"محمد بن سلیمان کردی" کے نسخوں کے درمیان فرق

«محمد بن سليمان الكردي» کے ترجمے پر مشتمل نیا مضمون تحریر کیا
(درستی)
محمد بن سليمان الكردي» کے ترجمے پر مشتمل نیا مضمون تحریر کیا)
}}
 
'''ابو عبد اللہ شمس الدین محمد آفندی بن سلیمان کردی مدنی''' معروف بہ ”ابنِ سلیمان“ (1714–211714 - 21 مارچ 1780) (1126 - 16 ربیع الاول 1194) بارہویں صدی ہجری / اٹھارہویں صدی عیسوی کے مسلمان، حجازی عالمِ دین۔ دمشق میں پیدا ہوئے اور مدینہ منورہ میں پرورش پائی۔ حجاز و غیر حجاز کے علما سے علم حاصل کیا۔ 1758ء میں اناطولیہ کے ارادے سے دمشق آئے اور پھر آپ کے لئے مدینہ منورہ میں مفتئ شافعیہ کے منصب سنبھالنے کا شاہی فرمان جاری ہوا۔ سرزمین حجاز میں فقیہِ شافعیہ کے نام سے معروف ہوئے اور سلفیوں وہابیوں کے بارے میں اپنی تنقیدی رائے کے سبب مشہور ہوئے۔ مدینہ منورہ میں وفات پائی اور جنت البقیع میں دفن ہوئے۔ کئی کتابیں لکھیں۔<ref>{{حوالہ ویب|url=http://elwahabiya.com/محمد-بن-سليمان-الكردي-المدني-الشافعي/|title=محمد بن سليمان الكردي المدني الشافعي<!-- عنوان مولد بالبوت -->|accessdate=2020-02-29}}</ref> <ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref> <ref>{{حوالہ کتاب|title=[[الأعلام للزركلي|الأعلام]]|publisher=دار العلم للملايين|year=2002|volume=المجلد السادس|location=بيروت، ‌بيروت،‌ لبنان}}</ref>
 
== سیرت ==
کرد خاندان مدینہ منورہ کی طرف ہجرت کرنے والا مشہور خاندان ہے۔ کردوں میں سے جو سب سے پہلے مدینہ منورہ ہجرت کر کے آئے وہ آپ کے والد سلیمان کردی ہیں جو 1115ھ/1703ء کو بلاد شام سے ہجرت کر کے یہاں آئے، اس پاک سرزمین کو اپنا وطن بنایا اور تدریس میں مشغول ہوئے، آپ رباط السبیل میں بچوں کے معلم تھے۔ اولاد میں سے ایک بیٹے ”محمد“ ہیں جو دمشق میں پیدا ہوئے، دوسرے ”احمد“ اور تیسرے ”ابراہیم“۔<ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref>
[[فائل:Arabic manuscript from King Saud UniversityArabic_manuscript_from_King_Saud_University, about biography of Muhammad ibn Sulayman al_about_biography_of_Muhammad_ibn_Sulayman_al-Kurdi.jpg|تصغیر| محمد بن سلیمان کردی کے حالاتِ زندگی کے بارے میں ایک عربی قلمی نسخے کے پہلے دو صفحات جو اندازاً اٹھارہویں صدی عیسوی / تیرہویں صدی ہجری کے اواخر میں لکھا گیا ہے، یہ نسخہ کنگ سعود یونیورسٹی میں محفوظ ہے۔ <ref>{{حوالہ ویب|url=http://makhtota.ksu.edu.sa/browse/makhtota/6040/1#۔Xlws4ZMzbcc.Xlws4ZMzbcc|title=مخطوطات > ترجمة الشيخ محمد بن سليمان الكردي المتوفي سنة 1194هـ > الصفحة رقم 1<!-- عنوان مولد بالبوت -->|accessdate=2020-03-01}}</ref>]]
شیخ محمد بن ابوبکر سلیمان کردی 1126ھ /1714ء کو سلطنت عثمانیہ کے صوبہ شام، دمشق میں پیدا ہوئے جبکہ آپ کے والد یہیں قیام پزیرپذیر تھے۔ آپ کے سالِ پیدائش میں اختلاف ہے، ایک قول کے مطابق 1125ھ/1713ء اور دوسرے قول کے مطابق 1127ھ/1715ء ہے۔ آپ کی پیدائش کے ایک سال بعد آپ کے والد نے خاندان سمیت مدینہ منورہ ہجرت کی۔<ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref>
 
