"ایران میں سنیت سے شیعت کی صفوی تبدیلی" کے نسخوں کے درمیان فرق

Safavid conversion of Iran to Shia Islam» کے ترجمے پر مشتمل نیا مضمون تحریر کیا)
 
* 1501ء میں ، اسماعیل نے ایران سے باہر بسنے والے تمام شیعوں کو ایران آنے کی دعوت دی اور انہیں سنی اکثریت سے تحفظ کی یقین دہانی کروائی گئی۔ <ref>Iraq: Old Land, New Nation in Conflict. William Spencer, p. 51.</ref>
 
== سنی اور شیعہ علمائے کرام (علمائے کرام) کیکا قسمتانجام ==
 
=== سنی علماء ===
[[اسماعیل ثانی]] کا دور حکومت (77-1576ء) کو ایک سنی نواز شیعہ دور گردانا گیا ہے۔ <ref>The Encyclopedia of world history: ancient, medieval, and modern. Peter N. Stearns, William Leonard Langer, p. 360.</ref> [[ مخدوم شریفی شیرازی |مخدوم شریفی شیرازی]] کی مدد سے ، نئے 'صدر' ، اسماعیل دوم نے عوام میں سنی مخالف چلن کو تبدیل کرنے کی کوشش کی۔ خاص طور پر انہوں نے کے [[عائشہ بنت ابی بکر|عائشہ]] اور [[ابوبکر صدیق|ابو بکر]] ، [[عمر بن خطاب|عمر]] اور [[عثمان بن عفان|عثمان]] پر کھلے عام عوامی لعنت دہی اور رسم کوس روکنے کی کوشش کی ( [[تبرا]] پر پابندی بشمول طبقۂ تبرا ) ، جن کا سرکاری پیشہ عوامی طور [[اہل بیت]] کے دشمن سمجھے جانے والوں اور دیگر شخصیات پر لعنت کرنا )<ref>{{حوالہ کتاب|url=http://roosevelt.ucsd.edu/_files/mmw/mmw13/ShiiRitualsandPowerPages157to177.pdf|title=Safavid Persia: the history and politics of an Islamic society|date=1996|publisher=I.B. Tauris|isbn=9781860640230|editor-last=Melville|editor-first=Charles Peter|edition=illustrated|page=161}}</ref> جو صفوی ابتدائی دور میں انکے خلاف اٹھ کھڑے ہوئے تھے۔
 
اسماعیل دوم کا سنی مخالف پروپیگنڈہ کے بارے میں نقطہ نظر کچھ وجوہات کا نتیجہ ہوسکتا ہے۔ ایک بنیادی وجہ تو یہ تھی کہ وہ میثاق [[ امسایا کا امن |پیمان اماسیہ]]<nowiki/>عثمانی مطالبات میں کی تعمیل کا خواہشمند تھا، جس نے پہلے تین [[اہل سنت|سنی]] [[خلافت|خلفاء]] پر تبراء کے خاتمے کا مطالبہ کیا تھا، اس طرح صفوی حکومت کا عثمانیوں سے مفاہمت پیدا کرنا اور خود اسماعیل کا اپنی ذاتی حیثیت کو مستحکم کرنا تھا. دوسری وجہ ان کی علماء کو کمزور کرنا تھا جب اس نے [[سید|سیدوں]] اور شیعہ علماء سے بالجبر زمین کی تحویل کا مطالبہ کیا۔ شاہ اسماعیل کا استاجلو قبیلے اور [[قزلباش]] کے کئی امراء کیساتھ چپقلش چل رہی تھی جو شیعہ علماء کے حلیف تھے. اس طرح، سنی شعائر کی عوامی سب و شتم ایک میدان تھا جہاں شاہ اور قزلباش و شیعہ علماء کے درمیان اقتدار کی جنگ کھیلی گئی.
 
