"دہشت گردی" کے نسخوں کے درمیان فرق

4,696 بائٹ کا اضافہ ،  1 سال پہلے
م (خودکار: درستی املا ← کر دیا، ہو گئے، کر لیا؛ تزئینی تبدیلیاں)
 
* 26 اپریل 2009 کو شمال مغربی پاکستان میں ایک کھلونا بم سے کھیلنے کی غلطی سے ہونے والے بم دھماکا میں 12 بچے ہلاک ہو گئے۔ بچوں کی موت بم کے پھٹنے کے بعد ہوئی ، جو فٹ بال کی طرح ہی تھا ، ہفتہ کے روز لوئر دیر ضلع میں پھٹا۔<ref>http://news.bbc.co.uk/2/hi/south_asia/8019031.stm</ref>
 
* 29 اپریل 2009 کو کراچی میں ٹارگٹ کلنگ نے شہر کے مختلف علاقوں میں نامعلوم مسلح افراد نے 34 افراد کی جانیں لے لیں اور 40 کو زخمی کردیا۔ 28 اپریل تک ایک ماہ تک جاری رہنے والے تشدد کے واقعات میں ، پولیس ریکارڈ سے پتہ چلتا ہے کہ ہلاکتوں کے مختلف واقعات میں 16 افراد کو گولی مار کر ہلاک کیا گیا تھا اور 54 زخمی ہوئے تھے۔ اعدادوشمار نے مزید بتایا کہ مجموعی طور پر لوگوں میں سے 43 افراد کا تعلق پختون برادری سے تھا جب کہ سات افراد اردو بولنے والے تھے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 5 مئی 2009 کو منگل کی صبح پشاور چھاؤنی سے 12 کلومیٹر مغرب میں واقع پشاور بارہ روڈ پر ایک چوکی کے قریب بارود سے بھری کار ایک پک اپ سے ٹکرا گئی ، جس کے نتیجے میں 7 افراد ، دو بچے اور ان میں فرنٹیئر کور کا ایک فوجی ہلاک اور 48 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 11 مئی 2009 کو پیر کے روز دارا آدم خیل کے نواح میں ایک ایف سی چوکی کے قریب ایک خودکش بمبار نے اپنی بارود سے بھری گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا ، جس میں آٹھ شہری اور دو سکیورٹی اہلکار ہلاک اور 27 دیگر افراد زخمی ہوئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 14 مئی 2009 کو شہر میں تین دستی بم پھٹنے سے 9 پولیس اہلکار زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/May_2009_Dera_Ismail_Khan_bombings</ref>
 
* 16 مئی 2009 کو ہفتہ کے روز دو مسلسل بم دھماکوں سے پشاور لرز اٹھا ، جس میں 13 افراد ہلاک اور 34 دیگر زخمی ہوگئے۔ بارسکو کے علاقے میں ایک طاقتور کار بم دھماکے میں 12 افراد ہلاک اور 31 دیگر زخمی ہوگئے ، جن میں اسکول کے بچے اور خواتین بھی شامل ہیں ، جبکہ پشاور صدر کے گورا بازار میں ایک کم شدت والے آلے سے ایک نابالغ بچی جاں بحق اور تین زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 21 مئی 2009 کو جمعرات کی شام ٹانک کے جنڈولا علاقے میں فرنٹیئر کور (ایف سی) کے قلعے کے قریب خودکش حملے میں کم سے کم 9 افراد ہلاک اور 25 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 22 مئی 2009 کو پشاور کے سنیما روڈ کے علاقے میں جمعہ کی شام ایک سنیما کے باہر طاقتور کار بم پھٹنے سے 10 افراد ہلاک اور 75 زخمی ہوگئے۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/Terrorist_incidents_in_Pakistan_in_2009</ref>
 
* 27 مئی 2009 کو خودکش حملہ آوروں نے دارالحکومت سٹی پولیس آفیسر (سی سی پی او) اور انٹر سروسز انٹیلیجنس (آئی ایس آئی) کے دفتروں کے قریب بدھ کے روز 100 کلوگرام بارود سے بھری ہوئی ایک گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا جس میں کم از کم 27 افراد ہلاک اور 326 زخمی ہوئے ، ریسکیو 15 پولیس سروس کی دو منزلہ عمارت کو تباہ کرنے کے علاوہ۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے آغاز کے بعد آئی ایس آئی پر یہ دوسرا حملہ تھا۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/2009_Lahore_bombing</ref>
 
* 28 مئی 2009 کو جمعرات کے روز دھماکوں کے یکے بعد دیگرے خیبر پختون خواہ میں ہلاکتیں ہوگئیں ، پانچ پولیس اہلکاروں سمیت 13 افراد ہلاک اور 90 سے زائد زخمی ہوگئے۔ پشاور میں تین دھماکے ہوئے ، ان میں سے ایک خودکش حملہ آور نے پولیس چوکی کو نشانہ بنایا ، اور ایک خودکش حملہ آور نے ڈیرہ اسماعیل خان میں سیکیورٹی چوکی پر حملہ کیا۔<ref>https://en.wikipedia.org/wiki/May_2009_Dera_Ismail_Khan_bombings</ref>
 
 
 
 
 
 
720

ترامیم