ثناء محمود پاکستان کی خواتین کی قومی باسکٹ بال ٹیم اور ویمنز نیشنل فٹ بال ٹیم کی سابق کپتان ہیں[1][2]

ثناء محمود
معلومات شخصیت
عملی زندگی
مادر علمی جامعۂ بحریہ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ایسوسی ایشن فٹ بال کھلاڑی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کھیل ایسوسی ایشن فٹ بال  ویکی ڈیٹا پر (P641) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
 فل برائٹ اسکالرشپ  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ذاتی زندگی ترمیم

ثناء اسلام آباد میں پیدا ہوئیں۔ ثناء کے والدین نے اپنے بچوں کو ٹیلی ویژن پر زیادہ وقت گزارنے کی حوصلہ شکنی کی اور چاہتے تھے کہ وہ زیادہ وقت باہر گزاریں۔ اس سے ثنا کو کھیلوں اور بیرونی سرگرمیوں میں بہت زیادہ نمائش ملی اور بہت چھوٹی عمر ہی سے ثنا کھیلوں کی خواتین بننا چاہتی تھیں۔ ثنا کی عمر 17 سال تھی جب اس نے باسکٹ بال اور فٹ بال میں قومی سطح کے پہلے ٹورنامنٹ کھیلے۔

تعلیم ترمیم

ثناء نے اپنی بیچلر بحریہ یونیورسٹی ، اسلام آباد سے کی تھی۔ بعد ازاں اس نے فلبرائٹ اسکالرشپ حاصل کی اور اوہائیو یونیورسٹی سے بین الاقوامی ترقی میں ماسٹرز کی تعلیم حاصل کرنے گئی۔[3][4]

کیریئر ترمیم

ثناء نے اپنا پہلا قومی کھیل 17 سال کی عمر میں کھیلا تھا۔ انھوں نے ینگ رائزنگ اسٹارز کی آزمائشوں کے بارے میں سنا تھا اور اپنی قسمت آزمانے کا فیصلہ کیا تھا۔ وہ 70 میں سے 35 کو منتخب لڑکیوں میں شامل تھیں۔ جلد ہی ثناء غیاث الدین بلوچ کے تخلیق کردہ ینگ رائزنگ اسٹارز فٹ بال کلب میں اپنی ٹیم کی کپتان بن گئیں۔ ثناء نے 2008 ، 2010 ، 2011 ، 2012 ، 2013 میں وائی آر ایس کے ساتھ یہ اعزاز جیتا تھا ۔ [5]وہ پاکستان نیشنل ویمن فٹ بال ٹیم (2010 - 2012) کی کپتان تھیں۔وہ 2010 میں اپنے پہلے بین الاقوامی دورے پر گئیں جب وہ پہلی سیف ایف ویمن میں گئیں۔ بنگلہ دیش میں فٹ بال چیمپیئن شپ جیت کر سیمی فائنل میں جگہ بنالی۔[6][7][8][9]

ثناء نے اپنی یونیورسٹی کے سالوں میں باسکٹ بال اور فٹ بال کھیلنا شروع کیا۔ ثناء پاکستان میں پہلی باسکٹ بال قومی ٹیم کی کپتان بن گئیں۔ کیریئر کے دوران ان کی ٹیم افغانستان کے خلاف جیت گئی اور ثنا میچ میں سب سے زیادہ اسکورر بنی۔ ثناء نے جنوبی ایشین گیمز (ہندوستان ، 2016) اور اسلامک گیمز (آذربائیجان ، 2017) جیسے بین الاقوامی مقابلوں میں حصہ لیا۔ ثناء نے اپنے کیریئر میں 32 ویں قومی کھیلوں میں باسکٹ بال میں طلائی تمغا جیتا ہے۔ انھوں نے 2015 کی قومی چیمپیئنشپ میں سب سے زیادہ قابل قدر پلیئر کا ایوارڈ جیتا تھا۔ ثنا نے ایچ ای سی مقابلے میں سولہویں قومی باسکٹ بال چیمپینشپ میں سلور میڈل بھی جیتا ہے۔[10][11][12] [13] [14][15]

ثناء اسلام آباد باسکٹ بال ایسوسی ایشن میں اعزازی منصب پر فائز ہیں جہاں وہ خواتین کے باسکٹ بال کو فروغ دینے میں مدد کرتی ہیں۔[16][17][18][19][20]

