گوک ترک حکمرانوں کی ابتداء آشینہ قبیلے سے ہوئی گوک ترک کے معنی "آسمانی ترک" یا کبھی کبھی "بلیو ترک" (یعنی نیلے آسمانی دائروں سے وابستہ ہوتا ہے) یہ "آسمانی حکمرانی کے فرقے" کے ساتھ مطابقت رکھتا ہے جو التیک سیاسی ثقافت کا ایک متواتر عنصر تھا ترکوں نے التائی پہاڑوں کے شمال میں کئی نسلوں تک زندگی بسر کی اور اسی طرح گوک ترکوں نے منگولیا میں ان کے پیش رورواں سے ان کا استقبال کیا ہے امریکی ثقافتی ورثہ کے لغت کے مطابق قدیم ترکی میں ترک کے معنی "مضبوط" ہیں گیارہویں صدی کے ترک مورخ محمود کاشغری اور دوسرے اسلامی مورخین کے مطابق: ‼️حضرت نوحؑ کے تین لڑکوں میں سے ایک ’’یافِث‘‘ تھا جس کی نو اولادوں میں سے ایک کا نام ترک تھا آگے چل کر ان کی اولادیں ’ترک‘ کے نام سے مشہور ہوئیں‼️ ترک خاقانیت یا گوک ترک خاقانیت ایک خاقانات تھا جو قرون وسطی کے اندرونی ایشیاء میں گوک ترک کے آشینہ قبیلے کے ذریعہ قائم کیا گیا تھا حکمران آشینہ قبیلہ کا نام "گہرے نیلے" ، خوانا کے ساکا اصطلاح سے اخذ کیا جاسکتا ہے بومن خاقان اور اس کے بیٹوں کی سربراہی میں آشینہ منگول کے سطح مرتفع کی حیثیت سے روران خانیت کی حیثیت سے کامیاب ہوئیں اور وسطی ایشیاء میں اپنے علاقوں میں تیزی سے توسیع کی ابتدا میں خاقانات سوگدیئن کو سرکاری اور عدد کاموں میں استعمال کرتا تھا یہ پہلی ترک ریاست تھی جس نے سیاسی نام سے ترک کا نام استعمال کیا اور تاریخ میں کسی بھی ترک زبان کی تحریری ریکارڈ کے لئے جانا جاتا ہے پہلا ترک خاقانات ٥۸١ میں گر گیا جس کے بعد تنازعات اور خانہ جنگیوں کا سلسلہ شروع ہوا جس نے مشرقی ترک خانیت اور مغربی ترک خانیت میں سیاست کو الگ کردیا تانگ سلطنت نے مشرقی ترک خانات اور مغربی ترک خانات کو فوجی مہموں کے ایک سلسلے میں فتح کیا دوسرا ورک خانات 682 میں ابھر کر سامنے آیا اور یہ 744 تک جاری رہا جب اس کو ترک کے ایک مختلف گروہ اویغوروں نے ختم کردیا۔

  • پہلی ترک خانیت
  • ترک خانیت کی ابتداء ٥٤٦ میں ہوئی جب بومن خاقان نے اویغور اور ٹیل گروپوں کے خلاف ایک اہم مہم کی جس نے اپنے مالکان روران خانات کے خلاف بغاوت کی منصوبہ بندی کی تھی اس خدمت کے لیے اسے توقع کی جاتی تھی کہ وہ روران کی ایک شہزادی سے نوازا جائے گا اس طرح شاہی خاندان میں اس کی شادی ہوگی تاہم روران خوگان یوجیولا اناگوئی نے بومین خاقان کو ایک قاصد بھیجا انہوں نے کہا

