اسلام آباد

پاکستان کا دار الحکومت
اس صفحہ کو محفوظ کر دیا گیا ہے؛ استفسارِ وجوہات اور متعلقہ گفتگو کے لیے تبادلۂ خیال کا صفحہ استعمال کریں۔

اسلام آباد (انگریزی: Islamabad), (ہندی: इस्लामबाद‎، (بنگالی: ইসলামাবাদ)‏)،[2] پاکستان کا دار الحکومت ہے۔ اسلام آباد کا پرانا نام راج شاہی تھا۔[3] 1958ء میں اس وقت کے صدر ایوب خان[4] نے راولپنڈی کے قریب اس جگہ کا انتخاب کر کے یہاں نیا شہر تعمیر کرنے کا حکم دیا تھا۔ اس نئے دار الحکومت کے لیے زمین کا انتظام کیا گیا جس کے لیے صوبہ خیبر پختونخوا اور صوبہ پنجاب سے زمین حاصل کی گئی۔ عارضی طور پر دار الحکومت کو راولپنڈی منتقل کر دیا گیا اور 1960ء میں اسلام آباد میں ترقیاتی کاموں کا آغاز شروع ہوا۔ شہر کی طرز تعمیر کا زیادہ تر کام یونانی شہری منصوبہ دان کانسٹینٹ ٹینس اپوستولس ڈوکسڈز[5][6] نے کیا، جس میں اس نے اسے آٹھ زونز میں تقسیم کیا۔ انتظامی، ڈپلومیٹک انکلیو، رہائشی علاقے، تعلیمی اور صنعتی شعبے، تجارتی علاقوں کے ساتھ ساتھ اسلام آباد میٹروپولیٹن کارپوریشن کے زیر انتظام دیہی اور سبز علاقے جو کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے تعاون سے ہیں۔ 1968ء میں دار الحکومت کو اسلام آباد منتقل کر دیا گیا۔ 1958ء تک پاکستان کا دار الحکومت کراچی رہا۔[7][8][9] کراچی کی تیزی سے بڑھتی آبادی اور معاشیات کی وجہ سے دار الحکومت کو کسی دوسرے شہر منتقل کرنے کا سوچا گیا۔ اسلام آباد اپنے اعلیٰ معیار زندگی، حفاظت، صفائی ستھرائی اور وافر ہریالی کے لیے قابل ذکر ہے۔[10] اسلام آباد مارگلہ ہل نیشنل پارک اور شکر پڑياں سمیت متعدد پارکوں اور جنگلات کی موجودگی کے لیے جانا جاتا ہے۔ یہ پاکستان کا نواں سب سے زیادہ آبادی والا شہر ہے، جس کی آبادی 1.2 ملین سے زیادہ ہے۔ فیصل مسجد جو دنیا کی پانچویں سب سے بڑی مسجد ہے اسلام آباد میں تعمیر کی گئی۔ دیگراہم مقامات میں پاکستان مونومنٹ اور ڈیموکریسی اسکوائر شامل ہیں۔[11][12] دار الحکومت بننے کے بعد اسلام آباد نے پاکستان بھر سے لوگوں کو اپنی طرف متوجہ کیا اور دار الحکومت کے طور پر اس شہر نے کئی اہم اجلاسوں کی میزبانی بھی کی۔ [6][13] [14]

اسلام آباد
(انگریزی میں:- Islamabad)
(عربی میں:- إسلام آباد)

منسوب بنام اسلام   ویکی ڈیٹا پر (P138) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تاریخ تاسیس 1960  ویکی ڈیٹا پر (P571) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
انتظامی تقسیم
ملک پاکستان   ویکی ڈیٹا پر (P17) کی خاصیت میں تبدیلی کریں[1]
دار الحکومت برائے
پاکستان (1966–)  ویکی ڈیٹا پر (P1376) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
تقسیم اعلیٰ اسلام آباد وفاقی دارالحکومت علاقہ   ویکی ڈیٹا پر (P131) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جغرافیائی خصوصیات
متناسقات 33.282, 73.123
رقبہ 906 کلومیٹر کم²
بلندی 540 میٹرز (1,770 فٹ)
آبادی
کل آبادی 2,014,825 --- (2017ء کی مردم شماری کے مطابق)
مزید معلومات
جڑواں شہر
اوقات متناسق عالمی وقت+05:00 ،  متناسق عالمی وقت+06:00 (روشنیروز بچتی وقت )،  پاکستان کا معیاری وقت   ویکی ڈیٹا پر (P421) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سرکاری زبان اردو، انگریزی
رمزِ ڈاک
44000  ویکی ڈیٹا پر (P281) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
فون کوڈ 051  ویکی ڈیٹا پر (P473) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قابل ذکر
باضابطہ ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  ویکی ڈیٹا پر (P856) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جیو رمز 1176615  ویکی ڈیٹا پر (P1566) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
  ویکی ڈیٹا پر (P935) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Map

اسلام آباد میں 20 یونیورسٹیاں ہیں جن میں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی، وفاقی اردو یونیورسٹی، علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اور قائداعظم یونیورسٹی شامل ہیں۔ [15] اسلام آباد پاکستان کے محفوظ ترین شہروں میں سے ایک ہے اور اس میں تقریباً 2000 فعال سی سی ٹی وی کیمروں کا نظام ہے۔ [16][17]

اسلام آباد کی وجہ تسمیہ ترمیم

اسلام آباد نام کا مطلب اسلام کا شہر ہے۔ یہ دو الفاظ سے ماخوذ ہے اسلام اور آباد۔ اسلام سے مراد مذہب اسلام، جو پاکستان کا ریاستی مذہب ہے اور آباد ایک فارسی لاحقہ ہے جس کا مطلب کاشت کی جگہ ہے، جو آباد جگہ یا شہر کی طرف اشارہ کرتا ہے۔ اسلام آباد کا نام عارف والا کے ایک اسکول ٹیچر قاضی عبدالرحمن امرتسری نے تجویز کیا تھا۔[18][19]

تاریخ ترمیم

اسلام آباد، شمالی پنجاب کے علاقے پوٹھوہار کے سطح مرتفع پر واقع ہے اور اسے ایشیا میں انسانی آبادکاری کے ابتدائی مقامات میں سے ایک سمجھا جاتا ہے۔ دریائے سواں سے برآمد ہونے والے ابتدائی پتھر سے برفانی دور میں ابتدائی انسانوں کی کوششوں کی گواہی دیتے ہیں۔ ماقبل تاریخ سے متعلق مٹی کے برتن اور برتنوں کی اشیاء ملی ہیں۔ [20][21] ظہیر الدین بابر، چنگیز خان، تیمور اور احمد شاہ درانی نے برصغیر پاک و ہند پر اپنے حملوں کے دوران میں اس خطے کو عبور کیا۔ 2015–16 ء میں وفاقی محکمہ آثار قدیمہ نے ثقافتی ورثے کے لیے قومی فنڈ کی مالی مدد سے ابتدائی آثار قدیمہ کی کھدائی کی جس میں شاہ اللہ دتہ غاروں کے قریب بان فقیراں میں بدھسٹ اسٹوپا کی باقیات کا پتہ چلا، جو دوسری سے پانچویں صدی عیسوی تک کی تاریخ کے نشانات ہیں۔[22][23] اسلام آباد 10 ویں صدی سے لے کر جدید دور تک کی تہذیب اور فن تعمیر پر قائم ہے۔ اسلام آباد کے تاریخی نشانات ہندو تہذیب کی عکاسی کرتے ہیں۔ سید پور گاؤں جو 16 ویں صدی میں آباد ہوا تھا اسلام آباد میں واقع ہے جو ہندوؤں کا ایک مقدس مقام ہے یہاں ایک مندر بھی ہے جہاں ہندو مغل کمانڈر پوجا کیا کرتے تھے۔[24] بری امام سرکار کا مزار مغل شہنشاہ اورنگزیب عالمگیر نے تعمیر کروایا تھا۔[25][26]

