عام استعمال میں کسی شخص کا مال اس کی مرضی یا اجازت کے بغیر غیر قانونی طور پر لے لینے کو چوری کہتے ہیں اور یہ عمل کرنے والے شخص کو چور کہا جاتا ہے۔

Paul-Charles Chocarne-Moreau, The Cunning Thief, 1931

چوری کی تعریفترميم

چوری(سرقہ) کا لغوی معنی ہے خفیہ طریقے سے کسی اور کی چیز اٹھا لینا۔[1] جبکہ شرعی تعریف یہ ہے کہ عاقل بالغ شخص کا کسی ایسی محفوظ جگہ سے جس کی حفاظت کا انتظام کیا گیا ہو دس درہم یا اتنی مالیت (یا اس سے زیادہ) کی کوئی ایسی چیز جو جلدی خراب ہونے والی نہ ہو چھپ کر کسی شبہ و تاویل کے بغیر اٹھا لینار[2]اور اصطلاحی تعریف ہے:کسی کی ملکیت کو اس کے مالک کے علم میں لائے بغیرناحق اپنی ملکیت ٹھہرانا

مزید دیکھیےترميم

حوالہ جاتترميم

  1. ہدایہ، کتاب السرقۃ، 1/362
  2. فتح القدیر، کتاب السرقۃ، 5/120