"وزیر اعظم بھارت" کے نسخوں کے درمیان فرق

م
خانہ معلومات کے اندراج کی درستی
(درستی املا)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل ترمیم از موبائل ایپ اینڈرائیڈ ایپ ترمیم)
م (خانہ معلومات کے اندراج کی درستی)
==== 1984ء-1999ء ====
اندرا جی کے بعد ان کے 40 سالہ بیٹے [[راجیو گاندھی]] نے 3 اکتوبر 1984ء کو بحیثیت وزیر اعظم حلف لیا اور وہ سب سے کم عمر وزیر اعظم بن گئے۔ راجیو نے فوراً انتخابات کرانے کا حکم دے دیا۔ ان انتخابات میں کانگریس کو مکمل اکثریت حاصل ہوئی ۔ اس نے [[لوک سبھا]] کی 552 نششتوں میں سے 401 نششتوں پر جیت حاصل کی۔ یہ بھارت کی تاریخ میں کسی بھی پارٹی کی طرف کی سب سے بڑی جیت تھی۔ <ref>{{Cite news|url=http://news.bbc.co.uk/onthisday/hi/dates/stories/دسمبر/29/newsid_3314000/3314987.stm|title=1984: Rajiv Gandhi wins landslide election victory|work=[[برطانوی نشریاتی ادارہ]]|access-date=5 اپریل 2018}}</ref><ref>{{Cite web|url=https://news.google.com/newspapers?nid=336&dat=19841231&id=sTdTAAAAIBAJ&sjid=B4MDAAAAIBAJ&pg=3454,6835384&hl=en|title=Rajiv Gandhi takes oath as India's prime minister|date=31 دسمبر 1984|website=[[Deseret News]]|publication-place=[[نئی دہلی]]|issn=0745-4724|access-date=5 اپریل 2018|agency=[[Associated Press]]}}</ref> [[وی پی سنگھ]] - پہلے [[وزیر خزانہ]] اورراجیو گاندھی کابینہ کے [[وزیر دفاع]] نے ایک بد عنوانی کا پردہ فاش کیا جسے بعد میں [[بوفورس اسکینڈل]] کے نام سے جانا گیا۔ بعد میں سنگھ کو کانگریس سے نکال باہر کیا گیا اور انہوں نے [[جنتا دل]] کی بنیاد رکھی اور متعدد کانگریس مخالف جماعتوں کی مدد سے [[نیشنل فرنٹ]] بنایا۔ <ref>{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1988/09/18/world/new-opposition-front-in-india-stages-lively-rally.html?scp=1&sq=%22v%20p%20singh%22%20%22jan%20morcha%22&st=cse|title=New Opposition Front in India Stages Lively Rally|last=Crossette|first=Barbara|date=18 ستمبر 1988|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|others=Special to ''The New York Times''|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref>
[[1989ء کے عام انتخابات]] میں [[بھارتیہ جنتا پارٹی]] اور [[بایاں فرنٹ]] کی خارجی حمایت سے [[نیشنل فرنٹ]] نے حکومت بنا لی۔ <ref name=":1">{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1989/12/02/world/indian-opposition-chooses-a-premier.html?scp=14&sq=%22v%20p%20singh%22&st=cse|title=Indian opposition chooses a premier|last=Crossette|first=Barbara|date=2 دسمبر 1989|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|others=Special to ''The New York Times''|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref> [[وی پی سنگھ]] ۔<ref name=":1" /> ایک سال سے کم کی مدت کے دوران میں ہی سنگھ نے [[منڈل کمیشن]] کی سفارشات کو قبول کرلیا۔ <ref>{{Cite news|url=http://indianexpress.com/article/opinion/columns/mandal-vs-mandir/|title=Mandal vs Mandir|last=Malhotra|first=Inder|date=23 مارچ 2015|work=[[The Indian Express]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[Indian Express Group]]|oclc=70274541}}</ref> وی پی سنگھ دور اس وقت ختم ہوگیا اور ان کو استعفی دینا پڑا جب انہوں نے بی جے پی کے رکن [[لال کرشن اڈوانی]] کی حراست کے حکم دے دیا۔ <ref>{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1990/10/30/world/india-ready-to-bar-hindu-move-today.html|title=India ready to bar Hindu move today|last=Crossette|first=Barbara|date=30 اکتوبر 1990|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|others=Special to ''The New York Times''|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref> نتیجتا بی جے پی اپنی حمایت واپس لے لی اور وی پی سنگھ [[تحریک عدم اعتماد]] میں 146-320 سے ناکام رہے اور ان کو استعفی دینا پڑا۔ <ref name=":9">{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1990/11/08/world/india-s-cabinet-falls-as-premier-loses-confidence-vote-by-142-346-and-quits.html?sec=travel&pagewanted=all|title=India's Cabinet Falls as Premier Loses Confidence Vote, by 142-346, and Quits|last=Crossette|first=Barbara|date=8 نومبر 1990|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref> وی پی سنگھ کے بعد ان کی کابینہ کے [[وزیر داخلہ بھارت]] [[چندر شیکھر]] نے [[سماجوادی جنتا پارٹی (راشٹریہ)|سماجوادی جنتا پارٹی]] کی مدد سے لوک سبھا میں اکثریت ثابت کر دی اور انہیں کانگریس کی بھی حمایت حاصل تھی۔ <ref>{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1990/11/06/world/dissidents-split-indian-prime-minister-s-party.html?scp=16&sq=%22v%20p%20singh%22&st=cse|title=Dissidents Split Indian Prime Minister's Party|last=Crossette|first=Barbara|date=6 نومبر 1990|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|others=Special to ''The New York Times''|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref><ref>{{Cite news|url=https://www.nytimes.com/1990/11/10/world/rival-of-singh-becomes-india-premier.html?scp=17&sq=%22v%20p%20singh%22&st=cse|title=Rival of Singh Becomes India Premier|last=Hazarika|first=Sanjoy|date=10 نومبر 1990|work=[[نیو یارک ٹائمز]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[A.G. Sulzberger]]|others=Special to ''The New York Times''|issn=0362-4331|oclc=1645522}}</ref> لیکن ان کا دور زیادہ دنوں تک نہیں چل سکا اور کانگریس نے حمایت واپس لے لی، شیکھر کی حکومت گرگئی اور نئے انتخابات کا اعلان کر دیا گیا۔ <ref>{{Cite news|url=http://www.thehindu.com/todays-paper/Chandra-Shekhar-critical/article14790254.ece|title=Chandra Shekhar critical|date=8 جولائی 2007|work=[[دی ہندو]]|access-date=5 اپریل 2018|publisher=[[The Hindu Group]]|agency=[[پریس ٹرسٹ آف انڈیا]]|publication-place=[[نئی دہلی]]|issn=0971-751X|oclc=13119119}}</ref>
[[1991ء کے عام انتخابات]] میں [[نرسمہا راؤ]] کی زیر قیادت کانگریس نے اقلیتی حکومت بنائی۔ راو [[جنوبی ہند]] کے پہلے وزیر اعظم بنے ۔ <ref name=":3">{{Cite news|url=http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/4120429.stm|title=Narasimha Rao – a reforming PM|date=23 دسمبر 2004|work=[[برطانوی نشریاتی ادارہ]]|access-date=5 اپریل 2018}}</ref> [[سوویت اتحاد کی تحلیل]] کے بعد بھارت [[دیوالیہ پن]] کے دہانے ہر کھڑی تھی، لہذا راو نے معاشیات میں ڈھیل دینے کا عہد کیا اور [[منموہن سنگھ]] -ایک ماہر اقتصادیات اور سابق گورنر برائے بھارت ریزرو بینک- کو وزیر مالیات بنا دیا۔ <ref name=":3" /> تب منموہن سنگھ نے اکانومی کو لبرلائز کرنے کی خاطر کئی اقدامات کیے <ref name=":3" /> اور اس طرح بھارت نے اچانک اور غیر یقینی طور پر اقتصادی ترقی کی۔ <ref>{{Cite journal|last=DeLong|first=J. Bradford|author-link=J. Bradford DeLong|date=جولائی 2001|title=India Since Independence: An Analytic Growth Narrative|url=https://www.researchgate.net/publication/246458096_India_Since_Independence_An_Analytic_Growth_Narrative|journal=In Search of Prosperity: Analytic Narratives on Economic Growth|volume=|pages=|access-date=5 اپریل 2018|via=Research Gate}}</ref> ان کی وزارت عظمی [[بابری مسجد کا انہدام]] کے لیے ہمیشہ یاد رکھی جائے گی جس کی وجہ سے تقریباً 2000 افراد جاں بحق ہوئے۔ <ref>{{Cite news|url=https://www.bbc.co.uk/news/world-south-asia-11436552|title=Timeline: Ayodhya holy site crisis|date=6 دسمبر 2012|work=[[برطانوی نشریاتی ادارہ]]|access-date=5 اپریل 2018}}</ref> راؤ نے اپنا پانچ سالا دور مکمل کیا حالانکہ اس سے قبل صرف نہرو گاندھی خاندان ہی پانچ سالہ میعاد مکمل کرپایا تھا۔ <ref name=":3" />
 
115,533

ترامیم