باغ کلاں ترمیم

اسلام آباد کی تاریخ میں باغ کلاں[27] نامی گاؤں بہت اہمیت کا حامل ہے۔ اسلام آباد کی شروعات اسی گاؤں سے ہوئی۔ اسے باگاں بھی کہا جاتا تھا۔ اسی گاؤں میں سیکٹر جی سکس آباد ہوا۔ یہاں اسلام آباد کا سب سے پہلا کمرشل زون تعمیر کیا گیا۔ سرکاری ملازمین کے لیے سب سے پہلے رہائشی کوارٹرز بھی اسی گاؤں میں تعمیر کیے گئے۔ ان ملازمین میں بڑی تعداد مشرقی پاکستان کے لوگوں کی تھی۔ ان میں سے عبد الواحد کے ہاں بیٹی پیدا ہوئی۔ والدین نے بیٹی کا نام ”آب پارہ “ رکھا۔ [28][29] سی ڈی اے نے یہ مارکیٹ اسی سے منسوب کر دی جسے آج ہم آبپارہ مارکیٹ کہتے ہیں۔[30] انہی کوارٹرز میں اسلام آباد کا پہلا پولیس اسٹیشن اور پہلا بنک قائم کیا گیا تھا۔ باغ کلاں کا رقبہ 698 ایکڑ تھا اور اس کی آبادی 663 افراد پر مشتمل تھی۔ باگاں بعد میں دار الحکومت بن گیا مگر 1961ء کی مردم شماری تک یہ جی سکس نہیں، باغ کلاں تھا۔[31][32]

اسلام آباد کے پرانے دیہات ترمیم

اسلام آباد کو مملکتِ خداداد پاکستان کا دار الحکومت بنانے کا اعلان 1959ء میں ہوا۔ اس سے قبل اس سرزمین پر کم وبیش 160 دیہات آباد تھے۔ شہر کی تعمیر کے دوران مارگلہ کے دامن میں واقع بہت سے دیہات جیسے نورپور شاہاں، شاہدرہ، سیدپور اور گولڑہ شریف کو اسلام آباد کا دیہی علاقہ قرار دے کر ان کی اصل شکل کو برقرار رکھا گیا ہے۔ اس دیہی علاقے کا مجموعی رقبہ 38906 مربع کلومیٹر ہے۔ سیدپور اور شاہ اللہ دتہ قدیم ترین دیہات ہیں۔ سیدپور سے منسلک قدیمی آبادیوں میں چک، بیچو، میرہ، ٹیمبا، بڑ، جنڈالہ ہیلاں شامل تھے، ٹیمبا میں پاکستان کی سب سے بڑی مسجد فیصل مسجد قائم ہے موجودہ ایف 5 کا علاقہ ہے۔ سیکٹر ای سیون میں ڈھوک جیون نام کی بستی تھی۔ سیکٹر جی 5 میں کٹاریاں گاؤں آباد تھا آج کل یہاں وزارت خارجہ کے دفاتر ہیں۔ چڑیا گھر کے سامنے سیکٹر ایف 6 میں بانیاں نام کی بستی تھی۔ راولپنڈی گزیٹئر 1884ء[33] کے مطابق ضلع راولپنڈی کے 109 دیہات کے مالکان گوجر تھے اور 62 دیہات گکھڑوں کی ملکیت تھے۔ سیکٹر جی 10 کا پرانا نام ٹھٹھہ گوجراں تھا۔ اسلام آباد سے بہارہ کہو جاتے ہوئے مری روڈ پر ملپور کی قدیم بستی واقع ہے۔ یہ گاؤں راول ڈیم کی حدود کے اندر واقع تھا۔ بعد ازاں اسے نیو ملپور کے نام سے بسایا گیا۔ موجودہ کنونشن سنٹر کے قریب ڈھوکری نام کا چھوٹا سا گاؤں آباد تھا۔ نور پور شاہاں حضرت شاہ عبدالطیف کی آمد سے قبل چور پور کے نام سے مشہور تھا۔ راول ڈیم جسے کورنگ نالہ پر تعمیر کیا گیا ہے یہاں کئی گاؤں آباد تھے جن میں پھگڑیل، شکراہ، کماگری، کھڑپن اور مچھریالاں شامل تھے۔

فیصل مسجد کے مغرب میں پہاڑوں پر کلنجر[34] نام کی بستی آباد تھی۔ موجودہ جناح سپر مارکیٹ کے قریب روپڑاں نام کی بستی تھی۔ موضع تمیر، کوری، کرور، کرپا بند بیگوال چارہان اور میرا بیگوال دھنیال قبیلے کے مشہور دیہات تھے۔[35]

جغرافیہ ترمیم

 
سطح مرتفع پوٹھوہار کا علاقہ

اسلام آباد سطح مرتفع پوٹھوہار کے شمالی کنارے اور مارگلہ کی پہاڑیوں کے دامن میں 33.43°N 73.04°E پر واقع ہے۔ اس کی بلندی 540 میٹر (1,770 فٹ) ہے۔ جدید دار الحکومت اور راولپنڈی شہر کو ملا کر انھیں عام طور پر جڑواں شہر کہا جاتا ہے۔ شہر کے شمال مشرق میں مری کا نوآبادیاتی دور کا ہل اسٹیشن واقع ہے اور شمال میں خیبر پختونخوا کا ضلع ہری پور واقع ہے۔ کہوٹہ جنوب مشرق میں، شمال مغرب میں ٹیکسلا، واہ کینٹ اور ضلع اٹک۔ جنوب مشرق میں گوجر خان، روات اور مندرہ۔ اور جنوب اور جنوب مغرب میں راولپنڈی کا شہر واقع ہے۔ اسلام آباد مظفرآباد سے 120 کلومیٹر (75 میل)، پشاور سے 185 کلومیٹر (115 میل) اور لاہور سے 295 کلومیٹر (183 میل) سے دور ہے۔

اسلام آباد شہر کا رقبہ 906 مربع کلومیٹر (350 مربع میل) ہے۔ مزید 2,717 مربع کلومیٹر (1,049 مربع میل) رقبہ مخصوص علاقے کے نام سے جانا جاتا ہے، جس میں شمال اور شمال مشرق میں مارگلہ پہاڑیاں ہیں۔ شہر کا جنوبی حصہ ایک غیر منقسم میدان ہے۔ یہ دریائے کورنگ سے نکلتا ہے، جس پر راول ڈیم واقع ہے۔[36]

سیکٹرز ترمیم

 
ضعلع اسلام آباد کا نقشہ

سیکٹر اے، بی اور سی ابھی تک ترقی یافتہ نہیں ہیں۔ ڈی سیریز کے سات سیکٹر ہیں (ڈی-11 سے ڈی-17)، جن میں سے صرف ڈی-12 مکمل طور پر تیار ہے۔ ای سیکٹرز ای-7 سے ای -17تک ہیں۔ شہر کے نظرثانی شدہ ماسٹر پلان میں سی ڈی اے نے سیکٹر ای-14 میں فاطمہ جناح پارک کی طرز پر پارک تیار کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ سیکٹر ای-8 اور ای-9 میں بحریہ یونیورسٹی، ایئر یونیورسٹی اور نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی کے کیمپس شامل ہیں۔[37][38][39] ایف اور جی کے سیکٹرز سب سے زیادہ ترقی یافتہ ہیں۔ ایف سیکٹر ز میں ایف -5 سے ایف-17 تک سیکٹرز پر مشتمل ہے۔[40][41] ایف-5 اسلام آباد میں سافٹ ویئر انڈسٹری کے لیے ہے اور یہاں دو سافٹ ویئر ٹیکنالوجی پارکس واقع ہیں۔ ایف-9 سیکٹر مکمل طور پر فاطمہ جناح پارک پر مشتمل ہے۔ سینٹورس کمپلیکس ایف-8 سیکٹر کا اہم تجارتی مرکز ہے۔ جی سیکٹرز کو جی-5 سے جی-17 تک نمبر دیا گیا ہے۔ کچھ اہم مقامات میں جی-5 میں جناح کنونشن سینٹر اور سرینا ہوٹل، جی-6[42] میں لال مسجد اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز، دار الحکومت کا سب سے بڑا میڈیکل کمپلیکس ہے جو جی-8 میں واقع ہے اور جی-9 میں کراچی کمپنی کا شاپنگ سینٹر ہے۔[43] ایچ سیریز کو ایچ-8 سے ایچ-17 تک نمبر دیا گیا ہے۔ ایچ کے تمام سیکٹرز تعلیمی اور صحت کے اداروں کے لیے وقف ہیں۔ نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی سیکٹر ایچ-12 کے ایک بڑے حصے پر محیط ہے۔ آئی سیکٹرز کو آئی -8 سے آئی -18 تک نمبر دیا گیا ہے۔ آئی -8 سیکٹر رہائشی علاقے پر مشتمل ہے۔ آئی -9 کے دو سب سیکٹر اور آئی -10 کا ایک سب سیکٹر صنعتی علاقوں پر مشتمل ہے۔ سی ڈی اے سیکٹر آئی -18 میں اسلام آباد ریلوے اسٹیشن اور سیکٹر آئی -17 میں انڈسٹریل سٹی قائم کر رہا ہے۔ زون III بنیادی طور پر مارگلہ ہلز اور مارگلہ ہلز نیشنل پارک پر مشتمل ہے۔ راول جھیل اسی زون میں ہے۔ زون IV اور V اسلام آباد پارک اور شہر کے دیہی علاقوں پر مشتمل ہے۔ دریائے سواں زون V کے ذریعے شہر میں بہتا ہے۔[44]