=== تعلیم ===
آپ نے مدینہ منورہ میں پرورش پائی، حفظِ قرآن کے بعد علمائے کرام سے سیکھنا شروع کیا اور اکابر فقہائے شافعیہ سے تعلیم حاصل کی۔ یہاں آپ نے سعید سنبل، اپنے والد سلیمان، یوسف کردی، احمد جوہری اور مصطفٰیمصطفی بکری وغیرہ علما سے استفادہ کیا پھر حجاز سے باہر کا سفر اختیار کیا اور اپنے دور کے کثیر علما سے واقف ہوئے اور انہیں میں سے ایک آپ کا سفر دمشق ہے جو 1172ھ/1758ء کو اناطولیہ کے ارادہ سے کیا۔<ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref>آپ مصطفٰیمصطفیٰ بکری، شمس محمد دمیاطی، احمد جوہری، ابو طاہر کورانی، حامد بن عمر علوی، محمد سعید سنبل، عبد الرحمن بن عبد اللہ بلفقیہ وغیرہ علما و مشائخ سے روایت کرتے ہیں۔آپ نے علومِ عقلیہ و نقلیہ میں مہارت حاصل کی اور فقہ شافعی میں خاص طور پر نمایاں ہوئے۔ جب آستانہ میں موجود شیخ الاسلام کو آپ کی علومِ شرعیہ میں مہارت علم ہوا تو انہوں نے آپ کے لئے مدینہ منورہ میں مفتئ شافعیہ کے منصب پر فائز ہونے کا شاہی فرمان جاری کرایا۔
 
=== شاگرد ===
 
=== وہابی سلفی نظریہ کی مخالفت ===
آپ کے شاگردوں میں سے وہابی سلفی نظریہ کا بانی محمد بن عبد الوہاب بھی تھا۔ اس نے مدینہ منورہ میں آپ سے پڑھا۔ آپ نے اس سے اختلاف کیا ہے اور اس کے اسلوبِ دعوت پر تنقید کرتے ہوئے آپ نے اس کو خط لکھا جس میں کہا:<ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref> <ref>{{حوالہ کتاب|title=دعاوى المناوئين لدعوة الشيخ محمد بن عبد الوهاب عرض ونقد|publisher=دار طيبة|year=1989|location=الرياض، السعودية}}</ref>
 
اے ابن عبد الوہاب!
اللہ تعالیٰ کی رضا کے لئے میں تمہیں نصیحت کرتا ہوں کہ تم مسلمانوں (کی تکفیر) سے اپنی زبان کو لگام ڈالو۔ اگر تم کسی شخص سے سنو کہ وہ اللہ تعالیٰ کے مقابلے میں اس شخص کے مؤثر ہونے کا عقیدہ رکھتا ہے جس سے وہ استغانہ/فریاد کر رہا ہے تو تم اسے درست بات کی پہچان کراؤ اور اس کے سامنے اس بات کے دلائل رکھو کہ اللہ تعالیٰ کے سوا کوئی مؤثر نہیں پھر بھی اگر وہ نہ مانے تو اس صورت میں خاص اس شخص کی تکفیر کرو لیکن مسلمانوں کے سوادِ اعظم کی تکفیر کی کوئی گنجائش نہیں۔ تم سواد اعظم سے جدا ہو اور جو شخص سواد اعظم سے جدا ہو اس کی طرف کفر کی نسبت زیادہ قریب ہے کیونکہ اس نے مسلمانوں کے راستے سے جدا راستہ اختیار کیا ہے، اللہ تعالیٰ فرماتا ہے:
 
