اسلامی عقیدہ

اسلامی الٰہیات
(اسلامی عقائد سے رجوع مکرر)

عقیدہ دراصل لفظ "عقد" سے ماخوذ ہے، جس کے معانی ہیں کسی چیز کو باندھنا ،جیسے کہا جاتا ہے "اعتقدت کذا" (میں ایسا اعتقاد رکھتا ہوں) یعنی میں نے اسے (اس عقیدے کو) اپنے دل اور ضمیر سے باندھ لیا ہے۔ لہذا عقیدہ : اس اعتقاد کو کہا جاتا ہے جو انسان اپنے دل میں کسی چیز کے بارے میں رکھتا ہے، کہا جاتا ہے : "عقیدۃ حسنة" (اچھا عقیدہ)، یعنی : "سالمة من الشک" (شک سے پاک عقیدہ)، عقیدہ در حقیقت دل کے یقین کرنے کے عمل کا نام ہے اور وہ ہے دل کا کسی بات پر ایمان رکھنا اور اس کی تصدیق کرنا۔

اسلام کے پیروکار مسلمان کہلاتے ہیں۔ اس کی وجہ سے عرب کی غیر مہذب قوم دنیا کو تہذیب سکھانے والی اُستاد بن گئی اور موجودہ دور کی سائنسی ترقی کے لیے کی جانیوالی تلاش میں پہلا قدم بھی مسلمانوں کی طرف سے رکھا گیا۔ آپ ﷺ کی وفات کے بعد آپکے خلفاء راشدین اور صحابہ کرام نے اس کی اشاعت اپنے کردار اور اعمال کے ذریعے پوری دنیا میں کی اور یہ دنیا میں سب سے تیزی کے ساتھ پھیلنے والا مذہب بن چکا ہے۔[1]

تعارفترميم

دوسرے مذاہب اور ادیان کی طرح مسلمان بھی اپنے عقائد کی وجہ سے مختلف فرقوں میں تقسیم ہو گئے۔ عمان کا پیغام میں جن مذاہب کو مسلمان تسلیم کیا گیا ہے، اُن کے کچھ عقائد ایسے ہیں جو دین اسلام کے تمام ذیلی مذاہب کے ماننے والوں میں مشترک ہیں اور متفقہ اسلامی عقائد کہلاتے ہیں۔ ان عقائد کو ضروریات دین کہتے ہیں۔ ذیل میں ان ہی عقائد کی فہرست اور وضاحت تحریر کی گئی ہے۔ اس تحریر کے لیے کوشش کی گئی ہے کہ اُن کتب سے استفادہ کیا جائے جن میں بنیادی ماخذ یعنی قرآن و حدیث سے حوالہ جات درج ہوں۔ نیز ویکیپیڈیا پر اسلامی عقائد کے حوالہ سے درج کے مضامین سے بھی تفصیلات لی گئی ہیں اور انہی کا حوالہ درج کیا گیا ہے۔ اس کے علاوہ باقی عقائد کے لیے انٹرنیٹ کے حوالہ جات درج کرنے کی کوشش کی گئی ہے تاکہ آسانی سے دیکھے جا سکیں۔

ایمان باللہ(اللہ پر ایمان)ترميم

  1. اللہ ایک ہے۔ وہ کسی کا محتاج نہیں۔ نہ اُس نے کسی کو جنا۔ نہ وہ کسی سے جنا گیا۔ نہ اُسکی کوئی بیوی ہے۔ کوئی اس کا مقابل نہیں۔اسی نے سارا جہاں بنانا،

ایمان بالملائکہ(فرشتوں پر ایمان)ترميم

ایمان بالکتب(کتابوں پر ایمان)ترميم

ایمان بالرسل (رسولوں پر ایمان)ترميم

ایمان بالآخرت(قیامت پر ایمان)ترميم

ایمان بالقدر(تقدیر پر ایمان)ترميم

منظور الٰہی اپنی کتاب "سماج سنسکارے سنتیکا آکیدارہ گروتبا" (سماجی اصلاح میں صحیح عقیدہ کی اہمیت) میں "اصلاح معاشرہ کی ضرورت اور اس تناظر میں صحیح اسلامی عقیدہ کے کردار اور اہمیت" کے بارے میں کہتے ہیں۔ [2]