اسلام آباد کے سیکٹرز کی فہرست ترمیم

یہ تمام منصوبہ بند اور تعمیر شدہ سیکٹروں کی فہرست ہے۔[43][45]

آبادیات ترمیم

آبادی ترمیم

تاریخی آبادی
سالآبادی±%
1972 77,000—    
1981 204,000+164.9%
1998 529,180+159.4%
2017 2,014,825+280.7%
ماخذ: [46][47]

2017ء کی مردم شماری[48] کے مطابق اسلام آباد کی آبادی ایک ملین سے متجاوز ہے پاکستان کی آبادی کی مردم شماری تنظیم کے ایک اندازے کے مطابق اسلام آباد کی آبادی 2012ء میں تقریباً 2 لاکھ تک پہنچ چکی تھی جبکہ 1998ء کی مردم شماری کے مطابق اسلام آباد کی آبادی 805235 تھی۔ اردو زبان ملک کی قومی و سرکاری زبان ہونے کی وجہ سے شہر کے اندر بولی جاتی ہے جبکہ انگریزی بھی وسیع پیمانے پر استعمال کی جاتی ہے۔ شہر میں دیگر بولی جانے والی زبانوں میں پنجابی، پشتو اور پوٹھوہاری میں شامل ہیں۔ آبادی کی اکثریت کی مادری زبان پنجابی ہے جو 68 فیصد ہے۔ آبادی کا 10 فیصد پشتو بولنے والے ہیں اور 8 فیصد دیگر زبانے بولنے والے ہیں۔ تقریباً 15 فیصد سندھی زبان بولنے والے ہیں۔ 20 فیصد بلوچی زبان بولنے والے ہیں۔ شہر کی آبادی کے لوگوں میں زیادہ پنجاب سے تعلق رکھنے والوں کی ہے۔ [46]

مذہب ترمیم

اسلام آباد میں مذاہب (2017)
اسلام
  
95.43%
مسیحی
  
4.34%
ہندو
  
0.04%
دیگر
  
0.19%

اسلام، اسلام آباد کا سب سے بڑا مذہب ہے، جس کی 95.43% آبادی اس کی پیروی کرتی ہے۔ عیسائیت دوسرا سب سے بڑا مذہب ہے جس کی 4.34 فیصد آبادی پیروی کرتی ہے۔ 2017ء کی مردم شماری کے مطابق 0.04% آبادی ہندو مذہب کی پیروی کرتی ہے۔[49][8][50]

زبانیں ترمیم



 

اسلام آباد میں زبانیں بولنے والوں کی تعداد۔[51]

  پشتو (18.50%)
  اردو (12.23%)
  ہندکو (6.40%)
  دیگر (10.64%)

2017ء کی مردم شماری کے مطابق، آبادی کی اکثریت کی مادری زبان پنجابی / پوٹھوہاری ہے جو 52% ہے۔ آبادی کی 19% پشتو بولنے والے ہیں، جبکہ اسلام آباد کے 12% آبادی قومی زبان اردو بولتے ہیں۔ جبکہ باقی 17% دوسری زبانیں بولتے ہیں۔ 1998ء کی مردم شماری کے مطابق، شہر کی کل نقل مکانی کرنے والی آبادی 10 لاکھ ہے۔ جس میں اکثریت (691,977) پنجاب سے آتی ہے۔ نقل مکانی کرنے والی آبادی میں سے تقریباً 210,614 کا تعلق سندھ سے اور باقی کا تعلق خیبر پختونخوا اور آزاد کشمیر سے ہے۔ چھوٹی آبادیوں میں سے بلوچستان اور گلگت بلتستان سے ہجرت کی۔[52]

خواندگی ترمیم

آبادی کی اکثریت 15-64 سال کی عمر کے افراد کی ہے، جو آبادی کا تقریباً 59.38% ہیں۔ جبکہ صرف 2.73% آبادی کی عمر 65 سال سے زیادہ ہے اور 37.90% کی عمر 15 سال سے کم ہے[53] اسلام آباد میں پاکستان میں سب سے زیادہ خواندگی کی شرح 88% ہے۔ [54] 9.8% آبادی نے انٹرمیڈیٹ تعلیم حاصل کی ہے (گریڈ 11 اور 12 کے برابر)۔ 10.26% کے پاس بیچلر یا مساوی ڈگری ہے جبکہ 5.2% کے پاس ماسٹر یا اس کے مساوی ڈگری ہے۔[55] اسلام آباد کی لیبر فورس 185,213 ہے[56] اور بے روزگاری کی شرح 15.70% ہے۔[57]

آب وہوا ترمیم

 
مارگلہ پہاڑی ــ

اسلام آباد کی آب و ہوا پانچ موسموں پر مشتمل ہے : موسم سرما ( نومبر فروری)، موسم بہار ( مارچ اور اپریل )، موسم گرما ( مئی اور جون )، مانسون یعنی برسات ( جولائی اور اگست ) اور موسم خزاں ( ستمبر اور اکتوبر)۔ سب سے گرم مہینہ جون کا ہوتا ہے، سب سے ٹھنڈا مہینہ جنوری کا جبکہ جولائی کے مہینہ میں سب سے زیادہ بارشیں ہوتی ہیں۔ 23 جولائی 2001ء کو اسلام آباد میں صرف دس گھنٹوں کو دوران میں 620 ملی میٹر بارش ریکارڈ کی گئی جس نے گذشتہ 100 سال کے سب سے زیادہ بارش کے تمام ریکارڈز توڑ دیے۔ اسلام آباد اور راولپنڈی جڑواں شہر ہیں اور مارگلہ کی پہاڑیوں کے قریب ہونے کی وجہ سے یہاں موسم سردیوں میں کافی سرد ہو جاتا ہے لیکن 17 جنوری 1967ء کو راولپنڈی میں تاریخ کی سب سے زیادہ سردی ریکارڈ کی گئی اور اس شہر کا درجہ حرارت منفی 3.9 ڈگری ریکارڈ کیا گیا اور اسی دن اسلام آباد میں منفی 6 ڈگری سردی پڑی اور یہ ان دونوں شہروں کی سب سے شدید سردی ہے جو اب تک ریکارڈ کی گئی۔[58]

آب ہوا معلومات برائے اسلام آباد (1961–1990)
مہینا جنوری فروری مارچ اپریل مئی جون جولائی اگست ستمبر اکتوبر نومبر دسمبر سال
بلند ترین °س (°ف) 30.1
(86.2)
30.0
(86)
34.4
(93.9)
40.6
(105.1)
45.6
(114.1)
46.6
(115.9)
45.0
(113)
42.0
(107.6)
38.1
(100.6)
37.8
(100)
32.2
(90)
28.3
(82.9)
46.6
(115.9)
اوسط بلند °س (°ف) 17.7
(63.9)
19.1
(66.4)
23.9
(75)
30.1
(86.2)
35.3
(95.5)
38.7
(101.7)
35.0
(95)
33.4
(92.1)
33.5
(92.3)
30.9
(87.6)
25.4
(77.7)
19.7
(67.5)
28.6
(83.5)
یومیہ اوسط °س (°ف) 10.1
(50.2)
12.1
(53.8)
16.9
(62.4)
22.6
(72.7)
27.5
(81.5)
31.2
(88.2)
29.7
(85.5)
28.5
(83.3)
27.0
(80.6)
22.4
(72.3)
16.5
(61.7)
11.6
(52.9)
21.3
(70.3)
اوسط کم °س (°ف) 2.6
(36.7)
5.1
(41.2)
9.9
(49.8)
15.0
(59)
19.7
(67.5)
23.7
(74.7)
24.3
(75.7)
23.5
(74.3)
20.6
(69.1)
13.9
(57)
7.5
(45.5)
3.4
(38.1)
14.1
(57.4)
ریکارڈ کم °س (°ف) −3.9
(25)
−2.0
(28.4)
−0.3
(31.5)
5.1
(41.2)
10.5
(50.9)
15.0
(59)
17.8
(64)
17.0
(62.6)
13.3
(55.9)
5.7
(42.3)
−0.6
(30.9)
−2.8
(27)
−3.9
(25)
اوسط عمل ترسیب مم (انچ) 56.1
(2.209)
73.5
(2.894)
89.8
(3.535)
61.8
(2.433)
39.2
(1.543)
62.2
(2.449)
267.0
(10.512)
309.9
(12.201)
98.2
(3.866)
29.3
(1.154)
17.8
(0.701)
37.3
(1.469)
1,142.1
(44.966)
ماہانہ اوسط دھوپ ساعات 195.7 187.1 202.3 252.4 311.9 300.1 264.4 250.7 262.2 275.5 247.9 195.6 2,945.8
ماخذ#1: NOAA (normals)[59]
ماخذ #2: PMD (extremes)[60]


