سید محمد یاسین شاہ راشدی حفظہ اللہ پیر آف جھنڈہ ہفتم

سید محمد یاسین شاہ راشدی حفظہ اللہ پیر آف جھنڈہ ہفتم :

علامہ سید محب اللہ شاہ راشدی پیر آف جھنڈہ ششم کی وفات کے بعد ان کے بڑے صاحبزادے سید محمد یاسین شاہ راشدی کو خاندانی رسوم ورواج کے مطابق راشدی خاندان کی شاخ جھنڈائی کی سجادگی کیلئے مؤرخہ 22 شعبان 1415ھ  کو علامہ سید بدیع الدین شاہ راشدی ودیگر اکابرین خاندان، معززین اور معتقدین ومریدین نے سب کے اتفاق سے پیر جھنڈہ ہفتم کی حیثیت سے سجادہ نشین مقرر کیاگیا اور دستار پہنائی گئی آپ راشدی خاندان کی شاخ پیر جھنڈہ خاندان کے موجودہ سجادہ نشین ہیں ۔

پیر سید محمد یاسین شاہ راشدی کو اللہ تعالیٰ نے پانچ بیٹے عطا کیے ہائے ان کا بڑے بیٹا پیر سید حمید الدین شاہ راشدی ہے

حوالہ جاتترميم

1۔ تذکرہ مشاہیر سندھ (کامل) مولانا دین محمد وفائی ۔ سندھی ادبی بورڈ حیدرآباد

2۔ سہ ماہی مہران ، سوانح نمبر ۔ شمارہ 3۔4۔1957ء

3۔ ماہنامہ شریعت سکھر ۔سوانح نمبر ۔ سال 1981ء

4۔ تذکرہ علماء اہل حدیث جلد نمبر 2 محمد یوسف سجاد ۔ جامعہ ابراہیمیہ سیالکوٹ

5۔ رموز راشدیہ ۔ ترتیب عبد الرحمن میمن ۔ مکتبہ الدعوۃ السلفیہ مٹیاری ضلع حیدرآباد

6۔ مقدمہ بدیع التفاسیر ۔ پیش لفظ ۔محمد جمن کنبھر۔ جمعیت اہل حدیث سندھ

7۔ ماہنامہ۔ الرحیم حیدرآباد ۔سوانح نمبر ۔

8۔ سہ ماہی مہران ، تحریک آزادی نمبر ۔ سال 1985ء سندھی ادبی بورڈ حیدرآباد

9۔ سندھ کی اسلامی درسگاہیں ۔ محمد جمن ٹالپر ۔طبع حیدرآباد۔ 1982ء

10۔ کلام رشد اللہ شاہ (پیر جھنڈے والے) ڈاکٹر محمد صالح شاہ بخاری۔ سندھی ادبی بورڈ

11۔ماہنامہ صراط مستقیم کراچی شمارہ

نسب نامہترميم

سيد محمد ياسين شاه رشدي بن سيد محب الله شاه رشدي بن سيد احسان الله شاه رشدي بن سید رشد اللہ شاہ راشدی بن سید رشید الدین شاہ راشدی بن سید محمد یاسین شاہ راشدی بن سید محمد راشد شاہ بن سید محمد بقا شاہ رحمۃ اللہ علیھم اور پھر سیدنا حسین ابن علی رضی اللہ عنھ  تک۔.. آپ کے ناناسيد غوس محمد شاه رشدي تھے جن کا سلسلہ نسب سید محمد یاسین شاہ بن سید محمد راشد شاہ تک جاملتا ہے۔ اس طرح آپ دودھیالی و ننھیالی "راشدی حسینی سید" ہیں۔