"ایران میں سنیت سے شیعت کی صفوی تبدیلی" کے نسخوں کے درمیان فرق

(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
 
* پوری ایرانی قوم پر شیعیت کو بطور ریاستی لازمی مذہب مسلط کرنا اور ایرانی صوفی سنیوں سے زبردستی مذہب تبدیل کروانا۔ <ref>Modern Iran: roots and results of revolution]. Nikki R Keddie, Yann Richard, pp. 13, 20</ref> <ref>[https://books.google.com/books?id=MziRd4ddZz4C&pg=PA360&dq=safavid+persia+conversion&lr=&as_brr=3#v=onepage&q=&f=false The Encyclopedia of world history: ancient, medieval, and modern]. Peter N. Stearns, William Leonard Langer, p. 360.</ref> <ref>Immortal: A Military History of Iran and Its Armed Forces. Steven R Ward, pg.43</ref>
* اس نے سدر کوکا نظام دوبارہ پیشقائم کیا - مذہبی اداروں اور اوقاف کی مالیاتی نگرانی کے لئےکا ذمہ دار ایک دفتر قائم کیا تاکہجسے ایران کو اثناعشری شیعہ ریاست میں تبدیلبدلنے اور اسکے کو اثناعشری نظریے کو پھیلانے کا بھی کام سونپا گیا تھا۔ <ref>[https://books.google.com/books?id=J7YJoty2kuIC&pg=PA77&dq=safavid+persia+conversion&lr=&as_brr=3#v=onepage&q=&f=false Iran: a short history: from Islamization to the present]. Monika Gronke, p. 91.</ref>
* اس نے سنی مساجد کو تباہ کیا۔ حتی کہ چین میں پرتگالی سفیر ، ٹومے پیرس نے 12-1511ء میں ایران کا دورے کے سرگزشتوں میں اسماعیل کا ذکر کرتے ہوئے لکھتا ہے کہ: "وہ (یعنی اسماعیل) ہمارے گرجوں میں بہتری کی کوشش کرتا ہے، اور محمد (کی [[سنت]] ) پر عمل کرنے والے تمام [[مسلمانان اندلس]] کے مکانات کو تباہ کردیتاکرتا ہے۔ " <ref>[https://books.google.com/books?id=Yjf0bM5sFaEC&pg=PA20&dq=safavid+persia+conversion&lr=&as_brr=3&cd=47#v=onepage&q=&f=false The Judeo-Persian poet ‘Emrānī and his "Book of treasure": ‘Emrānī's Ganǰ…] 'Emrānī, David Yeroushalmi, p. 20.</ref>
* اس نے پہلے تین سنی خلفاء ([[ابوبکر صدیق|ابو بکر]] ، [[عمر بن خطاب|عمر]] اور [[عثمان بن عفان|عثمان]]) پر بطور غاصبین لعنت بھیجنے کی رسم (تبرا) کو تمام مساجد میں نافذ کیا، سنی [[طریقت]] کو تحلیل کیا اور ریاستی سرپرستی میں شیعہ مزارات، اداروں اور مذہبی آرٹ کی ترقی کے لئے اورشیعہ علماء کو سنی علماء کی جگہ لانے کے لئے سنیوں کے اثاثے استعمال کرتا ۔ <ref>A new introduction to Islam. Daniel W Brown, p. 191.</ref> <ref>[https://books.google.com/books?id=EDdGPxC1stIC&pg=RA1-PA459&dq=safavid+persia+conversion&lr=&as_brr=3&cd=93#v=onepage&q=safavid%20persia%20conversion&f=false Encyclopaedic Historiography of the Muslim World]. NK Singh, A Samiuddin, p. 90.</ref> <ref>[https://books.google.com/books?id=Fz5kgjMDnOIC&pg=PA72&dq=sunni+iran&lr=&as_brr=3&cd=201#v=onepage&q=sunni%20iran&f=false The Cambridge illustrated history of the Islamic world]. Francis Robinson, p. 72.</ref>
* اس نے سنیوں کا خون بہایا اور سنیوں کی قبروں اور مساجد کی بے حرمتی کی۔ اس کی وجہ سے عثمانی سلطان [[بایزید ثانی|بایزید دوم]] (جس نے ابتداء میں اسماعیل کو اس کی فتوحات پر مبارکباد دی تھی) اس نوجوان بادشاہ کو ("پدرانہ" انداز میں) سنی مخالف اقدامات روکنے کا مشورہ دیا۔ تاہم، سخت سنی مخالف اسماعیل نے سلطان کی تنبیہ کو نظرانداز کیا، اور تلوار سے شیعہ عقیدے کو پھیلاتے رہے۔ <ref>Immortal: A Military History of Iran and Its Armed Forces. Steven R. Ward, p. 44.</ref> <ref>Iran and America: re-kindling a love lost]. Badi Badiozamani, pp. 174–5.</ref>
* اس نے راسخ العقیدہ کٹر مزاحمتی سنیوں کو ستایا ، قید کیا ، جلاوطن کیا اور انہیں پھانسی دی۔ <ref>The Cambridge illustrated history of the Islamic world. Francis Robinson, p. 72.</ref> <ref>[https://books.google.com/books?id=pfrUjjLbv3wC&pg=RA1-PA51&dq=sunni+iran&lr=&as_brr=3&cd=95#v=onepage&q=sunni%20iran&f=false Iraq: Old Land, New Nation in Conflict]. William Spencer, p. 51.</ref>
* صفوی حکمرانی کے قیام کے ساتھ ہی، 26 [[ذوالحجہ|ذی الحجہ]] کو [[حضرت عمر of کے قتل کی حدیث |خلیفہ عمر کے قتل]] کا جشن منانے کے موقع پر ایک بہت ہی مضحکہ خیز اور رنگین، تقریبا میلہ جیسی تعطیل تھی۔ اس دن کی خاص بات یہ تھی کہ عمر کے پتلے پر لعنت کرنا، توہین کرنا اور بالآخر جلا دینا تھا۔ تاہم ، جیسے جیسے ایران اور سنی ممالک کے مابین تعلقات میں بہتری آتی گئی، تعطیل ختم ہوتی گئی (کم از کم سرکاری طور پر)۔ <ref>[https://books.google.com/books?id=8ZIjyEi1pd8C&pg=PA185 Culture and customs of Iran]. Elton L Daniel, 'Alī Akbar Mahdī, p. 185.</ref>
* 1501ء میں ، اسماعیل نے ایران سے باہر بسنے والے تمام شیعوں کو ایران آنے کی دعوت دی اور انہیں سنی اکثریت سے تحفظ کی یقین دہانی کروائی گئی۔ <ref>Iraq: Old Land, New Nation in Conflict. William Spencer, p. 51.</ref>
 
== سنی اور شیعہ علمائے کرام (علمائے کرام) کا انجام ==