خواجہ حافظ محمد موسیٰ تونسوی

خواجہ حافظ محمد موسیٰ تونسوی چشتی سلیمانی سلسلہ چشتیہ نظامیہ کے بزرگوں میں شمار ہوتے ہیں۔

وضاحتترميم

خواجہ اللہ بخش تونسوی المعروف حضرت ثانی کی وفات 1319ھ/1901ء کے بعد آپ کےدو بیٹے خواجہ حافظ محمد موسیٰ اور خواجہ محمود تونسوی مسند نشیں ہوۓکیونکہ آپ نے دونوں صاحبزادوں کو خلافت عطا فرمائی تھی۔اس لیے دونوں سے الگ الگ سلسلہ چلا جو آج تک دونوں کی اولاد اطہار میں جاری و ساری ہے۔۔

ولادتترميم

خواجہ حافظ محمد موسی آپ خواجہ اللہ بخش تونسوی کے بڑے بیٹے تھے۔ یہ خواجہ موسن سے معروف تھےآپ19ربیع الاول 1269ھ/1852ء کو تونسہ شریف میں پیدا ہوئے۔

تعلیمترميم

مولوی اللہ بخش قریشی، حافظ صدیق اور مولوی خدا بخش جراح سے دینی تعلیم حاصل کی۔

بیعت و خلافتترميم

تکمیل تعلیم کے بعداپنے والد ماجد خواجہ اللہ بخش کے دست مبارک پہ بیعت کی اور جب عمر تیس برس ہوئی تو خرقہ خلافت حاصل کیا۔آپ نہایت نیک نفس تھے۔تونسہ شریف میں آپ نےزائرین کے لیے کئی سرائیں بنوائیں۔

اولادترميم

آپ کے 5 صاحبزادےاور تین صاحبزادیاں تھے۔

  • 1۔خواجہ محمد حامدتونسوی۔خواجہ محمد موسیٰ کے بعد ان کے سجادہ نشین ھوئے۔
  • 2 گل محمد
  • 3میاں غلام زکریا۔۔
  • 4۔میاں عبد اللہ
  • 5محمد یوسف[1]

وفاتترميم

15 ذی الحج 1323ھ/1906ء میں آپ کا وصال ہو گیا۔ [2]

حوالہ جاتترميم

  1. عصائے موسوی حافظ نور محمد مکھڈی
  2. تذکرہ خواجگان تونسوی، جلد اول صفحہ 137،پروفیسر افتخار احمد چشتی چشتیہ اکادمی فیصل آباد پاکستان