محاصرہ یروشلم (587 قبل مسیح)

589 ق م میں، بخت نصر نے یروشلم کا محاصرہ کیا، جس کا اختتام 587 ق م میں ہیکل کی تباہی کی صورت میں ہوا۔

محاصرہ یروشلم
بسلسلہ Jewish–Babylonian war (601–586 ق م)
تاریخ589 تا 587 ق م
مقامیروشلم
نتیجہ

بابلیوں کی فتح;
یروشلم تباہ کر دیا گیا;

زوال مملکت یہودہ
محارب
مملکت یہودہ جدید بابلی سلطنت
کمانڈر اور رہنما
صدقیاہ بخت نصر
طاقت
بہت کم نامعلوم
ہلاکتیں اور نقصانات
کئی مقتول، 4,200 کو قید کیا گیا نامعلوم

محاصرہترميم

597 قبل مسیح کے محاصرے کے بعد، جدید بابلی سلطنت کے بادشاہ بخت نصر نے 21 سالہ صدقیاہ کو یہودا کا بادشاہ مقرر کیا۔ تاہم، صدقیاہ نے بابل کے خلاف بغاوت کر دی اور مصری فرعون کے ساتھ اتحاد کر لیا۔ بخت نصر نے یہودا پر حملے کے ذریعے جواب دیا[1] اور دسمبر 589 ق م میں یروشلم کے محاصرے کا آغاز ہوا۔[2] اس محاصرے کے دوران، جو اٹھارہ یا تیس ماہ تک جاری رہا، ہر طرح کی تکلیف و تباہی شہر کو پہنچی، جس تلچھٹ کے لیے خدا کے غضب کا پیالہ پیا گیا تھا۔[3]

حوالہ جاتترميم

  1. 2 Kings 25:1
  2. Malamat، Abraham (1968). "The Last Kings of Judah and the Fall of Jerusalem: An Historical—Chronological Study". Israel Exploration Journal 18 (3): 137–156. doi:ڈی او ئي. http://www.jstor.org/stable/27925138. "The discrepancy between the length of the siege according to the regnal years of Zedekiah (years 9-11), on the one hand, and its length according to Jehoiachin's exile (years 9-12), on the other, can be cancelled out only by supposing the former to have been reckoned on a Tishri basis, and the latter on a Nisan basis. The difference of one year between the two is accounted for by the fact that the termination of the siege fell in the summer, between Nisan and Tishri, already in the 12th year according to the reckoning in Ezekiel, but still in Zedekiah's 11th year which was to end only in Tishri.". 
  3. 2 Kings 25:3; Lamentations 4:4, 5, 9