‼️آپ میرے غلام ہیں آپ ان الفاظ کو بولنے کی جُرت کیسے کرتے ہیں‼️ گوک ترک بومین خاقان نے اپنے مشترکہ دشمن روران کے خلاف مغربی چینیوں کے خاندان وی سے اتحاد کیا بومین خاقان نے ویوانگ یا جدید ژانگجیاؤ ہیبی کے شمال میں اناگوئی اور اس کی افواج کو شکست دی جنگ میں عمدہ کارکردگی کا مظاہرہ کرنے کے بعد بومین خاقان نے اپنے آپ کو اوٹکان میں نئی خانیت کے الیگ خاقان کا اعلان کیا لیکن ایک سال بعد اس کا انتقال ہوگیا ان کے بیٹے مقن خاقان نے آق ہُن (ہیفتلی) سلطنت خیتن اور قارغیز کو شکست دی بومن خاقان کے بھائی استمی خاقان نے "مغرب کا یبگو" کا لقب اختیار کیا اور ایران کی سلطنت ساسانی سلطنت کے ساتھ مل کر ہیفتالیوں کو شکست دینے اور اسے ختم کرنے کے لئے تعاون کیا جو روران کے اتحادی تھے اس جنگ نے ریشم روڈ پر آشینہ قبیلے کی گرفت کو سخت کر دیا۔ مغرب میں پینونین ایواروں کے ظہور کی تعبیر ایک خانہ بدوش گروہ کے طور پر کی گئی ہے جو گوک ترک کے مغرب کی توسیع سے بھاگ رہے ہیں استعمی خاقان کی مغربی توسیع کی پالیسی نے گوک ترک کو یورپ میں داخل کیا گوک تورک کرچ آبنائے کو عبور کرکے کریمیا میں داخل ہوگئے پانچ سال بعد انہوں نے چین و روس کا محاصرہ کیا ان کا گھڑسوار ٥۹۰ء تک کریمیا کے میدانوں میں گھومتا رہا جہاں تک جنوبی سرحدوں کا تعلق ہے تو وہ آمو دریا کے جنوب میں کھینچ کر کھینچے تھے جس سے آشینہ کو اپنے سابق اتحادی ساسانی سلطنت کے ساتھ تنازعہ میں لایا گیا تھا صدی کے آخر تک باختریا (بیشتر بلخ) کا بیشتر حصہ آشینہ پر انحصار رہا۔

  • خانہ جنگی
  • جیانگنو خانہ بدوش یونین کے خاتمے کے تقریباً ۴۰۰ سال بعد ترکوں کی کمان گوک ترکوں کے ہاتھوں میں آ گئی ۵۸۵ء میں چینی شہنشاہ نے گوک ترک خان ’’اِشبرا خان‘‘ کو لکھے ایک خط میں اسے ایک’’عظیم ترک خان‘‘ کے نام سے مخاطب کیا تھا چینیوں نے ترک قبیلوں کا سوغدیانوں کے ساتھ سِلک روڈ کے راستے تجارت کرنے کا بھی ذکر کیا ہے ۷۳۵ء کی اور ہُن رسم الخط میں بھی تُرک یا تورک الفاظ کا استعمال کیا گیا ہے چوتھے حکمران تسپر خاقان کی موت کے بعد ترک خانیت دو حصوں میں تقسیم ہوگئی اس نے خاقان کے لقب کو مقن کے بیٹے آپا خاقان کو پہچانا تھا لیکن اس کے بجائے اعلی کونسل نے عشبرا خاقان کو مقرر کیا دونوں رہنماؤں کے ارد گرد دھڑے بند ہو گئے اور ترک سوئی اور تانگ چین خاندان کے خلاف کامیابی کے ساتھ لڑے سب سے زیادہ سنجیدہ دعویدار مغرب کا تھا استمی خاقان کا بیٹا تردو خاقان ایک متشدد اور مہتواکانکشی آدمی تھا جس نے اپنے والد کی وفات کے بعد ہی خاقان سے خود کو آزاد قرار دے دیا تھا اب اس نے یہ اعزاز حاصل کرلیا اور شاہی اقتدار اوتکان کی نشست کا دعوی کرنے کے لئے مشرق میں ایک فوج کی قیادت کی اپنی حیثیت کو زیادہ کرنے کے لئے مشرقی خانیت کے عشبرا خاقان نے سوئی کے شہنشاہ یانگ سے درخواست کی تردو خاقان نے سوئی کے دارالحکومت چنگان پر حملہ کیا شہنشاہ یانگڈی کا مطالبہ تھا کہ وہ خانہ جنگی میں مداخلت ختم کرے جوابی کارروائی میں چینی سفارتکاری نے کامیابی کے ساتھ تردو کے ٹائل واسالوں کی بغاوت کو اکسایا جس کی وجہ سے 603 میں تردو کے دور کا خاتمہ ہوا مخالف قبائل میں اویغور اور زیوینٹو بھی شامل تھے