انسان اپنی انفرادی زندگی کی تمام ضروریات کو پورا کرنے کے لیے معاشرے میں رہتا ہے۔ کسی بھی معاشرے کا بنیادی ہدف اس معاشرے کے تمام افراد کی مجموعی فلاح و بہبود اور پرامن بقائے باہمی کو یقینی بنانا ہے۔ لیکن انفرادی زندگی کی ناخواندگی، ناقص تعلیم اور خود غرضی کے سماجی زندگی پر بہت منفی اثرات مرتب ہوتے ہیں، جس سے معاشرہ آلودہ اور زہر آلود ہو جاتا ہے جیسے کہ کرپشن، تفریق، تقسیم، تشدد وغیرہ۔ سماجی اصلاح کے لیے، جیسا کہ ہم اپنے موجودہ سماجی تناظر میں اس کا تجربہ کرتے ہیں۔ اگر ہم معاشرے کے موجودہ حالات کا تجزیہ کریں تو ہم دیکھ سکتے ہیں کہ اس معاشرے کے لوگ مسائل سے دوچار ہیں اور بدعنوانیوں میں گرفتار ہیں۔ اس کا ناگزیر نتیجہ یہ ہے کہ عقیدہ میں اختلاف اور جبلت کے تقاضے کے مطابق جو چاہے اس کا عقیدہ قرآن و سنت پر مبنی ہو یا نہ ہو۔ دوسری طرف لوگوں کا ایمان بہت کمزور ہو چکا ہے، تقویٰ ان کے دلوں سے نکل چکا ہے اور وہ آخرت کے عذاب کو بھول چکے ہیں۔ اس کے نتیجے میں معاشرے میں عدم استحکام، عدم استحکام، لوٹ مار کا رجحان، طرح طرح کی دہشت گردی اور برے کلچر کا پھیلاؤ اور دیگر بہت سے مسائل نمودار ہوئے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت میں ہم دیکھتے ہیں کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس وقت کے جاہلی معاشرے کو بدل کر اس وقت کے بہترین معاشرے میں تبدیل کر دیا۔ انفرادی اور معاشرتی زندگی میں مثبت تبدیلیاں لانے کی تحریک جس کا آغاز آپ نے نبوت کے بعد کیا، وہ مذہبی اصلاح کا بنیادی عمل تھا۔ اس بارے میں سید قطب نے اپنی کتاب ماکومت التصور الإسلامي (اسلامی فہم کے عناصر) میں کہا ہے:

"رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اس وقت بھیجا گیا تھا جب جزیرۃ العرب کو لوٹی ہوئی دولت کے طور پر شمال میں رومیوں اور جنوب میں فارسیوں کے درمیان تقسیم کیا گیا تھا۔ انہوں نے زرخیزوں کی طرف ہاتھ بڑھائے۔ جزیرۃ العرب کی سرزمین، سمندر، دولت اور تجارت کے تمام ذرائع، رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو ایسے وقت میں بھیجا گیا جب موجودہ سماجی اور معاشی حالات غلامی کے دور کی نمائندگی کر رہے تھے۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو ایسے وقت میں بھیجا گیا تھا جب انسانی فطرت شراب، زنا، جوا، کھیل اور مذاق میں جہالت کی وجہ سے برائی اور تباہی پیدا کرتی تھی۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اصلاح کا کام ان میں سے کسی کے ساتھ شروع نہیں کیا تھا، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے عربوں کو قومی اتحاد کی طرف بلایا تاکہ جزیرۃ العرب کی زرخیز زمینوں سے رومیوں اور فارسیوں کو نکال باہر کیا جا سکے۔ تمام قوتوں کو استعمال کر سکتا ہے۔ ان کے خلاف جنگ اور عربوں کو قومی دشمنوں کے خلاف مشتعل کرنا۔ اس کے نتیجے میں وہ اس کی قیادت کی اطاعت کریں گے اور اپنی تمام دشمنیوں کو بھول جائیں گے۔…… لیکن اللہ جانتا تھا، اس نے اپنے نبی کو آگاہ کیا اور ہدایت کی کہ یہ صحیح راستہ نہیں ہے اور یہ بنیادی عمل نہیں ہے۔ انسان کا اصل کام یہ ہے کہ وہ اپنے حقیقی رب کو پہچانے اور صرف اس کی بندگی کو قبول کرے اور اس کے بندوں کی غلامی سے آزاد ہو جائے اور آخر میں جو کچھ بھی اللہ کی طرف سے ان کے پاس آئے اسے قبول کرے..."