آبی ذخائر ترمیم

اسلام آبادمیں آبی ذخائر کے چار ڈیم ہیں جن میں راول ڈیم، سملی ڈیم، سندیمار ڈیم اور خانپور ڈیم شامل ہیں۔ خانپور ڈیم دریائے ہرو پر خانپور شہر میں واقع ہے جو اسلام آباد سے تقریباً 40 کلومیٹر دوری پر واقع ہے۔[61] وفاقی حکومت نے اسلام آباد میں پانی کی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے ایک اور ڈیم، جسے چراہ ڈیم کا نام دیا گیا ہے کی منظور ی دے دی ہے۔[62] کورنگ ندی اور دریائے سواں اسلام آباد سے گزرتے ہیں۔

نام مقام/

قریب ترین شہر

ضبط کرتا ہے۔ اونچائی ذخیرہ کرنے کی گنجائش تکمیل کا سال
راول ڈیم اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری دریائے کورنگ 40.7 میٹر (133.5 فٹ) 58,600,000 میٹر3 (47,508 acre·ft) 1962
سملی ڈیم اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری دریائے سون 89.7 میٹر 35,463,000 میٹر3 (28,750 acre·ft) 1983
سندے مار ڈیم اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری دریائے سندیمار 14.6 میٹر (47.9 فٹ) 802,995 میٹر3 (651 acre·ft) 1990

نباتات ترمیم

اسلام آباد میں نباتات میں دو بڑے ذرائع ہیں۔ جن میں مارگلہ ہلز نیشنل پارک، جو تقریباً 220 ایکڑ پر مشتمل ہے اور لوہی بھیر جنگل جو اسلام آباد ہائی وے کے ساتھ واقع ہے اور اس کا رقبہ 1087 ایکڑ پر مشتمل ہے۔[63]

تعمیر و ترقی ترمیم

 
اسلام آباد کا دامن کوہ سے نظارہ

اسلام آباد شہر کو جنوبی ایشیا کے عام شہروں سے یکسر مختلف بنانے کے لیے ڈیزائن کیا گیا تھا اور جنگل جیسی ترتیب میں وسیع و عریض راستے پیش کیے گئے تھے۔ تقسیم ہند سے پہلے متحدہ ہندوستان کا دار الحکومت دہلی تھا لیکن جب پاکستان نے 1947ء میں آزادی حاصل کی تو جنوبی بندرگاہی شہر کراچی اس کا عارضی قومی دار الحکومت بنا۔ 1958ء میں قومی دار الحکومت کے لیے راولپنڈی کے قریب ایک مناسب جگہ کا انتخاب کرنے کے لیے ایک کمیشن تشکیل دیا گیا۔ جس میں دیگر خصوصیات کے ساتھ محل وقوع، آب و ہوا، رسد اور دفاعی ضروریات پر خاص زور دیا گیا۔ وسیع مطالعہ، تحقیق اور ممکنہ مقامات کے مکمل جائزے کے بعد، کمیشن نے 1959ء میں راولپنڈی کے شمال مشرق کے علاقے کی سفارش کی۔[64] 1960ء کی دہائی میں، اسلام آباد کو کئی وجوہات کی بنا پر ایک متبادل دار الحکومت کے طور پر تعمیر کیا گیا تھا۔[65] کراچی ملک کے جنوبی سرے پر واقع تھا اور بحیرہ عرب پر واقع ہونے سے ماضی میں حملوں کا شکار تھا۔ پاکستان کو ایک ایسے دار الحکومت کی ضرورت تھی جہاں سے ملک کے تمام حصوں سے باآسانی قابل رسائی ہو۔ کراچی جو ایک کاروباری مرکز تھا کو جزوی طور پر حکومتی معاملات میں کاروباری مفادات کی مداخلت کی وجہ سے بھی غیر موزوں سمجھا جاتا تھا۔ اسلام آباد کا نیا منتخب مقام راولپنڈی میں آرمی ہیڈ کوارٹر اور شمال میں کشمیر کے متنازع علاقے کے قریب تھا۔ معماروں کی یونانی فرم، جس کی سربراہی کانسٹینٹ ٹینس اپوستولس ڈوکسڈز نے کی،[66] شہر کے ماسٹر پلان کو گرڈ پلان کی بنیاد پر ڈیزائن کیا جو مارگلہ کی پہاڑیوں کی طرف اس کی چوٹی کے ساتھ تکون شکل کا تھا۔ دار الحکومت کو کراچی سے براہ راست اسلام آباد نہیں منتقل کیا گیا۔ اسے پہلے 1960ء کی دہائی کے اوائل میں عارضی طور پر راولپنڈی منتقل کیا گیا اور پھر 1966ء میں ضروری ترقیاتی کام مکمل ہونے پر اسلام آباد منتقل کیا گیا۔[67]

شہری انتظامیہ ترمیم

اسلام آباد کے زون
زون ایریا
ایکڑز km2
I 54,958.25 222.4081
II 9,804.92 39.6791
III 50,393.01 203.9333
IV 69,814.35 282.5287
V 39,029.45 157.9466

اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری (آئی سی ٹی) ایڈمنسٹریشن، جسے عام طور پر آئی سی ٹی ایڈمنسٹریشن یا اسلام آباد ایڈمنسٹریشن کے نام سے جانا جاتا ہے، سول انتظامیہ کے ساتھ ساتھ وفاقی دارالحکومت کی اہم امن و امان کا ادارہ ہے۔ شہر کی لوکل گورنمنٹ اتھارٹی اسلام آباد میٹروپولیٹن کارپوریشن (IMC) ہے جو کیپیٹل ڈیویلپمنٹ اتھارٹی (اسلام آباد) (CDA) کی مدد سے شہر کی منصوبہ بندی، ترقی، تعمیر اور انتظامیہ کی نگرانی کرتی ہے۔ اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کو آٹھ زونز میں تقسیم کیا گیا ہے: انتظامی زون، کمرشل ڈسٹرکٹ، تعلیمی سیکٹر، انڈسٹریل سیکٹر، ڈپلومیٹک انکلیو، رہائشی علاقے، دیہی علاقے اور گرین ایریا۔ اسلام آباد شہر کو پانچ بڑے زونوں میں تقسیم کیا گیا ہے: زون I، زون II، زون III، زون IV اور زون V۔[68] ان میں سے زون IV رقبے میں سب سے بڑا ہے۔ زون I بنیادی طور پر تمام ترقی یافتہ رہائشی شعبوں پر مشتمل ہے جبکہ زون II غیر ترقی یافتہ رہائشی شعبوں پر مشتمل ہے۔ ہر رہائشی شعبے کی شناخت حروف تہجی کے ایک حرف اور ایک عدد سے ہوتی ہے اور یہ تقریباً 2 کلومیٹر × 2 کلومیٹر (1+1⁄4 mi × 1+1⁄4 mi) کے رقبے پر محیط ہے۔ سیکٹرز کو A سے I تک لکھا گیا ہے اور ہر سیکٹر کو چار نمبر والے ذیلی شعبوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔[43]

فن تعمیر ترمیم

 
دامنِ کوہ سے فیصل مسجد کا نظارہ

اسلام آباد فن تعمیر جدیدیت اور پرانی اسلامی اور علاقائی روایات کا مجموعہ ہے۔ سعودی پاک ٹاور روایتی طرز کے ساتھ جدید فن تعمیر کی ایک مثال ہے۔ خاکستری رنگ کی عمارت کو جو اسلامی روایتی نیلے رنگ کے ٹائلوں سے تراشی گئی ہے اور یہ اسلام آباد کی بلند ترین عمارتوں میں سے ایک ہے۔ ایک دوسرے سے جڑے ہوئے اسلامی اور جدید فن تعمیر کی دیگر مثالوں میں پاکستان یادگار اور فیصل مسجد شامل ہیں۔[69] سیکرٹریٹ کمپلیکس جو جیو پونٹی نے ڈیزائن کیا تھا، مغل فن تعمیر پر مبنی ہے۔ وزیر اعظم ہاؤس اور ایڈورڈ ڈیوریل سٹون کی قومی اسمبلی بھی خوبصورت عمارتیں ہیں۔ پاکستان یادگار کی بڑی پنکھڑیوں کے اندر کی دیواریں اسلامی فن تعمیر پر مبنی ہیں۔ شاہ فیصل مسجد عصری فن تعمیر کا امتزاج ہے[70] جس میں روایتی تکون نما نماز ہال اور چار مینار ہیں، جن کا ڈیزائن ترکی کے ماہر تعمیرات ویدات دلوکے نے بنایا تھا اور سعودی عرب کے شاہ فیصل کی طرف سے فراہم کردہ فنڈز کی مدد سے تعمیر کیا گیا ہے۔ فیصل مسجد کا فن تعمیر غیر معمولی ہے کیونکہ اس میں گنبد کی ساخت نہیں ہے۔ یہ عربی، ترکی اور مغل تعمیراتی روایات کا مجموعہ ہے۔[71] سینٹورس اسلام آباد میں جدید فن تعمیر کی ایک مثال ہے۔ نو تعمیر اسلام آباد اسٹاک ایکسچینج کے ٹاورز شہر میں جدید طرز تعمیر کی ایک اور مثال ہے۔[72]