اسلام سے پہلے ترکوں کے مذہبی اعتقاد زیادہ تر شیمینت اور ٹینگری عقائد پر مبنی تھے آج کل زیادہ تر ترک سنی مسلمان ہیں ‼️قدیم زمانے سے ترک قبیلوں اور چینیوں کے درمیان لڑائیاں ہوتی رہتی تھیں چین نے ترک قبیلوں کے حملوں سے بچنے کے لیے عالمی سطح پر مشہور ’’چین کی دیوار‘‘ تعمیر کرائی تھی‼️ آٹھویں صدی کی شروعات میں چینیوں نے ترکوں پر آخری بار ایک بڑا حملہ کیا ترکوں نے خلیفہ بغداد (خلافت عباسیہ بغداد۸؎ )سے عباسی خلیفہ نے خراسان کے گورنر عرب جنرل قطیبہ بن مسلم کو ترکوں کی مدد کے لیے ان کے ساتھ چین کے خلاف جنگ کرنے بھیجا۔ آٹھویں صدی کے وسط میں تقریباً ۷۵۱ء میں عربوں اور ترکوں کی مشترکہ فوج نے’ ’تالاس‘‘ کے میدان میں چینی لشکر کو شکست دے کر کاشغر سے خوجند، یارقند اور تُرفان تک کے چینی قبضے والے ترک قبائلی علاقوں کو آزاد کرالیا قطیبہ بن مسلم کی افواج کاشغر کے شمال میں بھی شاش(تاشقند) تک پہنچی اس فتح کے ساتھ ہی ترکستانی علاقوں میں اسلام کی شروعات ہوئی۔

  • مشرقی ترک خانیت
  • خانہ جنگی نے سلطنت کو مشرقی اور مغربی حصوں میں تقسیم کردیا مشرقی حصہ جو اب بھی اوتکان کی حکومت کا حصہ رہا کرتا ہے سوئی کے مدار میں رہا اور اس نے گوک تررک سلطنت کا نام برقرار رکھا شیبی خان اور الیگ خاقان نے سوئی اور تانگ کے مابین منتقلی کے دوران اپنے سب سے کمزور لمحے پر چین پر حملہ کیا شمالی سرحدی علاقے کے شاہی دورے کے دوران ینمن کمانڈر کے خلاف شیبی خان کے اچانک حملے نے شہنشاہ یانگ کو تقریبا قابو کرلیا لیکن اس کی چینی بیوی شہزادی یچینگ جو پہلے دورے کے دوران مہارانی ژاؤ کے ساتھ اچھا برتاؤ کرتی تھی نے آگے ایک انتباہ بھیجا جس سے شہنشاہ کو اجازت ملی شنکی میں موجودہ دوریان میں کمانڈری سیٹ پر بھاگنے کا وقت ترک فوج نے اس کا محاصرہ کیا لیکن چینی فوج کی کمک نے اور شہزادی یچینگ سے اس کے شوہر کو خانات پر شمالی حملے کے بارے میں ایک غلط اطلاع دی تھی جس کی وجہ سے وہ محاصرے کو اپنی تکمیل سے قبل ہی اٹھا لیا ٦۲٦ء میں الیگ خاقان نے زوان گیٹ واقعے کا فائدہ اٹھایا اور چانگان کی طرف روانہ ہوگئے ایلیگ خاقان اور اس کا لوہا گھڑسوار بیان پل (موجودہ دور میں ژیانگ شانسی میں) کے شمال میں دریائے وی کے کنارے پہنچا لی شمن (بعد میں تانگ کا شہنشاہ تائزونگ) اور الیگ خاقان نے بیان برج پر ایک سفید گھوڑے کی قربانی دے کر اتحاد قائم کیا تانگ نے معاوضے کی ادائیگی کی اور مزید خراج تحسین پیش کرنے کا وعدہ کیا لہذا الیگ خاقان نے اپنے لوہے کے گھڑسوار کو واپس جانے کا حکم دے دیا اسے دریائے وی کا اتحاد یا بیان کیو کا اتحاد کے نام سے جانا جاتا ہے مجموعی طور پر چینی علاقوں پر 67 حملہ آوروں کو ریکارڈ کیا گیا۔

