پنوار

راجپوت قبائل کی ایک شاخ

پنوار مغربی میدانوں کا اصل ایک قبیلہ ہے۔ انھیں پرمارا بھی کہا جاتا ہے۔ ۔۔
پرمارا یا پنوار کا تعلق اگنی کل سے ہے اور یہ لوگ کوروں کی نسل سے ہیں۔مہابھارت کی جنگ میں پانڈوں نے تمام کوروں کو قتل کر دیاتھا۔ صرف راجا کرن زندہ رہے آگے چل کر ان کی اولاد پنوار کہلائی۔ پھر چھاوڑا اور بعد میں چھاوڑی گرجر کہلائے۔راجا پورس جس نے سکندر کا مقابلہ کیا تھا اس کا تعلق بھی پرمار سے تھا۔ جن کے خاندان کو پوڑ یا پواڑ کہا جاتا تھا۔ اگرچہ یہ ایسے لڑاکے نہیں تھے جیسا کہ ظاہر کیا جاتا ہے، مگر ان کی سلطنت بہت وسیع رہی ہے۔ زمانہ قدیم سے ایک مثل مشہور ہے کہ دنیا پرمار کی ہے، یہ بھی حقیقت ہے کہ اگرچہ یہ خاندان پرامر اگنی کل میں افضل ہے اور یہ دولت و حشمت میں انہل وارا کے سولنکھیوں تک نہیں پہنچے اور نہ ہی وہ چوہان راجاؤں کی طرح مشہور ہوئے۔ لیکن ان کی ریاستوں کی نسبت زیادہ ان کی ریاستیں زیادہ وسیع رقبہ پر پھیلی ہوئی تھیں۔ ان کی حکومتیں میسر، دھار، منڈو، اوجین، چندر بھاگا، چتور، ابو چنرورتی، مؤ، میدانہ، پرماتی، امرکوٹ، بھکر، لوور اور پٹن میں ان کی ریاستیں رہی ہیں یا انھوں فتح کیا تھا۔ پنجاب کے کئی جٹ اور راجپوت قبیلوں کا دعویٰ ہے کہ وہ پنوار کی شاخ ہیں۔جیسے سیال، میکن، کھرل،کٹیسر، بوھڑ، یہ پنجاب اور زیرین سندھ میں بڑی تعداد میں ہیں اور جٹ/راجپوت کہلاتے ہیں۔[1]

حوالہ جات ترمیم

  1. ذاتوں کا انسائیکلو پیڈیا، ایچ ڈی میکلگن/ایچ اے روز(مترجم یاسر جواد)، صفحہ 116،بک ہوم لاہور پاکستان