طبیعیات میں کسی جسم کی وقت کے لحاظ سے سمتار میں تبدیلی کی شرح کو اسراع (Acceleration) کہتے ہیں۔ نیوٹن کے دوسرے قانون کی رُو سے کسی جسم کا اسراع اس پر عمل کرنے والی تمام قوتوں کا نتیجہ ہے۔ اسراع کی اکائی میٹر فی مربع سیکنڈ ہے۔ اسراع ایک سمتیہ(vector) مقدار ہے۔ (یہ مقدار اور سمت رکھتا ہے) اور یہ متوازی الاضلاع قانون کے مطابق جمع ہے۔ جسم پر عمل کرنے والی قوت کا سمتیہ اور جسم کے اسراع کا سمتیہ کی سمت ایک ہی ہوتی ہے اور اس کی مقدار اسراع کی مقدار کے متناسب ہوتی ہے۔ جس میں جسم کی کیمیت (عددیہ (Scaler) مقدار کی حیثیت سے) تناسبی مستقل ہے۔

تعریفترميم

ولاسٹی کی تبدیلی فی اکائی وقت کو اسراع کہتے ہیں۔

یا

سمتار میں تبدیلی کی شرح کو اسراع کہتے ہیں۔

طبیعی فطرتترميم

اسراع ایک سمتیہ (vector) مقدار ہے۔

اوسط اسراعترميم

کسی جسم کا وقت کے کسی دورانیے میں اوسط اسراع اس کے سمتار میں تبدیلی کی شرح   کو وقت کے دورانیے   پر تقسیم کر کے حاصل کیا جاتا ہے۔ ریاضیاتی طور پر

 

حسابی شکلترميم

اسراع کی سادہ ترین حسابی مساوات حرکت کے دوسرے قانون سے حاصل کی جا سکتی ہے جس کی شکل یہ ہو گی:

 

یہاں a مراد اسراع، F سے مراد قوت اور m سے مراد کمیت ہے۔

اکائیاںترميم

اسراع کی SI اکائی میٹر فی مربع سیکنڈ ہے جس کو لکھنے کا طریقہ یہ ہے :

 

مخصوص معملاتترميم

یکساں اسراعترميم

یکساں یا مستقل اسراع (uniform acceleration) حرکت کی وہ قسم ہے جس میں کسی جسم کے سمتار میں تبدیلی کی شرح وقت کے مختلف وقفوں میں یکساں ہو۔