معیشت ترمیم

 
اسلام آباد اسٹاک ایکسچینج

اسلام آباد میں دو سافٹ ویئر ٹیکنالوجی پارکس کے ساتھ معلومات اور مواصلات ٹیکنالوجی کی قومی اور غیر ملکی کمپنیاں بھی بڑی مقدار میں کام کر رہی ہیں۔[73] پی آئی اے، پی ٹی وی، پی ٹی سی ایل، او جی ڈی سی ایل اور زرعی ترقیاتی بینک کی طرح پاکستان کی کئی سرکاری کمپنیاں بھی اسلام آباد میں مقیم ہیں۔ اس طرح پی ٹی سی ایل، موبی لنک، ٹیلی نار، یوفون اور چائنا موبائل اور دیگر تمام اہم ٹیلی کمیونیکیشن آپریٹرز کے ہیڈ کوارٹرز اسلام آباد میں واقع ہیں۔ وفاقی دار الحکومت میں متعدد میڈیا ہاؤسز یا پبلشنگ ہاؤسز بھی قائم ہیں۔ ان کے صدر دفاتر سمیت ملکی اور بین الاقوامی میڈیا ہاؤسز کے بیورو یا کنٹری آفسز بھی قائم ہیں۔[74] ورلڈ بینک کی 2010ء کی ڈوئنگ بزنس رپورٹ کے مطابق اسلام آباد کو پاکستان میں کاروبار شروع کرنے کے لیے بہترین جگہ قرار دیا گیا تھا۔[75]

آئی ٹی پارک میں 36 آئی ٹی کمپنیاں ہیں، جبکہ ایویکیو ٹرسٹ میں 29 کمپنیاں ہیں۔ اسلام آبادکا تیسرا آئی ٹی پارک 2020ء میں جنوبی کوریا کے تعاون سے تعمیر کیا گیا۔[76]

اسلام آباد سٹاک ایکسچینج ترمیم

اسلام آباد سٹاک ایکسچینج کی بنیاد 1989ء میں رکھی گئی۔ یہ، کراچی اسٹاک ایکسچینج اور لاہور سٹاک ایکسچینج کے بعد پاکستان کی تیسری سب سے بڑی اسٹاک ایکسچینج ہے جس کا اوسط یومیہ کاروبار 1 ملین حصص سے زیادہ ہے۔[77]

اسلام آباد ماڈل اسپیشل اکنامک زون ترمیم

اسلام آباد ماڈل اسپیشل اکنامک زون ( آئی ایم ایس ای سی ) اسپیشل اکنامک زون ہے جو روات، اسلام آباد کے قریب واقع ہے، جو چین پاکستان اقتصادی راہداری سے منسلک ہے۔ یہ زون N-5 نیشنل ہائی وے اور اسلام آباد ایکسپریس وے کے سنگم پر پرائم انڈسٹریل ایریا کے 1,000 ایکڑ سے زیادہ کے رقبے پر محیط ہے۔ یہ 2.5 بلین ڈالر کی سرمایہ کاری کو راغب کرنے اور تقریباً 1,000 ملازمتوں کے مواقع پیدا کرنے کی توقع ہے۔ مزید برآں، اس کے مقاصد میں سے ایک ملک میں کم کاربن فوٹ پرنٹ صنعتوں کی ترقی کو فروغ دینا ہے۔[78][79]

ذرائع نقل و حمل ترمیم

پاکستان کے مروجہ نظام شاہرات کے تحت قائم بین الاضلاعی شاہرات کے ذریعے یہ شہر اسلام آباد، اٹک، جہلم، چکوال، مری، گوجرخان، کوہاٹ، مظفر آباد، لاہور، پشاور اور ایبٹ آباد کے ساتھ متصل ہے۔ اسلام آباد کو ٹرانسپورٹ کے نظام کے تحت اسے پاکستان کے تمام چھوٹے بڑے شہروں کو بس سروسز، ریل گاڑیوں اور اسلام آباد بین الاقوامی ہوائی اڈا کے ذریعے جوڑتا ہے جو زیادہ تر پڑوسی شہر راولپنڈی سے چلتی ہیں۔[80][81] اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کی علاقائی شاہراہیں ان تمام عوامی شاہراہوں پر مشتمل ہیں جو اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کے زیر انتظام ہیں۔ وزارت نقل و حمل کے تحت کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی کا انجینئری ونگ 2,000 کلومیٹر (6,600,000 فٹ) سے زیادہ اس کی دیکھ بھال کرتا ہے۔ ان سڑکوں کو مختلف درجہ بندیوں میں ترتیب دی گئی ہے جو علاقوں (بنیادی طور پر اسلام آباد) سے گزرتی ہیں۔ ان کو قومی شاہراہوں کے ساتھ نہیں جوڑا گیا جو حکومت پاکستان اور نیشنل ہائی وے اتھارٹی کے زیر انتظام وفاقی سڑکیں ہیں۔ ان سڑکوں کی حفاظت کا انتظام اسلام آباد کی وفاقی حکومت کرتی ہے۔[82] اسلام آباد فیض آباد انٹرچینج کے ذریعے راولپنڈی سے منسلک ہے جہاں روزانہ تقریباً 48,000 گاڑیوں کی آمدورفت ہوتی ہے۔ [83]

سڑکیں ترمیم

اسلام آباد کی مرکزی سڑکوں کی تفصیل مندرجہ ذیل ہے۔[84]

قومی شاہراہیں ترمیم

اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کی علاقائی شاہراہیں۔
ہائی وے کورس لمبائی موجودہ حالت لائنیں تکمیل
اسلام آباد ایکسپریس وے زیرو پوائنٹ انٹرچینجراوت 28 کلومیٹر 28 کلومیٹر آپریشنل 6 1968
سری نگر ہائی وے E-75 ( مری روڈ انٹرچینج)M-1 / M-2 موٹروے (اسلام آباد انٹرچینج) 25 کلومیٹر 25 کلومیٹر آپریشنل 4 1973
مارگلہ ایونیو مرکزی مارگلہ روڈ 33 کلومیٹر 33 کلومیٹر آپریشنل 6
آئی جے پی روڈ راولپنڈی - اسلام آباد 10.2 کلومیٹر 10.2 کلومیٹر آپریشنل 6
مری روڈ صدر، راولپنڈی -- بہارہ کہو، اسلام آباد 28 کلومیٹر 28 کلومیٹر آپریشنل 6

میٹروبس ترمیم

 
میٹرو بس کا روٹ

راولپنڈی-اسلام آباد میٹرو بس جو 83.6 کلومیٹر (51.9 میل) بس ریپڈ ٹرانزٹ سسٹم ہے جو اسلام آباد-راولپنڈی میٹروپولیٹن ایریا میں کام کرتا ہے۔ میٹرو بس نیٹ ورک کا پہلا مرحلہ 4 جون 2015ء کو کھولا گیا تھا،[85] اور یہ 22.5 کلومیٹر تک پھیلا ہوا ہے جو پاک سیکرٹریٹ، اسلام آباد سے صدر راولپنڈی کے درمیان میں ہے۔ دوسرا مرحلہ پشاور موڑ انٹر چینج اور نیواسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ کے درمیان میں 25.6 کلومیٹر تک پھیلا ہوا ہے اور اس کا افتتاح 18 اپریل 2022ء کو کیا گیا تھا۔ 7 جولائی 2022ء کو، گرین لائن اور بلیو لائنز کو اس میٹروبس نیٹ ورک میں شامل کیا گیا۔[86][87] یہ سسٹم ای ٹکٹنگ سسٹم کا استعمال کرتا ہے اور اس کا انتظام پنجاب ماس ٹرانزٹ اتھارٹی کرتا ہے[88] میٹرو بس نے راولپنڈی-اسلام آباد کے سفر اور راستے کو کم کر دیا ہے۔ اب اس بس سروس کو اسلام آباد کے مزید علاقوں تک بڑھایا جا رہا ہے جن میں G-13 اور H-12 کے قریب کے علاقے شامل ہیں۔[89]