الیگ خاقان کو تانگ کے شہنشاہ تائزونگ کے ساتھ اتحاد کرتے ہوئے ان کے ٹائل واسال قبائل کی بغاوت کے ذریعے نیچے لایا گیا تھا چینی قبائلی اتحاد میں یہ ترک قبائلی اتحاد ہوئ (اویغور) کے نام ہے ینشان کی لڑائی میں لی جِنگ کی کمان میں تانگ فوج نے مشرقی ترک خانات کو الیگ خاقان کی سربراہی میں شکست دی الیگ خاقان ایشبرا شاد کے پاس بھاگ گئیں لیکن ژانگ باوسیانگ کی فوج اشبارہ شاد کے ہیڈکوارٹر کی طرف بڑھی الیگ خاقان کو قیدی بنا کر چانگان بھیج دیا گیا مشرقی ترک خانیت منہدم ہوگیا اور اسے تانگ کے جمی نظام میں شامل کرلیا گیا شہنشاہ تائزونگ نے کہا "دریائے وی میں اپنی بےعزتی کی تلافی کرنا میرے لئے کافی ہے۔

  • مغربی ترک خانیت
  • مغربی خاقان شیگوئی اور تونگ یاغو خاقان نے بازنطینی سلطنت کے ساتھ ساسانی سلطنت کے ساتھ اتحاد قائم کیا اور جنوبی حدود تریم اور آمو دریا کے ساتھ بحالی میں کامیاب ہوگئے ان کا دارالحکومت جدید توکموک سے چھ کلومیٹر جنوب مشرق میں دریائے وادی چو میں سویاب تھا تنگ یابغو جو خزروں اور شہنشاہ ہرکلیئس کی مدد سے ماوارءالنہر پر بڑے پیمانے پر یلغار کا آغاز کیا جس کا اختتام دربینت اور تبلیسی کے قبضے میں ہوا تونگ کے نائب بوری شاد نے گوک ترک کے جنگجو گھڑسواروں کو آرمینیا پر حملہ کرنے کے لئے بھیجا جہاں اس کا جنرل چورپن خان ایک بڑی فارسی فوج کو بھڑکانے میں کامیاب ہوگیا تنگ یابغو کے قتل نے گوک ترکوں کو ماوارءالنہر خالی کرنے پر مجبور کردیا۔

مغربی ترک خانیت کو آشینہ قبیلے کی انتظامی اصلاحات کے ذریعہ جدید بنایا گیا تھا اور اسے اونوق کے نام سے جانا جاتا تھا اس نام سے مراد "دس تیر" ہیں جنھیں خاقان نے اس کے دو حلقہ قبائلی متحد ریاستوں کے پانچ رہنماؤں (سائے) دلو اور نوشیبی کو دیا تھا جن کی زمینوں کو دریائے چوئی نے تقسیم کیا تھا اس تقسیم نے علیحدگی پسندانہ رجحانات کی نشوونما کو فروغ دیا اور جلد ہی پرانا عظیم بلغاریہ نے دلو سردار قبرت کے بیٹوں کے تحت خانیت سے علیحدگی اختیار کرلی تانگ خاندان نے تغیر بیسن کے نخلستان کی ریاستوں خانیت اور اس کے واسالوں کے خلاف مہم چلائی قارا خواجہ کے خلاف تانگ مہم نے مغربی ترکوں کی پسپائی کا آغاز کیا جن کو کراسہر کے خلاف تانگ مہم اور کوچہ کے خلاف تانگ مہم کے دوران شکست کا سامنا کرنا پڑا اور گوک ترکوں نے مغرب کی فتح کا آغاز کیا تانگ کے شہنشاہ تائزونگ کو گوک ترک کے خاقان کا اعلان کیا گیا چین کا شہنشاہ ایران تک سلک روڈ کے ساتھ بالواسطہ حکمرانی نافذ کرسکتا تھا اس نے گوک ترک کے دس تیر (قبائل) پر حکمرانی کے لئے دو خاقان لگائے زنگسیؤوانگ کے لقب سے ٹولو کے پانچ تیروں پر حکمرانی کی گئی تھی جبکہ نوشیپی کے پانچ تیر جیانگجو کے زیر اقتدار تھے پانچ تلو نے جھیل بلکاش کے مشرق میں اس خطہ سے خطرہ کیا جبکہ نوشیپی کے پانچ تیر بحیرہ ارال کے مشرق کی سرزمین سے ملتے ہیں۔ گوک ترک اب چینی لقب لے کر آئے تھے اور اپنی جنگوں میں ان کے شانہ بشانہ لڑے تھے اس میدان میں متعدد حکمرانوں کی خصوصیت تھی کمزور ، منقسم، اور ترشیش کے عروج تک انسی کے زیر نگرانی علاقہ کے تحت مسلسل چھوٹی چھوٹی جنگوں میں مصروف رہے۔

