مرکزی مینیو کھولیں
مغلیہ دور میں دیوان کو ترتیب دیتے ہوئے ادیب، ایک تصویر۔

دیوان کسی شاعر کے کلام کا مجموعہ دیوان کہلاتا ہے۔ دور ابتدائیہ میں خاص طور پر مرثیہ گوئی کو بشکل کتاب دی جاتی تھی جسے دیوان کہا جاتا تھا۔ طویل نظموں کے مجموعہ کو اور غزلوں کے مجموعہ کو دیوان نام دیا گیا۔[1] یہ دیوان خاص طور پر شاہی درباروں میں مرتب کیے جاتے تھے۔ جن کا اہم مقصد حوصلہ افزائی ہوا کرتا تھا۔

دیوانِ حافظ، ایران 1842.

اردو میں دیوان، غزلیات کے مجمویہ کا نام ہے۔[2] اردو کے پہلے شاعر دیوان محمد قلی قطب شاہ تھے جو گولکنڈہ کے قطب شاہی سلطنت کے پانچویں سلطان تھے۔

مثالیںترميم

  • دیوان حافظ
  • دیوانِ قلی قطب شاہ
  • دیوانِ میر

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. François de Blois۔ "DĪVĀN"۔ Encyclopædia Iranica۔
  2. A History of Urdu literature by T. Grahame Bailey; Introduction

مزید پڑھیےترميم

بیرونی روابطترميم