ایمازون ایکڑ ایک اس کمیونٹی تھی جو فقط خوایتن کے لیے مختص نیو ساؤتھ ویلز، آسٹریلیا میں تھی اور1970 کی دہائی سے 1980 کے وسط تک قائم رہی۔

ا س کی بنیاد میلبورن اور سڈنی ریڈیکلسبین کی خواتین نے رکھی تھی ، بشمول  کیرن ہِگز کے  جو کہ اپنی معاشرتی زندگی سے مطمئن نہیں تھیں اور زندگی گزارنے کے گروہی طریقوں کے ساتھ تجربہ کرنا چاہتی تھیں۔ [1] [2] [3]

زمین کی خریداری آسٹریلوی ہم جنس پرست اور حقوق نسواں کی خواتین کی طرف سے عطیہ کردہ رقم سے کی گئی تھی۔ 1974 کے موسم گرما تک ،یہاں تقریبا  25 باشندے تھے۔ [4]

ایمازون ایکڑ ایک بڑی 'خواتین کی زمین' تحریک کا حصہ تھا ، جس کی مثالیں امریکہ اور ویلز میں بھی دیکھی گئیں۔ اس کی بنیاد مردوں سے علیحدگی کی بنیاد پر رکھی گئی اور عورتوں کو زندگی کے تمام شعبوں سے نکالا گیا۔ کمیونٹی کے کچھ ارکان نے دوسروں کے مقابلے میں مردوں پر پابندی کے بارے میں زیادہ سختی سے محسوس کیا ، کچھ ممبران نے مکمل پابندی کا مطالبہ کیا ، جس میں چھ سال سے زیادہ عمر کے مرد بچے بھی شامل تھے۔

حوالہ جاتترميم

  1. Meyering، Isobelle Barrett (May 2013). "'There must be a better way': motherhood and the dilemmas of feminist lifestyle change". Outskirts. University of Western Australia. 28. ISSN 1445-0445. اخذ شدہ بتاریخ 22 فروری 2020. 
  2. Jackson، Amber؛ Higgs، Kerryn؛ Robinson، Sophie (2020). "no men, no meat, no machines". All About Women. اخذ شدہ بتاریخ 22 فروری 2020.  (سڈنی اوپیرا ہاؤس event.)
  3. Jennings، Rebecca. "'A thousand acres of red fertile earth': the rural and the urban in 1970s visions of lesbian nation". Queerbeyondlondon.com. اخذ شدہ بتاریخ 10 مئی 2021. 
  4. Higgs، Kerryn (4 March 2020). "My life with no men, no meat, no machines". SBS. اخذ شدہ بتاریخ 10 مئی 2021.