قابل ذکر بات یہ ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے نبوت کے بعد مکی کی زندگی کے 13 ویں سال میں عقیدہ کے بارے میں علم کی ترویج کو سب سے زیادہ اہمیت دی۔ صرف یہی نہیں بلکہ تمام انبیاء و مرسلین کا اولین کام ہر طبقہ فکر کے لوگوں کو صحیح عقیدہ کی طرف بلانا تھا۔ القرآن کے الفاظ میں، ان کی یہ پکار تھی: ’’اے میری قوم اللہ کی عبادت کرو۔ اس کے سوا تمہارا کوئی معبود نہیں ہے۔" [الاعراف: 58] اس کی وجہ صرف ایک تھی کہ اگر عقیدہ خالص نہ ہو تو فرد کی زندگی پاک نہیں ہوتی اور اگر فرد پاک نہ ہو تو معاشرہ بھی پاک نہیں ہوتا۔

... (1) عظیم تر قومی اتحاد کے قیام میں صحیح مسلک کا کردار: جس طرح صحیح مسلک پر متفق ہوئے بغیر عظیم تر اتحاد کا قیام ممکن نہیں، اسی طرح پوری دنیا میں امت مسلمہ کے لیے یہ بھی بعید از قیاس ہے۔ متحد ہو اس تناظر میں (ڈاکٹر) عمر سلیمان الاشکر نے کہا: "مسلمانوں کا اتحاد اس وقت تک قائم نہیں ہو سکتا جب تک کہ ایک ہی مسلک مسلمانوں کو متحد نہ کردے۔" درحقیقت یہ مذہبی انتشار ہی ہے جو معاشرے میں انتشار کے بیج بوتا ہے۔ معاشرہ مختلف دھڑوں میں بٹا ہوا ہے۔ اگر یہ سوال پیدا ہو کہ ہر کوئی اپنے اپنے مسلک اور عقیدہ کو درست سمجھتا ہے۔ اس صورت میں کسی خاص عقیدہ کو صحیح ماننا ممکن نہیں ہوگا۔ کیونکہ ہر پارٹی اپنی رائے پر یقین رکھتی ہے۔ اس سوال کے جواب میں (ڈاکٹر) عمر سلیمان الاشکر نے کہا: "قرآن و سنت میں خالص اسلامی عقیدہ کے بارے میں واضح بیان موجود ہے۔ اس مسلک کے ہر بنیادی اور بنیادی پہلو پر دلائل پیش کرنا ممکن ہے۔ اور سلف صالحین کی بنیاد حقیقی اسلامی عقیدے پر رکھی گئی۔ انہوں نے اس عقیدہ کو اس قدر اچھی طرح سے قلمبند کیا ہے کہ یہ بدعتیوں اور گمراہ لوگوں کے مسلک سے بالکل مختلف ہے۔ ان عظیم ہستیوں میں علامہ طہبی بھی ہیں جنہوں نے عقیدہ کی کتاب لکھی جو ان کے نام سے مشہور ہے۔ اس کتاب کی تفسیر محمد ابن ابیض الحنفی نے لکھی ہے۔ بات یہیں نہیں رکتی بلکہ بہت سے علماء نے صحیح عقیدہ سے پہلے اور بعد میں لکھا ہے۔ ان میں امام احمد، ابن تیمیہ، شوکانی اور سفرینی شامل ہیں۔