لائن آپریٹر کھلنے کی تاریخ لمبائی راسته اسٹیشنوں کی تعداد بسوں کی تعداد تعدد سفر کا وقت (اختتام سے آخر تک) نوٹس
سرخ پی ایم اے اور سی ڈی اے 4 جون 2015۔ 22.5 کلومیٹر (14.0 میل) پاک سیکرٹریٹ - صدر 24 68 دن کے اوقات میں ہر 4 سے 8 منٹ پر (06:00-20:00) [90]
کینو سی ڈی اے 18 اپریل 2022 25.6 کلومیٹر (15.9 میل) فیض احمد فیض اسٹیشن (H-8/2) - ہوائی اڈا 7 15[91] ہر 5 منٹ [92]
نیلا 7 جولائی 2022 20 کلومیٹر (12 میل) پمز - گلبرگ 13 10 ایک گھنٹہ [93]
سبز 7 جولائی 2022 15.5 کلومیٹر (9.6 میل) پمز - بہارہ کہو 8 5 [93]

موٹروے ترمیم

 
ایم 2 موٹروے (پاکستان)

اسلام آباد کو موٹروے ایم 1 موٹروے (پاکستان)[94] اسلام آباد اور پشاور اور ایم 2 موٹروے (پاکستان) لاہور اور اسلام آباد سے ملاتی ہے۔ دونوں موٹرویز چھ لینوں پر مشتمل ہیں۔[95]

ایم 1 موٹر وے جو خیبر پختونخوا اور پنجاب کو ملاتی ہے۔ گولڑہ موڑ کے ذریعے اسلام آباد میں داخل ہوتی ہے۔ یہ موٹر وے افغانستان اور وسطی ایشیا کے لیے ایک اہم رابطہ سڑک بن چکی ہے۔ جبکہ ایم 2 موٹر وے جو اسلام آباد اور لاہور کو ملاتی ہے۔ یہ موٹر وے پنجاب، سندھ، بلوچستان اور خیبر پختونخوا پاکستان کے تمام صوبوں کو آپس میں ملاتی ہے۔[96]

اسلام آباد کو پشاور سے موٹروے ایم 1 موٹروے (پاکستان) ملاتی ہے جو 155 کلومیٹر (96 میل) لمبی ہے۔[97] اور اسلام آباد کو لاہور سے ایم 2 موٹروے (پاکستان) ملاتی ہے 367 کلومیٹر (228 میل) لمبی ہے۔ [81]

ہوائی نقل و حمل/ہوائی اڈا ترمیم

 
نیو اسلام آباد بین الاقوامی ہوائی اڈا

نیو اسلام آباد بین الاقوامی ہوائی اڈا دنیا بھر اور مقامی طور پر اہم مقامات سے جڑا ہوا ہے۔[98][99] اس ہوائی اڈا کو 400 ملین ڈالرز کی لاگت سے تعمیر کیا گیا ہے۔ اسلام آباد انٹرنیشنل ایئرپورٹ،[100]پاکستان کے دار الحکومت اسلام آباد اور راولپنڈی کی خدمت کرنے والا بین الاقوامی ہوائی اڈا ہے۔ یہ ہوائی اڈا شہر سے 25 کلومیٹر (16 میل) جنوب مغرب میں واقع ہے اور سری نگر ہائی وے کے ذریعے اس تک رسائی حاصل کی جاتی ہے۔ اس ہوائی اڈے نے 6 مئی 2018ء میں مکمل طور پر کام شروع کیا۔[101] جس نے بینظیر بھٹو بین الاقوامی ہوائی اڈا کی جگہ لے لی جو اب پی اے ایف بیس نور خان کا حصہ ہے۔ یہ رقبہ اور مسافروں کی گنجائش کے لحاظ سے پاکستان کا سب سے بڑا کارگو ہوائی اڈا ہے، جو سالانہ 9 ملین مسافروں کی خدمت کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ مستقبل میں مزید توسیع سے اسے سالانہ 25 ملین مسافروں کی خدمت کرنے کا موقع ملے گا۔ یہ جناح انٹرنیشنل ایئرپورٹ، کراچی کے بعد مسافروں کی آمدورفت کے لحاظ سے پاکستان کا دوسرا مصروف ترین ایئرپورٹ ہے۔ ٹرمینل میں 15 دروازے، ڈیوٹی فری شاپس، ایک فوڈ کورٹ اور 42 امیگریشن کاؤنٹرز شامل ہیں۔ اس ہوائی اڈے پر پی آئی اے کے علاوہ دیگر 25 ائیر لائنز اپنی خدمات سر انجام دیتی ہیں۔[102]

پرائیویٹ ٹرانسپورٹ ترمیم

لوگ مقامی سفر کے لیے نجی ٹرانسپورٹ جیسے ٹیکسی، کریم، اوبر، بائیکیا، ان ڈرائیور اور ایس ڈبلیو وی ایل کا استعمال کرتے ہیں۔[103]

اسلام آباد ریلوے اسٹیشن ترمیم

اسلام آباد ریلوے اسٹیشن سابقہ نام مارگلہ ریلوے اسٹیشن کا افتتاح 21 نومبر 1979ء کو ہوا۔ یہ ریلوے اسٹیشن سیکٹر 9-H اور I-9 کے درمیان واقع ہے۔ اس کا داخلی راستہ سیکٹر 9-H کی طرف سے ہے۔ گولڑہ شریف جنکشن ریلوے اسٹیشن، ترنول ریلوے اسٹیشن، نور (راولپنڈی) ریلوے اسٹیشن اور گولڑہ شریف ریلوے عجائب گھر اسلام آباد میں واقع ہیں۔[104] راولپنڈی ریلوے اسٹیشن اس اسٹیشن کے بالکل ساتھ واقع ہے۔ یہاں سے ٹرینیں پاکستان کے مختلف شہروں کو جاتی ہیں جن میں راولپنڈی، کراچی، لاہور، پشاور، کوئٹہ، حیدرآباد ملتان اور بہاولپور ہیں۔

سیاحتی بسیں ترمیم

ٹورازم ڈویلپمنٹ کارپوریشن پنجاب جو راولپنڈی کے علامہ اقبال پارک اور شمس آباد سے سیاحوں کی بسیں چلاتی ہے۔ یہ بسیں سیاحوں کو شکر پڑياں کے راستے شارع دستور تک لاتی ہے۔ بس روٹ کے اہم پرکشش مقامات میں فیصل مسجد، مرغزار چڑیا گھر، دامن کوہ، شارع دستور، لوک ورثہ عجائب گھر، پاکستان میوزیم آف نیچرل ہسٹری، شکر پڑياں، روز اینڈ جیسمین گارڈن، علامہ اقبال پارک اور راولپنڈی کرکٹ اسٹیڈیم شامل ہیں۔[105]

ثقافت ترمیم

اسلام آباد پاکستان کے دوسرے خطوں سے آنے والے بہت سے تارکین وطن کا گھر ہے اور یہاں ثقافتی اور مذہبی تنوع کافی قدیم ہے۔ پوٹھوہار سطح مرتفع پر واقع ہونے کی وجہ سے، قدیم ثقافتوں اور تہذیبوں کی باقیات جیسے آریائی، سوانی اور وادی سندھ کی تہذیب اب بھی اس خطے میں پائی جا سکتی ہے۔ 15ویں صدی کا گکھڑ قلعہ پھروالہ اسلام آباد کے قریب واقع ہے۔[106][107] اس خطے میں راوت قلعہ گکھڑوں نے 16ویں صدی میں تعمیر کیا تھا اور اس میں گکھڑ کے سردار سلطان سارنگ خان کی قبر ہے۔ [107] سید پور گاؤں کا نام قیاس کے مطابق سارنگ خان کے بیٹے سید خان کے نام پر رکھا گیا ہے۔ 500 سال پرانے گاؤں کو ایک مغل کمانڈر راجہ مان سنگھ نے ہندوؤں کی عبادت گاہ میں تبدیل کر دیا تھا۔ اس نے کئی چھوٹے تالاب بنائے جن میں رام کنڈا، سیتا کنڈا، لکشمن کنڈا اور ہنومان کنڈا شامل تھے۔[108] اس علاقے میں ایک چھوٹا سا ہندو مندر ہے جو محفوظ ہے، جو اس خطے میں ہندو لوگوں کی موجودگی کو ظاہر کرتا ہے۔ پیر مہر علی شاہ کا مزار گولڑہ شریف میں واقع ہے۔ بدھ دور کے آثار قدیمہ کے آثار بھی اس خطے میں پائے جاتے ہیں۔[109] امام بری کا مزار مغل شہنشاہ اورنگزیب عالمگیر نے بنوایا تھا۔ بری امام کے سالانہ عرس میں پاکستان بھر سے ہزاروں کی تعداد میں عقیدت مند شرکت کرتے ہیں۔ یہ تقریب اسلام آباد کے سب سے بڑے مذہبی اجتماعات میں سے ایک ہے۔ 2004ء میں عرس میں 1.2 سے زائد افراد نے شرکت کی۔  اسلام آباد میں لوک ورثہ عجائب گھر پاکستان کی لوک اور روایتی ثقافتی ورثے کو محفوظ رکھتا ہے۔ یہ شکر پڑياں پہاڑیوں کے قریب واقع ہے اور اس علاقے اور پاکستان کے دیگر حصوں سے کڑھائی والے ملبوسات، زیورات، موسیقی کے آلات، لکڑی کے کام، برتن اور لوک ثقافتی اشیاء کی ایک بڑی نمائش کا حامل ہے۔[110]

