بہاؤ الدین محمّد ابن حسن ابن اسفندیار (وفات: 1216ء) جن کو ابن اسفندیار کے نام سے بھی جانا جاتا ہے۔تیرہویں صدی کے ایک ایرانی مورخ تھے جو ایران کے طبرستان علاقے سے تعلّق رکھتے تھے۔ ابن اسفندیار نے 'تاریخ طبرستان' نام کی کتاب لکھی ہے جو ان کے اپنے آبائی صوبے طبرستان کی تاریخ ہے۔[2]

ابن اسفندیار
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1210[1]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آمل  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ وفات سنہ 1216 (5–6 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ مؤرخ  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ابن اسفندیار کی زندگی کے بارے میں جو کچھ کم ہی معلوم ہے وہ ان کی کتاب کے تعارف سے ہوتا ہے۔

زندگیترميم

ابتدائی دور میں ابن اسفندیار طبرستان کے آبائی خاندان باوندیان‎ کے عدالت میں ایک رکن تھے اور اردشیر اول (وفات 1206ء) کی سرپرستی میں رہے۔[3]

حوالہ جاتترميم

  1. ^ ا ب وی آئی اے ایف - آئی ڈی: https://viaf.org/viaf/65921524/ — اخذ شدہ بتاریخ: 25 مئی 2018 — مصنف: او سی ایل سی — ناشر: او سی ایل سی
  2. Islamic desk reference. Donzel, E. J. van. Leiden: E.J. Brill. 1994. صفحات pp. 151. ISBN 90-04-09738-4. OCLC 30914626. 
  3. "An Abridged Translation of the History of Tabaristan".