(2) صحیح عقیدہ بدعنوانی، بدعنوانی، ظلم اور جبر سے پاک سول سوسائٹی کی تشکیل کی مضبوط بنیاد پیدا کرتا ہے۔ جس کی بنیاد پر معاشرے کی تمام سرگرمیاں اور باہمی لین دین ہوتا ہے۔ لہٰذا اگر عقیدہ کج روی اور باطل پر مبنی ہو گا تو معاشرتی زندگی خطرے میں پڑ جائے گی، بگاڑ اور تباہی کا شکار ہو جائے گی۔ آج ہمارا معاشرہ جس پوزیشن پر ہے اس کی بنیادی وجہ یہی ہے۔ پس معاشرے کو بگاڑ، تباہی اور بربادی سے بچانے کے لیے صحیح عقیدہ کی طرف لوٹنا ضروری ہے۔

(3) معاشرے میں پرامن بقائے باہمی کو یقینی بنانے کے لیے صحیح عقیدہ کی اہمیت: مسلمان شخص کے عقیدے کا ایک جزو یہ ہے کہ وہ اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے احکامات کے مطابق زندگی گزارنا ضروری سمجھتا ہے، اور ان کا خیال ہے کہ ان کے احکام کی نافرمانی ناجائز ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’اور کسی مومن مرد یا عورت کو اپنے اوپر کوئی حق نہیں ہے کہ اللہ اور اس کے رسول نے حکم دیا ہو‘‘۔ [الاحزاب: 36] معاشرے میں پرامن بقائے باہمی کو یقینی بنانے کے لیے جب اللہ تعالیٰ مسلمانوں کو ایک دوسرے کا بھائی قرار دیتا ہے، کسی کی جان و مال پر قبضے کو سنگین جرم قرار دیتا ہے، اور غیر مسلموں کے ساتھ کیے گئے معاہدے کو پورا کرنے کا حکم دیتا ہے۔ بغیر کسی ہچکچاہٹ کے اس حکم کی تعمیل کرتا ہے۔ لیتا ہے، کیونکہ اسے اس طرح قبول کرنا اس کے مسلک کا حصہ ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: ’’پس تیرے رب کی قسم وہ اس وقت تک مومن نہیں ہوں گے جب تک کہ آپ ان کے درمیان جھگڑے کا فیصلہ نہ کر لیں، پھر جو فیصلہ آپ دیں اس میں ان کے دلوں میں کوئی شک نہ ہو اور اسے پوری رضامندی کے ساتھ قبول کریں۔ [النساء: 65]

(4) سیاسی استحکام لانے میں صحیح عقیدہ کی اہمیت: اسلامی عقیدہ کے بنیادی اصولوں میں سے ایک یہ پختہ یقین ہے کہ اللہ اس دنیا کا خالق ہے، اس لیے وہ اس کی حکمرانی اور رہنمائی کا مالک ہے۔ اللہ تعالیٰ فرماتا ہے: جان لو، اسی کی تخلیق اور ہدایت ہے۔ [الاعراف: 54] ’’کہہ دیجئے کہ تمام معاملات اللہ کے ہیں۔‘‘ [آل عمران: 154] ’’حکم صرف اللہ کا ہے۔‘‘ [الانعام: 57] اس کے علاوہ اللہ تعالیٰ تمام اختیارات کا مالک اور واحد قانون ساز اور قانون دینے والا ہے۔ یہ اسے رب ماننے کا ایک مطلب ہے۔ ہمارے معاشرے میں سیاسی استحکام اسی صورت میں واپس آسکتا ہے جب سیاسی رہنما اس عقیدے پر پختہ یقین رکھتے ہوں۔ بنیادی طور پر انسانوں کے بنائے ہوئے قوانین کے ساتھ کسی بھی مسلم معاشرے میں امن و امان اور استحکام نہیں آسکتا۔ شاید حقیقت اس کا سب سے بڑا ثبوت اور گواہ ہے۔

(5) غلط کلچر کو روکنے کے لیے صحیح عقائد کی اہمیت: اسے غلط کلچر کہنا مبالغہ آرائی نہیں ہو گی جو اس وقت ہمارے بنگلہ دیشی معاشرے میں اجنبی غیر ملکیوں اور مختلف مذاہب کی تقلید میں ثقافت کے نام پر رائج ہے۔ چونکہ یہ ثقافتیں ہمارے مقامی افکار اور روایات کی نمائندگی نہیں کرتیں، اس لیے یہ بڑی حد تک مسلم عقیدے سے متصادم ہیں۔ ہمیں یاد رکھنا ہوگا کہ یہ ملک ایک مسلم اکثریتی ملک ہے۔ لہٰذا اگر ہم اپنی تمام ثقافتی اور سماجی رسومات کو صحیح اسلامی عقیدہ کی روشنی میں ترتیب دیں تو ملک کو ایک خوبصورت، ذائقہ دار، مہذب اور صحت مند ثقافت سے نوازا جا سکتا ہے۔