{{قرآن|4|115}}{{اقتباس 2|يا ابن عبد الوهاب سلام على من اتبع الهدى فاني أنصحك للہلله أن تكفّ لسانك عن المسلمين فإن سمعت من شخص أنہأنه يعتقد تأثير ذلك المستغاث بہبه من دون اللہالله تعالى فعّرفہفعّرفه الصواب، وأبن لہله الأدلة۔الأدلة. على أنّہأنّه لا تأثير لغير اللہ۔الله. فان أبي فكفّرہفكفّره حينئذٍ بخصوصہ،بخصوصه، ولا سبيل لك إلى تكفير السواد الأعظم من المسلمين وأنت شاذّ عن السواد الأعظم۔الأعظم. فنسبة الكفر إلى من شذّ عن السواد الأعظم أقرب لأنّهّ اتّبع غير سبيل المؤمنين قال اللہالله تعالى {{قرآن|4|115}} وإنما يأكل الذئب من الغنم القاضية۔القاضية.}}
اور بھیڑیا اسی بکری کو کھاتا ہے جو ریوڑ سے جدا ہوتی ہے۔
 
علمائے نجد میں سے ابن غنام اور ابن بشر وغیرہ بعض تذکرہ نویسوں نے اس بات کو بعید قرار دیا ہے کہ ابن عبد الوہاب شیخ محمد بن سلیمان کا شاگرد ہے اور ان تذکرہ نویسوں کے گمان کے مطابق ایسا صرف احمد زینی دحلان نے اپنی تاریخ میں لکھا ہے۔ حالانکہ سلفی وہابی ائمہ کے نظریات کے رد اور مخالفت میں شیخ محمد بن سلیمان کردی کے جوابات پر مشتمل قلمی نسخے ثابت شدہ موجود ہیں اسی طرح انہوں نے اس مسئلے میں سلیمان بن عبد الوہاب کے رسالے کی تائید و تعریف کرتے ہوئے اس پر تقریظ بھی لکھی ہے۔<ref name="أعلام من أرض النبوة">{{حوالہ کتاب|title=أعلام من أرض النبوة|publisher=الخزانة الكتبية الحسنية الخاصة|year=1993|location=المدينة، السعودية}}</ref>
== حوالہ جات ==
{{حوالہ جات}}
 
[[زمرہ:حفاظ قرآن]]
[[زمرہ:راویان حدیث]]
[[زمرہ:سلطنت عثمانیہ کی کرد شخصیات]]
[[زمرہ:عثمانی غیر افسانوی مصنفین]]
[[زمرہ:جنت البقیع میں مدفون شخصیات]]
[[زمرہ:شافعیہ]]
[[زمرہ:صفحات مع ویکی ڈیٹا حوالہ جات]]
[[زمرہ:ویکی ڈیٹا سے ماخوذ پیشہ ورانہ زبان]]
[[زمرہ:شاگرد ویکی ڈیٹا سے ماخوذ]]
[[زمرہ:مدفن ویکی ڈیٹا سے ماخوذ]]
[[زمرہ:صفحات مع استعمال P20 خاصیت]]
[[زمرہ:مدینہ منورہ میں وفات پانے والی شخصیات]]
[[زمرہ:1780ء کی وفیات]]
[[زمرہ:صفحات مع استعمال P19 خاصیت]]
[[زمرہ:دمشق میں پیدا ہونے والی شخصیات]]
[[زمرہ:1714ء کی پیدائشیں]]
[[زمرہ:سابقہ شرف دہندہ ویکی ڈیٹا سے ماخوذ]]