"دہشت گردی" کے نسخوں کے درمیان فرق

5,174 بائٹ کا اضافہ ،  1 سال پہلے
م (خودکار: درستی املا ← کر دیا، ہو گئے؛ تزئینی تبدیلیاں)
 
* 19 اگست 2008 کو ڈیرہ اسماعیل خان میں ڈسٹرکٹ ہیڈ کوارٹر ہسپتال کے ایمرجنسی وارڈ کے قریب خودکش حملہ آور نے خود کو دھماکے سے اڑالیا جس سے 32 افراد ہلاک ہو گئے جن میں سات پولیس اہلکار اور ان میں سے دو صحت کے اہلکار شامل تھے۔ جبکہ 55 افراد زخمی ہوئے۔<ref>https://www.dawn.com/news/317414/suicide-bomber-hits-d-i-khan-hospital-32-killed-55-injured-tehrik-i-taliban-claims-responsibility-for-the-carnage</ref>
 
* 21 اگست 2008 کو پاکستان آرڈیننس فیکٹری واہ چھاونی کے میں گیٹ کے سامنے دو خودکش حملہ آوروں نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا جس کے نتیجہ میں کم از کم 70 افراد ہلاک اور 67 افراد زخمی ہو گئے۔ تحریک طالبان نے اس حملہ کی ذمہ داری قبول کر لی۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/2008_Wah_bombing</ref>
 
* 21 اگست 2008 کو ضلع سوات میں ننگوالئی کے ایک بااثر شخص موسیٰ خان کو نماز کے بعد مسجد سے باہر جاتے ہی نامعلوم حملہ آوروں نے گولی مار کر ہلاک کردیا۔ اس کے محافظوں نے فائرنگ کردی لیکن حملہ آور فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ اس واقعے میں راہگیر اسلام گل نامی شخص بھی زخمی ہوا۔ حاجی موسیٰ خان گذشتہ دنوں بم اور بندوق کے حملے سے بچ گئے تھے۔ طالبان کے ترجمان مسلم خان نے اس ہلاکت کی ذمہ داری قبول کرتے ہوئے قبائلی بزرگ پر سیکیورٹی فورسز کا سرگرم حامی ہونے کا الزام عائد کیا تھا۔<ref>https://www.dawn.com/news/317710/ex-nazim-among-five-shot-dead-in-swat</ref>
 
* 23 اگست 2008 کو خیبر پختونخوا کی وادی سوات کی تحصیل چارباغ میں ایک خودکش بمبار نے بارود سے بھری گاڑی کو پولیس اسٹیشن میں گھسادیا جس کے نتیجہ میں 20 افراد ہلاک ہوگئے۔ تحریک طالبان پاکستان نے حملے کی ذمہ داری قبول کرلی۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* 25 اگست 2008 کو خیبر پختونخوا میں وادی سوات میں ایک مقامی رکن صوبائی اسمبلی (ایم پی اے) کے گھر کو نشانہ بنانے والے راکٹ حملے میں 10 افراد ہلاک ہوگئے۔ حملے کے نتیجے میں ، اے این پی کے ایم پی اے وقار احمد کا بھائی اور کنبہ کے دیگر افراد ہلاک ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* 26 اگست 2008 کو منگل کے روز اسلام آباد کے نواح میں ماڈل ٹاؤن کے علاقے میں سڑک کے کنارے ایک ریسٹورنٹ میں بم دھماکے میں 8 افراد ہلاک اور 20 سے زیادہ زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* 28 اگست 2008 کو خیبر پختونخوا کے بنوں کے علاقے میں پولیس وین کو نشانہ بنانے والے بم حملے میں 9 افراد ہلاک اور 15 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* 6 ستمبر 2008 کو پشاور سے 20 کلومیٹر دور واقع ایک نیم فوجی چوکی پر خودکش کار بم دھماکے میں کم از کم 30 افراد ہلاک اور 70 زخمی ہوگئے۔ یہ حملہ آصف علی زرداری کو صدر پاکستان اور یوم دفاع کے موقع پر منتخب کرنے کے لئے ووٹنگ کے دوران ہوا۔<ref>http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/7601671.stm</ref>
 
* 10 ستمبر 2008 کو خیبر پختونخوا کے شمالی حصے ، ضلع لوئر دیر کے مسکانئی کے علاقے میں ایک مسجد میں دستی بم اور بندوق کے حملے میں 25 نمازی ہلاک اور 50 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2008</ref>
 
* 19 ستمبر 2008 کو کوئٹہ میں اسلامی مذہبی اسکول میں ایک بم پھٹنے سے پانچ افراد ہلاک اور کم از کم آٹھ زخمی ہوگئے۔ اس اسکول کا انعقاد مولانا فضل الرحمن کی سربراہی میں مذہبی جماعت جمعیت علمائے اسلام نے کیا تھا۔<ref>http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/7626454.stm</ref>
 
* 20 ستمبر 2008 کو اسلام آباد کے میریٹ ہوٹل کے باہر ایک زبردست ٹرک بم دھماکا ہوا ، جس میں 57 افراد ہلاک اور 266 زخمی ہوگئے۔ یہ خودکش حملہ کسی ایک فرد کے ذریعہ کیا گیا تھا جس میں 20 فٹ (6.1 میٹر) گہرائی اور 50 فٹ (15 میٹر) چوڑا گڑھا بن گیا تھا ، یہ حملہ افطار کے وقت ہوا جب مقامی اور غیر ملکی باشندے رمضان کی دعوت کے لئے اکٹھے ہوئے تھے ، یہ حملہ اس لئے اہم تھا کیونکہ صدر کے پہلے پارلیمانی خطاب کے بعد قریبی وزرائے اعظم سیکرٹریٹ میں تمام اعلی سیاسی ، سفارتی اور فوجی بھی کھانا کھا رہے تھے<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Islamabad_Marriott_Hotel_bombing</ref>
 
 
720

ترامیم