شھرگ ایک ایرانی رئیس تھا، جس نے ایران کے عرب حملے کے دوران میں پارس کے گورنر کے طور پر خدمات سر انجام دیں۔

شھرگ
انتظامی تقسیم
قابل ذکر

اس کا ذکر سب سے پہلے 4 64 is میں کیا گیا تھا، جب اس نے اصطخر کے قریب عرب فوجی رہنما علا الحضرمی کو شکست دی تھی۔ کچھ عرصے بعد، عثمان بن ابی العاص نے توجوج میں ایک فوجی اڈا قائم کیا اور اس کے فورا بعد میں شاہ شہر کے قریب شاہرگ کو شکست دے کر ہلاک کر دیا (تاہم دوسرے ذرائع کے مطابق یہ شہرک کا بھائی تھا جسے اسنے مارا تھا)۔

حوالہ جات

ترمیم
  • Parvaneh Pourshariati (2008)۔ Decline and Fall of the Sasanian Empire: The Sasanian-Parthian Confederacy and the Arab Conquest of Iran۔ London and New York: I.B. Tauris۔ ISBN 978-1-84511-645-3  Parvaneh Pourshariati (2008)۔ Decline and Fall of the Sasanian Empire: The Sasanian-Parthian Confederacy and the Arab Conquest of Iran۔ London and New York: I.B. Tauris۔ ISBN 978-1-84511-645-3  Parvaneh Pourshariati (2008)۔ Decline and Fall of the Sasanian Empire: The Sasanian-Parthian Confederacy and the Arab Conquest of Iran۔ London and New York: I.B. Tauris۔ ISBN 978-1-84511-645-3 
  • Abd al-Husain Zarrinkub (1975)۔ "The Arab conquest of Iran and its aftermath"۔ The Cambridge History of Iran, Volume 4: From the Arab Invasion to the Saljuqs۔ Cambridge: Cambridge University Press۔ صفحہ: 1–57۔ ISBN 978-0-521-20093-6  Abd al-Husain Zarrinkub (1975)۔ "The Arab conquest of Iran and its aftermath"۔ The Cambridge History of Iran, Volume 4: From the Arab Invasion to the Saljuqs۔ Cambridge: Cambridge University Press۔ صفحہ: 1–57۔ ISBN 978-0-521-20093-6  Abd al-Husain Zarrinkub (1975)۔ "The Arab conquest of Iran and its aftermath"۔ The Cambridge History of Iran, Volume 4: From the Arab Invasion to the Saljuqs۔ Cambridge: Cambridge University Press۔ صفحہ: 1–57۔ ISBN 978-0-521-20093-6 
  • Morony, M. (1986)۔ "ʿARAB ii. Arab conquest of Iran"۔ انسائیکلوپیڈیا ایرانیکا، ج۔، ص۔۔۔ دوم، فاش۔ 2 پی پی   203–210۔
  • A. K. S.، Lambton (1999)۔ "FĀRS iii. History in the Islamic Period"۔ انسائیکلوپیڈیا ایرانیکا، ج۔، ص۔۔۔ IX ، فاش 4 پی پی   337–341۔
  • Touraj Daryaee۔ Collapse of Sasanian Power in Fars۔ Fullerton, California: California State University۔ صفحہ: 3–18