(6) معاشرے کو انتشار و انتشار اور فکر میں شرک و بدعت سے نجات دلانے میں صحیح مسلک کی اہمیت: صحیح اسلامی عقیدہ کا علم معاشرے کے دانشور طبقے کی فکری دنیا کو روشن کر سکتا ہے تاکہ وہ قوم کی رہنمائی کر سکے۔ سیدھا راستہ. آج ہم دانشوروں کے ایک طبقے کی سوچ میں جس انتشار اور تذبذب کا مشاہدہ کرتے ہیں، شاید اس کی سب سے بڑی وجہ یہ ہے کہ وہ مسلمان کہلانے کے باوجود اسلام کے خلاف اپنی قلم کی جنگ جاری رکھے ہوئے ہیں، وہ یہ ہے کہ انہوں نے اسلام کو مسخ شدہ طریقے سے جانا ہے، وہ نہیں جانتے۔ خوش قسمتی سے صحیح اسلامی عقیدہ حاصل کرنا۔ یہی بات ان تمام پڑھے لکھے اور ان پڑھ مسلمانوں پر بھی لاگو ہوتی ہے جو عبادت کا سوچتے ہیں اور شرک و بدعت میں ڈوبے ہوئے ہیں۔ قرآن و سنت کی روشنی میں انہوں نے شرک و بدعت کو تسلیم نہیں کیا۔ وہ شرک اور بدعت کو پہچاننے کے بنیادی اصولوں سے بالکل غافل ہیں۔ عقیدہ کا علم حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ صحیح عقیدہ کی طرف بیداری میں اضافہ تمام معاشرے کی ان الجھنوں اور شرک و بدعت سے نجات کا ضامن ہے۔ اس لیے مستند اسلامی عقیدے کا علم حاصل کرنا ہی اپنے آپ کو اللہ کے سچے مومن اور مسلمان بندے کے طور پر تیار کرنے کا واحد ذریعہ ہے۔ اسی طرح اگر ہم ایک معاشرے کو ایک مکمل اسلامی معاشرہ بنانا چاہتے ہیں تو معاشرے کے ہر فرد کو صحیح عقیدہ کے علم سے مالا مال کرنے کا کوئی متبادل نہیں ہے۔ اس سلسلے میں سماجی اور ثقافتی اسلامی تنظیموں کو اہم ذمہ داری نبھانی ہوگی۔ جو لوگ اسلامی شریعت اور علوم کے ماہر ہوں وہ صحیح عقیدہ پر مستند کتابیں لکھ کر بنگالی زبان میں لکھی گئی کتابوں کی کمی کو دور کرسکتے ہیں۔ اس سلسلے میں امام، خطیب اور مدارس کے اساتذہ سے بھی مدد لی جا سکتی ہے۔ البتہ اس سے پہلے انہیں صحیح عقیدہ کے علم سے مالا مال کیا جائے۔ صحیح عقیدہ کو عام کرنے کی کوششوں سے ہمارے معاشرے کو شرک اور بدعت سے پاک ایک خوبصورت سول سوسائٹی کے طور پر تیار کیا جا سکتا ہے۔

حوالہ جاتترميم

  1. Islam is indeed the fastest growing religion – Silencing the Critics., تاریخ تخریج: 26 نومبر، 2014
  2. Ilahi، Muhammad Manzoor. ویکی نویس: Zakariya، Abu Bakr Muhammad. "Samāja sanskārē saṭhika ākīdāra gurutba" (The Importance of Right Aqeedah in Social Reformation) (PDF) (بزبان بنگالی). Riyadh, Saudi Arabia: Islamic Propagation Office in Rabwah. صفحات 19–28. اخذ شدہ بتاریخ 23 نومبر 2022.