"چینی کمیونسٹ پارٹی کا جنرل سیکریٹری" کے نسخوں کے درمیان فرق

اضافہ مواد
(اضافہ مواد)
(اضافہ مواد)
[[آئین چین]] کے مطابق جنرل سکریتری بہ اعتبار عہدہ [[پولٹ بیورو اسٹینڈنگ کمیٹی]] کا رکن ہوتا ہے، چین میں فیصلہ لینے کا اختیار اسی کمیٹی کو ہے۔و5و 1989ء سے لے کر اب تک [[مرکزی ملٹری کمیشن کا صدر نشین]] ہی چینی کمیونسٹ پارٹی کا جنرل سکریٹری رہا ہے۔ البتہ چند موقعوں پر یہ روات ٹوٹی بھی ہے۔ جنرل سکریٹری فوج اور [[پیپلز لبریشن آرمی]] کا سربراہ اعلیٰ ہوتا ہے۔
2019ء میں موجودہ جنرل سکریٹری [[شی جن پنگ]] ہیں۔ انہوں نے 15 نومبر 2015ء کو یہ عہدہ سنبھالا اور 25 اکتوبر 2017 کو دوبارہ منتخب کئے گئے۔ بحیثیت جنرل سکریٹری ان کو کسی طرح کی کوئی پابندی نہیں ہے اور وہ تمام حدود سے بالا تر ہیں۔
== اختیارات اور پوزیشن ==
سال 1982ء میں [[12ویں مرکزی کمیٹی]] نے [[چینی کمیونسٹ پارٹی کا صدر نشین]] کا عہدہ ختم کر دیا جس کے بعد جنرل سکریٹری مرکزی سکریٹریٹ، پولٹ بیورو اور اسٹینڈنگ کمیٹی کا بالاترین عہدیدار بن گیا۔
1982ء میں اس عہدہ کے ظہور میں آنے کے بعد سے عوامی جمہوریہ چین میں سب سے بڑا عہدہ ہے۔ حالانکہ 1990ء میں [[دنگ شاوپنگ]] کی موت تک یہ سب سے اہم عہدہ نہیں تھا۔چونکہ چین [[یک جماعت ریاست]] ہے لہذا حکومت اور ریاست پر جنرل سکریٹری کو مکمل اختیار ہے۔حالانکہ جن لوگوں نے اس عہدہ کو بنایا ہے انہوں نے اسے [[ماؤ زے تنگ]] کے مقابلے میں بہت کم اختیارات دیے ہیں۔ 1990ء کے وسط سے جنرل سکریٹری [[صدر عوامی جمہوریہ چین]] کے عہدہ پر بھی فائز رہا ہے۔یہ بات قابل غور ہیکہ صدر چین کا عہدہ محض برائے نام ہے، جنرل سکریٹری کو صدر بنا کر اس عہدہ کی اہمیت کو برقرار رکھا گیا ہے تاکہ صدر کا وقار قائم رہے۔ایسا اسلئے کیونکہ صدر بہر حال ریاست کا سربراہ ہوتا ہے۔
 
== حوالہ جات ==