ثناء نے انسان دوست اور ترقیاتی شعبے میں بھی کام کیا ہے۔[21][22] سن 2019 میں ، ثنا نے پاکستان-یو ایس کی جانب سے ایلومنی سمال گرانٹ (ASG) جیتا تھا۔ ایلومنی نیٹ ورک (پی یو اے این) اور پاکستان میں امریکی مشن اور اس نے خواتین باسکٹ بال کی ترقی کے پروگرام وی گوٹ گیم کے ایک پروجیکٹ کی قیادت کی۔[23] ثنا نے مسلم ایڈ میں ٹریننگ آفیسر کی حیثیت سے بھی کام کیا ہے ، برطانیہ میں قائم ایک بین الاقوامی این جی او ثنا مسلم ایڈ میں کام کرتی ہے خواتین اور لڑکیوں کی تربیت کا اہتمام کرنا۔ ثنا نے گرلز فٹ بال کو فروغ دینے کے لیے ، ٹوٹل فٹ بال کے ساتھ بھی کام کیا ہے۔[24][25][26]

ثنا بچوں کو کھیلوں کی تعلیم دینے والی تنظیم رائٹ ٹو پلے میں پروجیکٹ مینیجر بھی ہیں۔[27][28][29][30][31]

حوالہ جات ترمیم

  1. "Conversation with Sana Mahmud, former captain of the Pakistan Women's Soccer Team"۔ The Daily (بزبان انگریزی)۔ 2019-03-22۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  2. "Pakistani athlete criticizes ad featuring Momina Mustehsan"۔ www.geo.tv (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  3. Rehan Ahmed۔ "Meet Sana Mahmud, The Pakistani Sportswoman Who Wants To Do It All" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  4. "Sana Mahmud | The USEFP Gazette" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  5. pakistantoday۔ "National Women Team" 
  6. "Football: YRC thrash Balochistan 9-0"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2011-09-23۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  7. Editor (2016-04-13)۔ "Women play football to celebrate Global Day of Sport for Development and Peace"۔ Islamabad Scene (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  8. "sana mahmud — Reading Room"۔ Fulbright Alumni (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  9. "Sana Mahmud: Former Pakistan Women's football and basketball captain"۔ Sportageous (بزبان انگریزی)۔ 2020-02-23۔ 19 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  10. "Sana's page"۔ JustGiving (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  11. "Mini Basketball Convention attendee, Sana Mahmud develops Women and Youth Programs in Pakistan"۔ News Break (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 [مردہ ربط]
  12. Agencies (2012-09-04)۔ "Pakistan's women team off to Sri Lanka for SAFF Championship"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  13. "Girls' basketball, leadership workshop held"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 2019-06-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  14. "Pakistan women footballers criticise national federation"۔ Daily Times (بزبان انگریزی)۔ 2018-06-05۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  15. "SAFF Women's Championship 2012 kicks-off on September 7th"۔ Womens Soccer United (بزبان انگریزی)۔ 2012-09-05۔ 14 مئی 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  16. "Sport in Africa and the Global South - Ten Years Later, What's Next? April 10-12, 2014 - Ohio University"۔ www.ohio.edu۔ 09 ستمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  17. "Empower Women - Profile"۔ EmpowerWomen (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  18. "Pakistani Sports Visitor and Fulbright Alumna Wins on and off the Field"۔ International Exchange Alumni (بزبان انگریزی)۔ 2018-02-16۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  19. "Pakistan"۔ Goal Click (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  20. "Top of the game: Pakistani women inspire others to take up sports"۔ Arab News (بزبان انگریزی)۔ 2019-09-05۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  21. "Pakistan's woman soccer player speaks this on harassment, gender-based-violence"۔ Glibs Quick (بزبان انگریزی)۔ 09 ستمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  22. "U-Report Encourages Menstrual Health In Pakistan"۔ www.unicef.org (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  23. diyawfc۔ "American delegation visit"۔ 09 ستمبر 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  24. PUAN Editor (2020-01-16)۔ "We Got Game – An Initiative for Women and Youth Basketball Development by Sana Mahmud"۔ Pakistan-U.S. Alumni Network (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  25. Zara Khan 4 months، 3 Weeks (2020-07-11)۔ "Mini Basketball Convention attendee, Sana Mahmud develops Women and Youth Programs in Pakistan"۔ Mashable Pakistan (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  26. "Slam Dunk: The State of Basketball in Pakistan"۔ Red Bull (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  27. "Mini Basketball Convention attendee Sana Mahmud develops Women and Youth programs in Pakistan"۔ FIBA.basketball (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  28. athletesportsmagazine۔ "Sana Mahmud"  [مردہ ربط]
  29. "Sana Mahmud | sportanddev.org"۔ www.sportanddev.org۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  30. "Sana Mahmud - Project Officer - Right To Play | Business Profile"۔ Apollo.io۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020 
  31. "Look into our annual reports. We are proud of our impact – Women Win"۔ GRLS (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 05 دسمبر 2020