"تعدد شوہری" کے نسخوں کے درمیان فرق

2,667 بائٹ کا اضافہ ،  9 مہینے پہلے
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
== پابندی ==
برطانوی حکومت عہد حکومت میں مدراس ہائیکورٹ نے فیصلہ دیا کہ مروجہ دستور کے مطابق مرد اور عورت کا تعلق درست نہیں بلکہ یہ زناکاری ہے۔ اس وجہ سے اس دستور کے مطابق عورت آزاد ہے اور جب چاہے اپنا شوہر تبدیل کرے اور خاندان میں رہ کر مرضی کے مطابق نیا شوہر کا انتخاب کرے۔ 1896ء میں ایکٹ 4 نافذ کیا گیا جس کی وجہ سے حق وراثت قائم کرنے لیے ہر شخص باقیدہ بیاہ کرنے پر مجبور ہوا۔ ریاست ٹرانکور میں مردوں نے اولاد کی پرورش کا بار اٹھانا موقوف کر دیا تھا۔ جس کی وجہ سے ایک نیا قانون ریاست کو نافذ کرنا پڑا۔ جس کی رو سے ہرشخص کو اپنی اولاد کی پرورش ترگ کرنے اور ایسی عورت کے ساتھ جس کا سنبدہم کے طریقہ سے بیاہ ہوا ہو مباشرت کرنا جرم ٹہرایا۔
[[فائل:Draupadi and Pandavas.jpg|تصغیر|[[دروپدی]] پانچ پانڈو بھائیوں کی بیوی]]
 
== تعدد ازواج اور کثیر زوجگی میں فرق ==
[[تعدد ازواج]] صرف مردوں کے لیے مخصوص ہے، جس میں صرف مرد ایک سے زیادہ بیویاں رکھتے ہیں۔ جبکہ کثیر زوجگی، مردوں، عورتوں اور حیوانات کے لیے ہے۔<br/>
تعدد ازواج صرف مسلمانوں کے ہاں چار بیویوں تک محدود ہے اگر پانچ بیویاں ہونگی تو کثیر زوجگی شمار ہو گی اور ایک سے زیادہ شوہر رکھنے والی عورت کے لیے کبھی تعددازواج استعمال نہیں ہوا ویسے معنی کے اعتبار سے تین بیویاں بھی کثیر شمار ہوتی ہیں۔<br/>
اسلام نے توتعدد ازواج پر پابندی لگا کر اس کو چار تک محدود کر دیا۔ ایک صحابی تھے [[غیلان بن سلمہ]] ثقفی۔ قبول اسلام کے وقت ان کی دس بیویاں تھیں۔ آپ نے کہا کہ بھئی چار سے تو زیادہ رکھنے کی گنجائش نہیں۔ انہیں چھ بیویوں کو طلاق دینا پڑی۔ اسلام نے تو زائد تعداد کو محدود کیا اور اس محدود تعدادکو ہی تعدد ازواج کہا گیا کثیر زوجگی نہیں<ref>سنن ترمذی ابواب النکاح</ref><br/>
تعدد محدود کے لیے جبکہ کثیر لا محدود کے لیے استعمال ہوتا ہے جس کی وضاحت اس عبارت سے ہوتی ہے۔<br/>
"اس بات پر فقہا امت کا اجماع ہے کہ اس آیت ٍ(سورہ نساء آیت 3)کی رو سے تعدد ازواج کو محدود کیا گیا ہے اور بیک وقت چار سے زیادہ بیویاں رکھنے کو ممنوع کر دیا گیا ہے۔ روایات سے بھی اس کی تصدیق ہوتی ہے۔ چنانچہ احادیث میں آیا ہے کہ طائف کا رئیس غیلا جب اسلام لایا تو اس کی نو بیویاں تھیں۔ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے اسے حکم دیا کہ چار بیویاں رکھ لے اور باقی کو چھوڑ دے۔ اسی طرح ایک دوسرے شخص (نَوفَل بن معاویہ) کی پانچ بیویاں تھیں۔ آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا کہ ان میں سے ایک کو چھوڑ دے"۔<ref>تفسیر تفہیم القرآن سید ابوالاعلی مودودی سورہ نساء آیت 3</ref>
 
== ماخذ ==