چوتھ 17 ویں اور 18 ویں صدی میں ایک چوتھائی محصول کی رسیدوں کو کہا جاتا تھا۔ یہ ہندوستان کے کسی ضلع میں محصول وصول کرنے یا اصل جمع کرنے کا ایک چوتھائی حصہ تھا۔ یہ ٹیکس (فیس) ایک ایسے ضلع پر عائد کیا جاتا تھا جہاں مراٹھا دائرہ اختیار یا ملکیت چاہتے تھے۔ یہ نام سنسکرت کے لفظ سے ماخوذ ہے ، جس کے معنی 'ایک چوتھائی' کے ہیں۔[1][2][3]

عملی طور پر ، ہندو یا مسلم حکمرانوں نے مراٹھوں کو راضی کرنے کے لئے اکثر چوتھ کی فیس ادا کی تھی ، تاکہ مراٹھا اس کی ریاست کو پریشان نہ کریں یا ان کے علاقے میں دراندازی سے نا کریں ۔ مراٹھوں نے دعوی کیا کہ اس ادائیگی کے بدلے میں ، انہیں دوسروں کے حملوں سے بچائیں گے۔ لیکن بہت کم ہندو یا مسلمان راجہ اس نقطہ نظر سے چوتھ کی ادائیگی کو دیکھتے تھے۔ چونکہ حکمران پوری آمدنی کی وصولی کے لئے کوشش کرتے تھے لہذا باقاعدہ محصول کے مطالبہ کے ساتھ چوتھ کے اس اضافی بوجھ کا شامل ہونا ظلم سمجھا جاتا تھا۔ اس کے نتیجے میں ،ہندوستان میں مراٹھوں نے ہندو اور مسلمان دونوں میں ہی مقبولیت کھو دی۔ [4]

حوالہ جاتترميم

  1. Chhabra، G S (2005). Advance Study in the History of Modern India (Volume-1: 1707-1803). نئی دہلی: Lotus Press. صفحہ 62. 
  2. "Chauth and Sardeshmukhi". General Knowledge Today. اخذ شدہ بتاریخ 25 جولائی 2013. 
  3. Pratiyogita Darpan - Medieval India. نئی دہلی: Upkar Prakashan. صفحہ 141. 
  4. بھارت انسائیکلوپیڈیا ، جلد دوم ، صفحہ نمبر- 180 ، ناشر- پاپولر پبلشنگ ، ممبئی ، آئی ایس بی این 81-7154-993-4