شاہ کو جبل عامل کے لبنانی [[ جبل امیل |امیلی]] علماء کی عوامی مقبولیت کمزور کرنے کی امید تھی جو ایرانیوں میں خلفاء پر تبراء کی رسم کا انتظام اور ان کی حوصلہ افزائی کرتے۔ اس کی سنی قربت کا مقصد فارسیوں میں مستحکم سنی ہمدردیوں تک پہنچنا بھی تھا۔ اسماعیل ثانی کی پالیسیاں فوری طور پر مسترد ہونے کے باوجود ، علمائے کرام اور فوجی سیاسی اشرفیہ کی اکثریت نے اسکے ساتھ تصادم سے گریز کیا ، حالانکہ [[ استرآبادی |آسترآبادیوں]] جیسے شیعہ علماء کی جگہ پر، شاہ نے سنی میلان رکھنے والے علماء جیسے مولانا مرزا جان شیرازی اور میر مخدوم لالہ کو مقرر کیا۔<ref>[https://books.google.com/books?id=elHww0W0ZO4C&pg=PA88&dq=sunni+iran&lr=&as_brr=3&cd=202#v=onepage&q=sunni%20iran&f=false Distant relations: Iran and Lebanon in the last 500 years]. H. E. Chehabi, Rula Jurdi Abisaab, Centre for Lebanese Studies (Great Britain), pp. 86–7.</ref> <ref>[https://books.google.com/books?id=afsYCq1XOewC&pg=PA118&dq=sunni+iran&lr=&as_brr=3&cd=118#v=onepage&q=sunni%20iran&f=false Safavid Iran: rebirth of a Persian empire]. Andrew J Newman, p. 118.</ref> اسماعیل ثانی صفوی سکے پر [[بارہ امام|بارہ اماموں]] کے لکھے ہوئے ناموں کو ختم کردینا چاھتے تھے، لیکن ان کی اس کوشش کا کوئی فائدہ نہیں ہوا۔ <ref>Distant relations: Iran and Lebanon in the last 500 years. H. E. Chehabi, Rula Jurdi Abisaab, Centre for Lebanese Studies (Great Britain), p. 88.</ref>
* ایران ایک شیعہ ملک تھا اور آہستہ آہستہ ایک الگ تھلگ جزیرہ بن گیا جس کے چاروں طرف سنیت کا ایک سمندر تھا۔ جبرا تبدیلئ مذہب کے مظالم پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے، جدید ایرانی مورخین عام طور پر اس بات پر متفق ہیں کہ شیعہ مذہبی تسلط کے قیام نے بالآخر ایران کو سلطنت عثمانیہ میں شامل ہونے سے بچایا۔ <ref>Iran and America: re-kindling a love lost, By Badi Badiozamani, pg.174–175</ref>
* یورپ میں عثمانی پیش قدمی کو صفوی شیعیت نے (انکے فوجی وسائل کی تقسیم کی وجہ سے) روکا جب صفوی ایران اور یوروپی طاقتوں نے اپنے مشترکہ عثمانی دشمن کا مقابلہ کرنے کے لئے [[ ہیبس برگ – فارسی اتحاد |حبسبرگ – فارسی اتحاد]] قائم کیا ۔ <ref>''Defenders of the Faith: Charles V, Suleyman the Magnificent, and the Battle for Europe, 1520-1536'' by [[James Reston, Jr.]], p.359''ff''</ref>
* لفظ 'صفوی' جس کے معنی ہیں سفوید ، جیسے سنی استعمال کرتے ہیں ، کسی بھی توسیع پسند شیعہ گروہوں سے وابستہ ہوا جو سنیوں کیخلاف یا شیعہ مفادات کے خلاف کام کرتے ہیں۔ <ref>{{حوالہ کتاب|title=The Al-Qaeda Doctrine: The Framing and Evolution of the Leadership's Public Discourse|last=Donald Holbrook|date=2014|publisher=Bloomsbury Publishing USA|isbn=9781623566678|page=120}}</ref> یہ لیبل خاص طور پر ایران یا ایرانی حمایت یافتہ گروہوں کے خلاف استعمال کیا جاتا ہے اور انھیں خاص طور پر اکیسویں صدی کے اوائل میں مشرق وسطی میں فرقہ وارانہ بحران کے دوران کرنسی ملی ہے ، مثلا [[شامی خانہ جنگی|شام]] ، لبنان ، عراق اور یمن میں۔   <sup class="noprint Inline-Template Template-Fact" data-ve-ignore="true" style="white-space:nowrap;">&#x5B; ''[[ویکیپیڈیا:حوالہ درکار|<span title="This claim needs references to reliable sources. (January 2017)">حوالہ کی ضرورت</span>]]'' &#x5D;</sup><sup class="noprint Inline-Template Template-Fact" data-ve-ignore="true" style="white-space:nowrap;">&#x5B; ''[[ویکیپیڈیا:حوالہ درکار|<span title="This claim needs references to reliable sources. (January 2017)">حوالہ کی ضرورت</span>]]'' &#x5D;</sup>
 
== مزید دیکھیں ==