آسیہ زبیر، جو آسیہ حسن کے نام سے بھی مشہور ہیں (17 جون 1972 - 12 فروری 2009) نے اپنے شوہر معظم حسن کے ساتھ مل کر بریجز ٹی وی کی بنا ڈالی جو امریکی مسلمان کا پہلا انگریزی زبان کا ٹیلی ویژن نیٹ ورک بنا [1]۔ فروری 2009 میں وہ بريجز ٹی وی اسٹیشن پر مردہ پائی گئیں، اس کے بعد اس کے شوہر نے اپنے آپ کو ایک پولیس اسٹیشن کے حوالے کر دیا اور اس پر دوسرے درجے کے قتل کا الزام عائد کیا گیا [2]۔

کیریئرترميم

آسیہ زبیر پیشہ کے لحاظ سے ایک معمار تھیں۔ انھوں نے ایک ریاستی یونیورسٹی ، بفیلو کے نیویارک کالج سے 2007 سے 2009 تک ایم بی اے کی تعلیم حاصل کی [1]۔ مسلمانوں کے بارے میں منفی خیالات کی طرف سے فکر مند، وہ "محسوس کرتی ہیں کہ ایک امریکی مسلم میڈیا ہونا چاہیے جہاں اس کے بچے امریکی مسلمان کے طور پر اپنی شناخت کو مضبوط بنائیں [2]" اور انہیں اسی سلسلے میں بریجز ٹی وی کا خیال آیا۔ آسیہ زبیر عزیزہ میگزین جلد نمبر تین ،شمارہ نمبر دو(2003) میں ایک سرورق کی کہانی کا محور تھیں۔ اُن کی تصویر سرورق پر چھپی تھی [3]۔

قتلترميم

معظم حسن نے آسیہ زبیر کو ٹیلی ویژن اسٹوڈیو کی طرف مائل کیا جہاں انہوں نے بارہ فروری 2009 ء تک ایک ساتھ کام کیا [4]۔ اس نے دو شکاری چاقوؤں کے ساتھ اُن پر حملہ کیا، معظم حسن نے چالیس بار چاقو بھونکا اور آخر میں اُن کا سر قلم کر دیا [4]۔ آسیہ زبیر نے قتل سے ایک ہفتہ قبل طلاق کی اپیل کی تھی [5]۔ سی این این خبر رساں ادارے کے مطابق قتل کے وقت آسیہ زیبر قتل کے وقت فون پر اپنی بہن سے بات کر رہی تھیں [6]۔

ترکہترميم

ایک نشریاتی کارکن کے طور پر اپنے پیشہ ورانہ کام کے علاوہ ، آسیہ زبیر کو گھریلو تشدد کے معاملے میں ، خاص طور پر شمالی امریکا کی مسلم کمیونٹی کے بارے میں زیادہ سے زیادہ آگاہی دینے کے لیے ایک عملی انسان کے طور پر بھی یاد کیا جاتا ہے۔ معروف ڈراما نگار [7] اور گوٹ ملک کے بانی ، وجاہت علی [8] نے دی گارجین میں لکھا ہے کہ "اس نے آسیہ کے قتل کی متعلق بربریت کا مظاہرہ کرتے ہوئے بہت سارے امریکی مسلمانوں کو ایک واضح یاد دہانی کروائی ہے جنھوں نے اس شدید مصیبت کا سامنا کرتے ہوئے اس سانحے کا جذباتی طور پر جواب دیا ہے [9]"۔ اسلامی معاشرے کے شمالی امریکا کے نائب صدر ، امام محمد حگماگد علی نے کہا: "یہ ہم سب کے لیے بیداری کا پیغام ہے کہ خواتین پر واقعی تشدد ہو رہا ہے اور اسے نظرانداز نہیں کیا جا سکتا۔ اس پر ہماری جماعت کے ہر فرد کو اجتماعی طور پر خطاب کرنا چاہیے [9]۔" فروری 2009 میں "ائمہ خطاب کرتے ہیں: گھریلو تشدد ہماری برادریوں میں برداشت نہیں کیا جائے گا" کے عنوان سے ملک گیر ، متفقہ کوشش کا آغاز ہوا اور تمام اماموں اور مذہبی رہنماؤں سے اپنے جمعہ کے خطبہ میں ، آسیہ زبیر قتل اور گھریلو تشدد پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے کہا گیا ہے [10]۔ 7 فروری ، 2011 کو ، مزمل حسن کو اپنی اہلیہ آسیہ زبیر جن کے ساتھ شادی شدہ زندگی کے آٹھ سال گزارے ، کا سر قلم کرنے کے الزام میں دوسرے درجے کے قتل کا مرتکب پایا گیا [11]۔ اسے 25 سال عمر قید کی سزا سنائی گئی [4]۔ وہ اس وقت کلنٹن اصلاحی سہولت ، ڈنیمورہ میں سزا کاٹ رہا ہے [5]۔

یوم جامنی حجابترميم

2012 میں خواتین کے خلاف گھریلو تشدد کی طرف توجہ دلانے کے لیے پہلا بین الاقوامی یومِ جامنی حجاب منایا گیا [12]۔ وائس آف لیبیا ویمن کی بانی ، الا مرابیت نے کہا ہے کہ "جامنی حجاب کا دن کسی مسلمان کی بیوی ، بیٹی ، ماں یا بہن کے ساتھ بدسلوکی کرنے کے جھوٹے حق سے براہ راست مقابلہ کرتا ہے [12]۔" بین الاقوامی جامنی حجاب کا دوسرا ہفتہ فروری میں آسیہ زبیر کی یاد میں منایا جاتا ہے [13] [14]۔

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب Aasiya Zubair LinkedIn Profile
  2. ^ ا ب Robbins، Liz (17 February 2009). "Upstate Man Charged With Beheading His Estranged Wife". The New York Times. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  3. "Cover". Azizah Magazine 3 (2). 2003. http://www.azizahmagazine.com/side-bkissue-vol3is2.html۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 August 2015.  آرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ azizahmagazine.com [Error: unknown archive URL]
  4. ^ ا ب پ Sheridan، Michael (9 March 2011). "Muzzammil Hassan Gets 25 to Life for Beheading Wife, Aasiya Hassan". New York Daily News. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  5. ^ ا ب "Killers from WNY: Where They are Now". The Buffalo News. 9 June 2015. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  6. "آسیہ قتل کے وقت بہن سے فون پر بات کر رہی تھیں". ڈان نیوز. 19 فروری 2009. 
  7. Ali، Wajahat. "The Domestic Crusaders". The Domestic Crusaders. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  8. GoatMilk.Wordpress.com
  9. ^ ا ب Ali، Wajahat (19 February 2009). "A Wake-Up Call for the Community". The Guardian. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  10. "American Muslims Call to Action to End Domestic Violence". Star Tribune. 20 February 2009. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  11. Sheridan، Michael (9 March 2011). "Muzzammil Hassan Gets 25 to Life for Beheading Wife, Aasiya Hassan". New York Daily News. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  12. ^ ا ب Murabit، Alaa (14 March 2013). "In Libya, Islam - and a Purple Hijab - Help Spurn Domestic Violence Against Women". The Christian Science Monitor. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  13. Majeed، Hadayai (12 February 2013). "The Origin of The International Purple Hijab Day". Project Sakinah. 04 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015. 
  14. "Purple Hijab Day to Celebrate Annual Call for End to Domestic Violence". Libya Herald. 10 February 2015. اخذ شدہ بتاریخ 15 اگست 2015.