ادب ترمیم

اسلام آباد ادبی میلہ ترمیم

اسلام آباد لٹریچر فیسٹیول، ایک بین الاقوامی ادبی میلہ ہے جو ہر سال اسلام آباد، پاکستان میں منعقد ہوتا ہے۔ اسلام آباد لٹریچر فیسٹیول کو 2013ء میں قائم کیا گیا۔ پہلا ادبی میلہ 30 اور 31 اپریل 2013ء کو منعقد ہوا۔ اور آخری میلہ 16 سے 19 مارچ 2023ء کو منعقد ہوا۔[111]

اکادمی ادبیات پاکستان ترمیم

اکادمی ادبیات، پاکستانی زبانوں کے فروغ کے لیے قائم شدہ ادارہ ہے جس کا قیام یکم جولائی 1976ء میں رکھا گیا۔ اس کا دفتر اسلام آباد میں واقع ہے۔ اکادمی ادبیات پاکستان نے پاکستانی ادب کے فروغ کے سلسلہ میں مختلف موضوعات پر بہت سی ادبی و تحقیقی اور ترجمہ شدہ کتب شائع کی ہیں۔ اکادمی ادبیات پاکستان کا کتب خانہ چالیس ہزار سے زائد ذخیرہ کتب پر مشتمل ہے۔[112]

ادارہ فروغ قومی زبان ترمیم

ادارہ فروغ قومی زبان (مقتدرہ قومی زبان)، حکومت پاکستان کی قومی ورثہ و ثقافت ڈویژن، وفاقی وزارت تعلیم، پیشہ ورانہ تربیت، قومی ورثہ اور ثقافت کے ماتحت ادارہ ہے جس کا نصب العین ملک میں اردو زبان کی ترویج ہے۔ اس ادارہ کا قیام 4 اکتوبر 1979ء کو عمل میں آیا تاکہ قومی زبان 'اردو' کے بحیثیت سرکاری زبان نفاذ کیا جا سکے اور مختلف علمی، تحقیقی اور تعلیمی اداروں کے مابین اشتراک و تعاون کو فروغ دے کر اردو کے نفاذ کو ممکن بنایا جا سکے۔[113]

قومی کتب خانہ ترمیم

قومى کتب خانہ پاکستان، ریڈ زون، اسلام آباد، میں واقع ہے۔ یہ  ملک کی قدیمی ثقافتی ادارہ اور نئی معلومات کے لیے ایک اہم ذریعہ ہے۔  مشرقی فن تعمیر کے طرز پر تیار کردہ، لائبریری میں 500 قارئین کی گنجائش ہے، اس میں 15 تحقیقی کمرے، 450 نشستوں والا آڈیٹوریم ہے اور کمپیوٹر اور مائیکرو فلم کی خدمات فراہم کرتا ہے۔ 1993 میں اپنے افتتاح کے وقت، لائبریری کے پاس 130,000 جلدوں اور 600 مخطوطات کا مجموعہ تھا۔ نیشنل لائبریری کا مشن خواندگی کو فروغ دینا اور ریاست کے دار الحکومت اسلام آباد کے لیے ایک متحرک ثقافتی اور تعلیمی مرکز کے طور پر کام کرنا ہے۔[114][115]

فنون اور دستکاری ترمیم

جناح کنونشن سینٹر ترمیم

جناح کنونشن سینٹر (جسے نیشنل کنونشن سینٹر بھی کہا جاتا ہے) اسلام آباد میں واقع ایک نمائش اور کنونشن سینٹر ہے۔ اس کا نام محمد علی جناح کے نام پر رکھا گیا ہے۔ یہ کیپٹل ڈویلپمنٹ اتھارٹی کے زیر انتظام ہے اور اس میں 2,200 لوگوں کے بیٹھنے کی گنجائش ہے۔  یہ بنیادی طور پر حکومت پاکستان کی طرف سے قومی تقریبات کی میزبانی کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔[116][117][118]

قومی دفتر خانہ ترمیم

نیشنل آرکائیوز آف پاکستان، پاکستان کی تاریخ، ثقافت اور ورثے پر اثر انداز ہونے والے سرکاری اور نجی ریکارڈ کو محفوظ کرنے اور دستیاب کرنے کے مقصد سے حکومت پاکستان کی طرف سے قائم کیا گیا ایک ادارہ ہے۔ [119] نیشنل آرکائیوز کا کام دستاویزات کا حصول، تحفظ، ریپروگرافی، بحالی، آٹومیشن، تقسیم اور رسائی ہیں۔ نیشنل آرکائیوز آف پاکستان، اہم ریاستی دستاویزات اور تاریخ کی فائلوں کو جمع کرنے کی سہولت کے لیے بھی ذمہ دار ہے۔[120][121]

تہوار ترمیم

 
شیر دل فائٹر جہاز اسلام آباد کی فضائوں میں

اسلام آباد میں پورے پاکستان کی طرح مذہبی اور قومی تہوار بھی جوش و جذبے سے منائے جاتے ہیں۔ درج ذیل چند اہم تہواروں کی ایک فہرست ہے۔[122]

قومی ترمیم

مذہبی ترمیم

انتظامی حکومت و سیاست ترمیم

مرکزی حکومت کے دفاتر ترمیم

مرکزی حکومت کے تمام دفاتر اسلام آباد کے پاکستان سیکرٹریٹ جو ریڈ زون میں واقع ہے موجود ہیں۔ درج ذیل میں تمام وفاقی وزارتوں کی فہرست ہے۔[123]

قومی اسمبلی پاکستان ترمیم

 
مجلس شوریٰ پاکستان

قومی اسمبلی پاکستان کی پارلیمان کا ایوان زیریں ہے۔ اسلام آباد سے قومی اسمبلی کی 3 نشستیں ہیں جس کی فہرست مندرجہ ذیل ہے۔[124]

# قومی اسمبلی کی نشست نمائندہ حلقہ سیاسی جماعت
1 این اے۔52 (اسلام آباد -1)

خالی

/

2 این اے۔53 (اسلام آباد -2)

خالی

/

3 این اے۔54 (اسلام آباد -3)

خالی

/

ناظم اسلام آباد ترمیم

ناظم یا میئر اسلام آبادایک ناظم شہر (میئر) ہے جو اسلام آباد اور آس پاس کے دارالحکومت کے علاقے کی بلدیاتی انتظامیہ کا سربراہ ہے۔ ناظم بلدیہ عظمی اسلام آباد (ایم سی آئی) کی قیادت کرتا ہے جس کی ایگزیکٹو برانچ 77 منتخب عہدے داروں پر مشتمل ہے۔ ناظم کاعہدہ اسلام آباد کیپیٹل ٹیریٹری لوکل گورنمنٹ ایکٹ 2015 کے مطابق بنایا گیا تھا، جسے 2015 میں قومی اسمبلی اور ایوان بالا پاکستان نے منظور کیا۔[125][126][127][128]

یونین کونسلیں ترمیم

2023ء کی نئی حلقہ بندیوں کے مطابق ضلع اسلام آباد کی یونین کونسلوں کی تعداد125 ہو گئی ہے۔ 2022ء میں اسلام آباد کی یونین کونسلوں کی تعداد 52 سے بڑھا کر 101کر دی تھی۔[129][130][131]