التریش خاقان اور اس کے بھائی کاپاگان خاقان نے تانگ خاندان کے خلاف بغاوت کی اور دوسری ترک خانیت قائم کی اگلی دہائیوں کے دوران انہوں نے چین کی عظیم دیوار سے پرے اسٹیٹس پر مستقل طور پر کنٹرول حاصل کیا ترک سمرقند تک جنوب کی حد تک پھیل چکے تھے اور ماوارءالنہر پر عرب کنٹرول کو خطرہ تھا گوک ترک کی لڑائیوں کے سلسلے میں امویہ خلافت کے ساتھ تصادم ہوا لیکن عرب باشندے ابھر کر جیتنے والوں کے طور پر سامنے آئے دریائے اورخون کے بالائی حصوں میں اوتوکین پر مرکوز تھا اس شائستگی کو مورخین نے "آشینہ قبیل اور صغدیانیوں کا مشترکہ کاروبار قرار دیا جس میں بڑی تعداد میں چینی سرکاری ملازم بھی شامل تھے" التیرش کا بیٹا بلج خاقان بھی ایک مضبوط رہنما تھا جس کے اعمال اورخون کے نوشتہ جات میں درج تھے ان کی وفات کے بعد دوسرا ترک خانات زوال کا شکار ہوگیا گوک ترک بالآخر اندرونی بحرانوں کی ایک سیریز کا شکار ہوگئے اور چینی مہمات کی تجدید کی جب اویغوروں کے قتلغ اول خلج خاقان نے اپنے آپ کو قارلوق اور باسملز سے اتحاد کیا تو گوک ترکوں کی طاقت بہت ختم ہوگئی قتلغ نے آکتیگین کو پکڑ لیا اور آخری گوک ترک خاقان اوزمیش خاقان نے اس کا سر قلم کیا جس کے سر کو تانگ دربار بھیجا گیا تھا کچھ سالوں کے عرصے میں اویغور ترکوں نے اندرونی ایشیاء میں مہارت حاصل کرلی اور اویغور خانیت قائم کی گوک ترکوں کی حکومت کرولتائی خانوں کی ایک سیاسی اور عسکری کونسل اور دوسرے اعلٰی رہنماؤں جیسے اقصال پر تھی آشینہ قبیلے سے تعلق رکھنے والے ترک عارضی کنگ ایک خودمختار کرولتائی کے ماتحت تھے گوک ترک اور دیگر قدیم ترک لوگ بنیادی طور پر ٹینگری ازم کے پیروکار تھے جو آسمانی دیوتا ٹینگری کی پوجا کرتے تھے خانیت نے بدھ مذہب سے تعلق رکھنے والے مشتری حاصل کی جسے ٹینگرزم میں شامل کیا گیا تھا خاقانات کے زوال کے بعد بہت سارے مہاجرین وسطی ایشیاء مشرق وسطی اور یورپ میں آباد ہوگئے اور اسلامی عقیدے کو اپنایا۔