"ارطغرل" کے نسخوں کے درمیان فرق

2 بائٹ کا اضافہ ،  7 مہینے پہلے
م
کوئی ترمیمی خلاصہ نہیں
(ٹیگ: ترمیم ماخذ 2017ء)
م
{{Contains Ottoman Turkish text}}
'''ارطغرل غازی''' (وفات: [[1280ء]]<ref>{{cite book|url=https://archive.org/details/historyofottoman00stan|url-access=registration|title=History of the Ottoman Empire and Modern Turkey: Volume 1, Empire of the Gazis: The Rise and Decline of the Ottoman Empire 1280–1808|first1=Stanford J.|last1=Shaw|first2=Ezel Kural|last2=Shaw|date=29 اکتوبر 1976|publisher=Cambridge University Press|page=[https://archive.org/details/historyofottoman00stan/page/13 13]|accessdate=14 جون 2018|via=Internet Archive}}</ref>)) [[سلطنت عثمانیہ]] کے بانی غازی [[عثمان اول]] کے والد تھے۔ عثمانی روایات کے مطابق، وہ [[سلیمان شاہ]] کے بیٹے تھے،<ref>{{cite book |last1=Finkel |first1=Caroline |title=Osman's Dream: The Story of the Ottoman Empire 1300–1923 |date=2012 |publisher=Hodder & Stoughton |isbn=978-1-84854-785-8 |url=https://books.google.se/books?id=hslOx5bvOzkC&pg=PT31&dq=Ertu%C4%9Frul+Osman&hl=sv&sa=X&ved=0ahUKEwjXl4_Xk7DjAhXpsosKHV7dD20Q6AEIZTAJ#v=onepage&q=Ertu%C4%9Frul%20Osman&f=false |accessdate=12 جولائی 2019 |language=en |quote=۔۔۔۔suggests that Ertuğrul was a historical personage}}</ref> جو ترک [[اوغوز]] کی شاخ قائی قبیلے کے سردار تھے۔ انہیں عام طور پر '''[[غازی]]''' کے لقب سے جانا جاتا ہے۔<ref>{{cite book |last1=Akgunduz |first1=Ahmed |last2=Ozturk |first2=Said |title=Ottoman History – Misperceptions and Truths |date=2011 |publisher=IUR Press |isbn=978-90-90-26108-9 |pages=35 |url=https://books.google.se/books?hl=sv&id=WKfIAgAAQBAJ&q=Ertu%C4%9Frul#v=snippet&q=Ertu%C4%9Frul&f=false |accessdate=28 دسمبر 2019 |language=en}}</ref><ref name="auto">{{Cite book |last=Kermeli |first=Eugenia |editor-last=Ágoston |editor-first=Gábor |editor2=Bruce Masters |title=Encyclopedia of the Ottoman Empire |chapter=Osman I |date=2009 |page=444 |quote=Reliable information regarding Osman is scarce. His birth date is unknown and his symbolic significance as the father of the dynasty has encouraged the development of mythic tales regarding the ruler’s life and origins}}</ref>
عثمان اول کے زمانے میں ملنے والے سکوں سے ارطغرل کی تاریخی حیثیت ثابت ہوتی ہے، بارہویں صدی عیسوی میں جب منگول فتنہ سر اٹھا رہا تھا تو اطغرل غازی نے علم جہاد بلند کیا۔۔ ایک طرف [[منگول]] تھے تو دوسری طرف بازنطینی، دونوں طرف سے آپ جنگ میں مصروف رہے۔ ارطغرل غازی ایک بہادر، نڈر، بلاخوف، عقلمند، دلیر، ایماندار اور بارعب کمانڈر تھے۔ وہ ساری عمر سلجوق سلطنت کے وفادار رہے- سلطان علاالدین کیکوباد نے ان کی خدمات سے متاثر ہو کر ان کو سوگوت اور گرد و نواح کے شہر بطور جاگیر عطاکی اور اطغرلارطغرل غازی کو سردار اعلیٰ' کا عہدہ بھی دیا۔ آس پاس کے تمام ترک قبائل ان کے ماتحت آ گئے۔
 
ارطغرل غازی اپنی عمر میں چونکہ سلجوق سلطنت کے وفادار تھے۔ ان کی آخری عمر میں سلجوق سلطنت اپنی آخری سانسیں لے رہی تھی منگولوں نے پورے اناطولیہ (موجودہ ترکی) پر قبضہ کر لیا تھا۔ تو ارطغرل غازی کے سب سے چھوٹے بیٹے غازی عثمان خان اول نے ان کا یہ خواب پورا کیا اور ایک عظیم اور طویل سلطنت کی بنیاد رکھی۔
18,967

ترامیم