قتیبہ بن مسلم

عبداللہ بن زبیر اور اموی دور کا مشہور جرنیل

قتیبہ بن مسلم بن عمرو بن حصینؒ 48ھ میں پیدا ہوا۔ ان کے والد مسلم بن عمرو سیدنا ابن زبیرؓ کے بھائی مصعب بن زبیرؓ کے خاص ساتھیوں میں سے تھے۔ مصعب بن زبیرؓ ان دنوں عراق کے گورنر تھے۔انھوں نے اس نوجوان کی صلاحیتوں کا اندازہ لگا لیا اور جب قتیبہ ہر آزمائش میں پورے اترے تو انھیں اسلامی فوج کے ایک حصے کا سپہ سالار بنا دیا گیا۔[1] عبد اللہ ابن زبیر کی شہادت کے وقت قتیبہ کے والد مسلم عبد اللہ بن زبیر کی طرف سے لڑتے ہوئے جاں بحق ہونے،[2] شدید زخمی حالت میں انھوں نے عبد الملک سے قتیبہ کے لیے جان کی امان طلب کی،[3] عبد الملک نے حجاج بن یوسف سے مشورہ کیا کہ اس ہیرے کو ہاتھ سے نہ جانے دینا چاہیے چنانچہ قتیبہ امان دی ازاں بعد ان کو خراسان کی مہم سونپی، فتح کے بعد ان کو خراسان کا والی مقرر کر دیا گیا، جس نے قتیبہ کو اپنی صلاحیتیں بروئے کار لانے کا موقع فراہم کر دیا اور اپنی انہی صلاحیتوں اس نے بنی امیہ کی سلطنت کو وسعت دے کر اپنا نام اہم سپہ سالاروں کی صف میں شامل کیا۔

قتیبہ بن مسلم
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 668ء   ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بصرہ   ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 715ء (46–47 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وادئ فرغانہ   ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت سلطنت امویہ   ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
دیگر جماعتیں عبد اللہ بن زبیر کے لشکر کے سالار
عسکری خدمات
وفاداری سلطنت امویہ   ویکی ڈیٹا پر (P945) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عہدہ جرنیل   ویکی ڈیٹا پر (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لڑائیاں اور جنگیں ماوراء النہر کی مسلم فتح   ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

قتیبہ فتوحات اور جہاد کے شوق میں چین کی سرحد تک جا پہنچا۔ ولید کا دور قتیبہ کی فتوحات اور ترقی کا دور تھا لیکن سلیمان بن عبدالملک کے دور میں حالات ایسے پیدا ہوئے کہ قتیبہ نے بغاوت کر دی۔

قتیبہ حجاج کا حامی تھا جبکہ سلیمان حجاج سے نفرت کرتا تھا اس لیے نے اس نے یزید بن مہلب کو قتیبہ کی جگہ خراسان کا والی مقرر کیا جو قتیبہ کی بغاوت کی وجہ ثابت ہوئی لیکن اس کی فوج نے اس کا ساتھ نہ دیا اور صرف 47 برس کی عمر میں قتل کر کے سر کاٹ کے سلیمان کے پاس بھیج دیا۔ اس طرح سلیمان کے دور کے تین عظیم سپہ سالار موسیٰ بن نصیر، محمد بن قاسم اور پھر قتیبہ بن مسلم سلیمان کے دور میں اپنے انجام کو پہنچے۔

حوالہ جات ترمیم

  1. "قتیبہ مصعب بن زبیر کا سپاہی" 
  2. "قتیبہ بن مسلم کے والد" 
  3. "قتیبہ بن مسلم کے لیے امان"