بر اعظم افریقہ کا ملک انگولا مسلم اقلیتی ملک کہلاتا ہے۔

مذہبترميم

اندازہً ملک میں 1٫000 سے زیادہ مختلف مسیحی گروہ موجود ہیں۔ ان میں نصف سے زیادہ تعداد رومن کیتھولک ہیں۔ مغربی افریقہ اور دیگر ممالک سے آنے والے افراد کی زیادہ تر تعداد مسلمان ہے جو سنی العقیدہ ہیں۔ تاہم ان کی تعداد کل آبادی کا تقریباً 1 فیصد ہے۔ سعودی عرب اس کوشش میں ہے کہ اس کے فقہہ سے تعلق رکھنے و الے افراد کی تعداد بڑھ جائے۔ لادین افراد کی تعداد بھی قابلِ ذکر ہے۔ قدیم افریقی مذاہب بھی کسی نہ کسی شکل میں موجود ہیں۔[1]

اسلام کی آمدترميم

انگولا میں اسلام کو ماننے والوں کی تعداد 80 ہزار سے 90 ہزار کے درمیان ہے جس کی وجہ سے یہ مسلم اقلیت والا ملک کہلاتا ہے ۔[2] مسلمانوں کی یہ تعداد مقامی ہونے کے ساتھ ساتھ مشرقی افریقہ سے ہجرت کر نے والے اور لبنانی نسل کے لوگوں پر مشتمل ہے۔ انگولائی مسلمانوں کے قوانین 'سپریم کاؤنسل آف انگولائی مسلم آف لوانڈا' کے زیر نگرانی نافذ کیے جاتے ہیں ۔[3]

حوالہ جاتترميم

  1. انگولہ : مذہب
  2. International Religious Freedom Report 2008 - Angola
  3. Oyebade, Adebayo O. Culture And Customs of Angola, 2006. Pages 45-46.
  یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