"اسماعیل دیوبندی" کے نسخوں کے درمیان فرق

جانبداری کا کچھ مواد اور الفاظ حذف
(جانبداری کا کچھ مواد اور الفاظ حذف)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم ایڈوانسڈ موبائل ترمیم)
 
آپ نے ابتدائی دینی تعلیم اپنے والد سے حاصل کی اس کے بعد [[مبادیات]] پڑھنے کے لیے حکیم محمد حسن میثم پوری کے شہر میثم پور چلے گئے۔ پھر [[رائے پور]] میں حضرت مولانا مفتی فقیر اللہ (م [[1382ھ]]) سے استفادہ کیا اس کے بعد مدرسہ خیر المدارس [[جالندھر]] میں داخل ہو گئے جہاں حضرت خیر محمد جالندھری (م [[1390ھ]]) اور حضرت مولانا محمد علی جالندھری (م [[1391ھ]]) کے سامنے زانوائے ادب تہ کیا وہاں سے فارغ التحصیل ہو کر [[دیوبند]] کا رخ کیا جہاں [[سید محمد انور شاہ کشمیری|شیخ الحدیث حضرت مولانا سید انور شاہ کاشمیری]] اور شیخ الادب حضرت مولانا [[محمد اعزاز علی امروہوی|اعزاز علی]] سے اخذ فیض کیا۔ پھر آپ ڈابھیل چلے گئے جہاں شیخ القرآن حضرت مولانا [[شبیر احمد عثمانی]] سے [[قرآن پاک]] کی [[تفسیر]] پڑھی۔
 
یہاں سے فارغ ہونے کے بعد [[ٹوبہ ٹیک سنگھ]] میں دیوبندی حضرات کی مسجد "مسجد اکبری" میں خطیب ہو گئے۔ اسی دوران آپ کی کسی شیعہ سے ملاقات ہو گئی جس نے شیعیت کی دعوت دی آخر آپانھوں نے تحقیق و جستجو کرنا شروع کی اور کچھ عرصہ کے بعد شیعہ ہونے کا اعلان کر دیا۔ رد عمل کے طور پر آپان کے عزیز و اقارب حتی کہ والد صاحب نے بھی علیحدگی اختیار کر لی لیکن جب آدمی حق و حقیقت کو پا لیتا ہے تو پھر تختہ دار کی طرف بھی ہنستا ہوا چل پڑتا ہے۔لی، کسی کی مخالفت کی آپانھوں نے پروا نہ کی۔ اسی دوران آپ کے ٢2 بیٹے "محبوب عالم " اور "بدر عالم" انتقال کر گئے۔
 
شیعہ ہونے کے بعد آپ نے تقاریر کا سلسلہ شروع کر دیا جس میں کمال حاصل کیا۔ اسی دوران [[مسلم لیگ]] کے لیے کام کیا جب [[پاکستان]] بن گیا، تو آپ [[سیاست]] سے کنارہ کش ہو گئے۔<ref>"مراسم عزاداری قرآن و حدیث کی روشنی میں" صفحہ نمبر 26 (مؤلف: [[اسماعیل دیوبندی|مولانا محمد اسماعیل]]) </ref>
 
مبلغِ اعظم, مولانا محمد اسماعیل محمدی (دیوبندی) جناب مولانا [[فاضل حسین علوی]] کے استاد ہیں۔ اسماعیل دیوبندی پہلے [[دیوبندی مکتب فکر|دیوبند]] مسلک سے تعلق رکھتے تھے بعد میں انہوں نے [[اثنا عشری|شیعہ اثنا عشری]] مسلک قبول کیا۔ یہ شیعہ اسلامشیعیت کے بہت بڑے مناظر بن گئے تھے۔ ان کو [[مبلغ اعظم]] کا لقب ملا۔
 
مبلغ اعظم صرف مناظر ہی نہیں تھے بلکہ وہ ایک بلند پایہ خطیب و مبلغ بھی تھے جن کی تقریروں نے ہزارہا لوگوں کو مذہب شیعہ اختیار کرنے پر مجبور کر دیا۔<ref> مبلغ اعظم صفحہ نمبر 7 (مؤلف: مولانا الحاج ناصر حسین نجفی)</ref>
 
== مبلغ اعظم کی وصیت ==