"فعل" کے نسخوں کے درمیان فرق

96 بائٹ کا اضافہ ،  7 مہینے پہلے
م
کوئی خلاصۂ ترمیم نہیں
(←‏فعل کی اقسام: درستی املا)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل ترمیم از موبائل ایپ اینڈرائیڈ ایپ ترمیم)
مکوئی خلاصۂ ترمیم نہیں
ایسا کلمہ (لفظ) جو کسی کام کا کرنا، ہونا یا سہنا زمانے کے لحاظ سے ظاہر کرے فعل کہلاتا ہے۔
; مثالیں
عدیل پڑھتا ہے، عابدہ نے [[خط (مکتوب)|خط]] لکھا، عرفان [[مسجد]] گیا، ہم [[لاہور]] جائیں گے وغیرہ
 
اِن جملوں میں پڑھتا ہے، لکھا، گیا، جائیں گے کے الفاظ فعل ہیں
وہ [[فعل]] جس میں کسی کام کا کرنا، ہونا یا سہنا آنے والے زمانے میں پایا جائے اُسے فعل مستقبل کہتے ہیں۔
; مثالیں
تنویر کل [[کراچی]] جائے گا، افضل [[کرکٹ]] کھیلے گا، فصیح [[پھول]] توڑے گا، سیما [[خط (مکتوب)|خط]] لکھے گی۔ [[کسان]] فصل کاٹے گا، اِن جملوں میں جائے گا، کھیلے گا، توڑے گا، لکھے گی، کاٹے گا فعل [[مستقبل]] ہیں۔
 
== [[فعل ماضی کی اقسام]] ==
وہ فعل جس میں کسی کام کا کرنا یا ہونا مطلق گذرے ہوئے زمانے میں پایا جائے۔
; مثالیں
عارف نے [[کتاب]] پڑھی، ناصر [[لاہور]] گیا، حنا نے [[خط (مکتوب)|خط]] لکھا، راشدہ نے [[کھانا]] کھایا، وغیرہ اِن جملوں میں پڑھی، گیا، لکھا اور کھایا ماضی مطلق ہے۔
; ماضی مطلق بنانے کا قاعدہ
یہ فعل مصدر کی علامت ”نا“ دور کر کے ”ا“ یا ”ی“ بڑھا دینے سے بنتا ہے۔
; مثالیں
پڑھنا سے پڑھا، [[کھانا]] سے کھایا، [[دیکھنا]] سے دیکھا، آنا سے آیا، کھیلنا سے کھیلا، پینا سے پیا، وغیرہ
; ماضٰیماضی مطلق کی گردان
آنا مصدر سے [[ماضی]] مطلق کی گردان
{| class="wikitable"
|}
 
ہنسنا اور کھانا [[مصدر (لسانیات)|مصدر]] سے ماضی مطلق کی گردان
 
{| class="wikitable"
وہ فعل جس میں کسی کام کا کرنا یا ہونا گذرے ہوئے زمانے میں شک کے ساتھ پایا جائے [[ماضی]] شکیہ کہلاتا ہے۔
; مثالیں
سیما نے [[نماز]] پڑھی ہوگی، عرفان [[مسجد]] گیا ہوگا، عرفان نے [[چاند]] دیکھا ہوگا، اشرف نے [[خط (مکتوب)|خط]] لکھا ہوگا، نسرین نے سبق پڑھا ہوگا، قنبر نے کھانا کھایا ہوگا، اِن جملوں میں پڑھی ہوگی، گیا ہوگا، دیکھا ہوگا، لکھا ہوگا، پڑھا ہوگا، کھایا ہوگا، فعل ماضی شکیہ ہیں۔
; ماضی شکیہ بنانے کا قاعدہ
مصدرسے ماضی مطلق بنا کر آخر میں ہو گا بڑھا دیتے ہیں جیسے [[دیکھنا]] مصدر سے دیکھا ماضی مطللق بناتے ہیں اور آخر میں ہو گا لگانے سے دیکھا ہو گا ماضی شکیہ بن جاتا ہے۔
3,309

ترامیم