راتکو ملادیچ (پیدائش 12 مارچ 1942ء) بوسنیا جنگ کے دوران میں بوسنیا سرب فوج کا سربراہ تھا، 1995ء میں اس کی فوج نے بوسنیا کے علاقہ سریبرینیتسا پر اقوام متحدہ کی فوج کو نکال کر قبضہ کیا اور آٹھ ہزار مسلمانوں کو گرفتار کر کے قتل کر دیا، جس پر اسے جنگی مجرم قرار دیا گیا مگر وہ سربیا فرار ہو گیا۔ 16 برس سربیا کی حکومت اسے پناہ دیتی رہی۔ آخر کار یورپی اتحاد کی رکنیت کی خاطر دوسرے ممالک کی خوشنودی حاصل کرنے کے لیے سربیا نے مئی 2011ء میں اسے گرفتار کر لیا۔[1][2] اس کے مقدمے کی سماعت 16 مئی 2012ء کو ہالینڈ کے شہر ہیگ میں شروع ہوئی اور 22 نومبر 2017ء میں بین الاقوامی فوجداری ایوان عدل برائے سابقہ یوگوسلاویہ نے اسے جنگی جرائم، نسل کشی اور انسانیت کش جرائم کا مجرم ٹھہرایا اور عمر قید کی سزا سنائی۔[3]

راتکو ملادیچ
Ratko Mladić
Evstafiev-ratko-mladic-1993-w.jpg
راتکو ملادیچ، 1993
مقامی نام
Ратко Младић
پیدائش12 مارچ 1942ء (عمر 78 سال)
بوجانوویتسی، آزاد ریاست کروشیا
(موجودہ بوسنیا و ہرزیگووینا)
وفاداریFlag of Yugoslavia (1946-1992).svg یوگوسلاویہ
جمہوریہ سربی کرائنا
Flag of the Republika Srpska.svg سرپسکا
سروس/شاخLogo of the JNA.svg Yugoslav People's Army (جے این اے)
Emblem of the Army of Republika Srpska.svg جمہوریہ سرپسکا فوج (وی آر ایس)
سالہائے فعالیت1965–1996
درجہColonel General
Commands held9ویں کور (جے این اے)
دوسرا فوجی ضلعی صدر دفتر (جے این اے)
سربراہ وی آر ایس جنرل سٹاف
مقابلے/جنگیںCroatian War
  • Operation Coast-91

بوسنیائی جنگ

اعزازات Order of Brotherhood and Unity (II)

Order of Military Merits (III)
Order of Military Merits (II)

Order of the People's Army (II)

حوالہ جاتترميم

  1. "Ratko Mladic: Inglorious end for feared general who became feeble old man". دی گارجین. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2011ء. 
  2. "Passage of time may be in Ratko Mladic's favor". لاس اینجلز ٹائمز. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 مئی 2011ء. 
  3. "Mladic guilty of genocide over Bosnia" (بزبان انگریزی). بی بی سی نیوز. 22 نومبر 2017. 25 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 نومبر 2017.