں حکومت [[روس]] نے دے دی تھی۔ ادائیگی [[حج]] کے بعد وہ دوبارہ [[روس]] واپس چلے گئے کیونکہ اب تک اُن کا یہی خیال تھا کہ وہ [[روس]] میں مقیم رہ کر مسلم ثقافتی ورثے کو بچانے کی کوششیں کرسکتے ہیں۔
 
=== جلاوطنی ===
موسیٰ بیگی جو خوش گماں شخصیت ثابت ہوئے تھے، [[1930ء]] میں وہ مسلمانوں کے مستقبل سے مایوس ہوگئے اور اُنہوں نے ہمیشہ کے لیے [[روس]] چھوڑ دینے کا ارادہ کرلیا۔ [[1930ء]] میں وہ شب کی تاریکیوں میں [[روس]] سے فرار ہوئے، اِس حالت میں کہ اُن کے بیوی اور بچے [[روس]] میں رہ گئے۔ وہ [[مشرقی ترکستان|چینی ترکستان]] سے [[چین]] میں داخل ہوکر [[ترکستان]] اور [[افغانستان]] سے ہوتے ہوئے [[ہندوستان]] پہنچے۔ [[1931ء]] میں اُنہوں نے [[مصر]] اور [[فن لینڈ]] کا دورہ کیا اور [[1932ء]] میں [[ترکی]] کی تاریخ میں منعقد ہونے والی پہلی کانگریس میں شرکت کی۔ [[1933ء]] سے [[1937ء]] تک وہ [[فن لینڈ]]، [[جرمنی]] اور [[مشرق وسطی]] میں مقیم رہے۔ [[1938ء]] میں [[چین]] اور [[جاپان]] کا سفر کیا اور [[1939ء]] میں وہ [[ہندوستان]] سے ہوتے ہوئے [[افغانستان]] پہنچے۔ [[افغانستان]] میں مستقل رہائش اختیار کرنے کا اِرادہ کیا لیکن انگریزوں نے اُنہیں جیل بھیج دیا جہاں وہ اٹھارہ مہینے تک رہے۔ اٹھارہ مہینوں کے بعد رہا ہوئے تو ناچار حالت میں واپس [[ہندوستان]] چلے آئے اور یہاں [[1947ء]] تک مقیم رہے۔ [[1947ء]] کے بعد وہ [[مصر]] چلے گئے اور وہیں مقیم ہوئے۔
 
== وفات ==
[[مصر]] میں قیام کے دوران ہی کسمپرسی کی حالت میں 75 سال کی عمر میں [[28 اکتوبر]] [[1949ء]] کو میں [[قاہرہ]] میں انتقال ہوا۔
 
== مزید دیکھیے ==