اسلام آباد/راولپنڈی میٹروپولیٹن علاقہ ترمیم

1960ء میں جب اسلام آباد کا ماسٹر پلان تیار کیا گیا تو اسلام آباد اور راولپنڈی کے ملحقہ علاقوں کو ساتھ ملا کر اسلام آباد/راولپنڈی میٹروپولیٹن ایریا کے نام سے ایک بڑا میٹروپولیٹن علاقہ بنایا جانا تھا۔[132][133] یہ علاقہ ترقی پزیر اسلام آباد، راولپنڈی اور آس پاس کے دیہی علاقوں کے پر مشتمل ہو گا۔ تاہم اسلام آباد شہر اسلام آباد کیپٹل ٹیریٹری کا حصہ ہو گا اور راولپنڈی ضلع راولپنڈی کا حصہ ہو گا جو صوبہ پنجاب کا حصہ ہے۔

ابتدائی طور پر یہ تجویز کیا گیا تھا کہ تینوں علاقوں کو چار بڑی شاہراہوں سے ملایا جائے گا۔ جن میں مری ہائی وے، اسلام آباد ہائی وے، سواں ہائی وے اور کیپٹل ہائی وے شامل تھیں۔ مارگلہ ایونیو کی تعمیر کے منصوبے بھی زیر تکمیل ہیں۔[134] اسلام آباد تمام سرکاری سرگرمیوں کا مرکز ہے جبکہ راولپنڈی تمام صنعتی، تجارتی اور فوجی سرگرمیوں کا مرکز ہے۔ دونوں شہروں کو جڑواں شہر کہا جاتا ہے اور یہ دونوں شہر ایک دوسرے پر بہت زیادہ انحصار کرتے ہیں۔[135]

بنیادی ڈھانچہ ترمیم

صحت ترمیم

 
پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز

اسلام آباد میں ملک میں نوزائیدہ بچوں کی اموات کی سب سے کم شرح 38 فی ہزار پر ہے جبکہ قومی اوسط 78 اموات فی ہزار ہے۔[136] اسلام آباد میں سرکاری اور نجی دونوں طرح کے طبی مراکز ہیں۔ اسلام آباد کا سب سے بڑا ہسپتال پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف میڈیکل سائنسز ہسپتال ہے۔ یہ 1985ء میں تدریسی اور ڈاکٹر ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے طور پر قائم کیا گیا تھا۔ یہ ہسپتال خصوصی تشخیص اور علاج کی خدمات فراہم کرتا ہے۔[137] ہسپتال میں 30 بڑے طبی شعبے ہیں۔[138] پمز کو پانچ انتظامی شاخوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ اسلام آباد ہسپتال 592 بستروں کی سہولت اور 22 طبی اور سرجیکل خصوصیات کے ساتھ عوام کی خدمت کر رہا ہے۔[139] چلڈرن ہسپتال 1985ء میں مکمل ہونے والا 230 بستروں کا ہسپتال ہے۔ اس میں چھ بڑی سہولیات ہیں: سرجیکل اور الائیڈ اسپیشلٹیز، میڈیکل اینڈ الائیڈ اسپیشلٹیز، تشخیصی سہولیات، آپریشن تھیٹر، کریٹیکل کیئر (این آئی سی یو، پی آئی سی یو، آئسولیشن اور ایکسیڈنٹ ایمرجنسی) اور ایک بلڈ بینک شامل ہے۔[140] میٹرنل اینڈ چائلڈ ہیلتھ کیئر سینٹر ایک تربیتی ادارہ ہے جس میں 125 بستروں کا ایک ہسپتال ہے جو مختلف طبی اور آپریشنل خدمات فراہم کرتا ہے۔[141] پمز پانچ تعلیمی اداروں پر مشتمل ہے: قائد اعظم پوسٹ گریجویٹ میڈیکل کالج، کالج آف نرسنگ، کالج آف میڈیکل ٹیکنالوجی، اسکول آف نرسنگ اور مدر اینڈ چائلڈ ہیلتھ سینٹر شامل ہیں۔ [142] جنرل ہسپتال اور تدریسی ادارہ، جو 2006ء میں قائم ہوا، پاکستان اٹامک انرجی کمیشن سے منسلک ہے۔ [143] ہسپتال 100 بستروں کی سہولت پر مشتمل ہے [143] اور 10 بڑے شعبہ جات جن میں: دندان سازی، امراض نسواں، اطفال، جنرل میڈیسن، جنرل سرجری، شعبۂ انتہائی نگہداشت / کورونری کیئر یونٹ، آرتھوپیڈکس، اوپتھلمولوجی، پیتھالوجی، ریڈیولوجی ہیں۔[144] شفا انٹرنیشنل ہسپتال اسلام آباد کا ایک تدریسی ہسپتال ہے جس کی بنیاد 1987ء میں رکھی گئی اور 1989ء میں ایک پبلک کمپنی بن گئی۔ ہسپتال میں تقریباً تمام خصوصیات ہیں جن میں 70 مستند کنسلٹنٹس، 150 آئی پی ڈی بیڈز اور 35 مختلف اسپیشلائزیشنز میں او پی ڈی کی سہولیات ہیں۔[145] حکومت پاکستان کے اعداد و شمار کے وفاقی بیورو کے مطابق، 2008ء میں شہر میں 12 ہسپتال، 76 ڈسپنسریاں اور پانچ زچگی اور بچوں کی بہبود کے مراکز تھے جن کی کل تعداد 5,158 تھی۔[146]

اسلام آباد میں صحت عامہ کی اعلیٰ سہولیات میسر ہیں۔ درج ذیل اسلام آباد کے اہم ہسپتالوں اور طبی درس گاہوں کی فہرست ہے۔[147]

طبی درس گاہیں ترمیم

  • نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ

ہسپتال ترمیم

کھیل ترمیم

 
جناح سپورٹس اسٹیڈیم

اسلام آباد میں آبپارہ کے سامنے ایک سپورٹس کمپلیکس ہے۔[151] اس میں انڈور گیمز کے لیے لیاقت جمنازیم، مصحف اسکواش کمپلیکس اور آؤٹ ڈور گیمز کے لیے جناح اسپورٹس اسٹیڈیم شامل ہیں جہاں باقاعدہ قومی اور بین الاقوامی کھیلوں کا انعقاد کیا جاتا ہے۔ لیاقت جمنازیم میں 2004ء کے جنوب ایشیائی کھیل منعقد ہوئے۔ اسلام آباد کے دیگر کھیلوں کے مقامات میں ڈائمنڈ کلب گراؤنڈ، شالیمار کرکٹ گراؤنڈ اور اسلام آباد گالف کلب شامل ہیں۔ ایف سکس مرکز میں مختلف کھیلوں کی سرگرمیوں کا ایک اسپورٹس کمپلیکس ہے۔ اس میں ٹینس کورٹ، فائبر گلاس بورڈز کے ساتھ باسکٹ بال کورٹ اور فٹسال گراؤنڈ ہے۔ اسلام آباد کے کھیلوں میں کرکٹ، فٹ بال، اسکواش، ہاکی، ٹیبل ٹینس، رگبی اور باکسنگ شامل ہیں۔ اسلام آباد یونائیٹڈ کرکٹ ٹیم نے 2016ء میں پہلی بار اور 2018ء میں دوسری بار پاکستان سپر لیگ کا ٹائٹل جیتا تھا۔[152][153] اسلام آباد میں مارگلہ کی پہاڑیوں پر چڑھنے کے لیے مختلف ٹریک موجود ہیں۔[154] پاکستان سپورٹس کمپلیکس میں بچوں کے لیے تین سوئمنگ پول ہیں۔[155]

جناح اسپورٹس اسٹیڈیم ترمیم

جناح اسپورٹس اسٹیڈیم، ایک کثیر المقاصد اسٹیڈیم ہے۔ یہ اسٹیڈیم زیادہ تر فٹ بال میچوں کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔ یہ اسٹیڈیم 1970 کی دہائی میں تعمیر کیا گیا تھا۔ اسٹیڈیم کی تزئین و آرائش کی گئی تھی اور اسے 2004 میں ایس اے ایف گیمز کے لیے استعمال کیا گیا تھا۔ اس اسٹیڈیم میں 48,000 افراد کی گنجائش ہے اور یہ پاکستان کا سب سے بڑا اسٹیڈیم ہے۔[156]

لیاقت جمنازیم ترمیم

لیاقت جمنازیم اسلام آباد، میں واقع ایک انڈور کھیلوں کا میدان ہے۔ میدان کی گنجائش 10,223 شائقین کی گنجائش ہے۔ یہ باسکٹ بال، بیڈمنٹن، باکسنگ اور پرو ریسلنگ جیسے اندرونی کھیلوں کے مقابلوں کے لیے استعمال ہو تا ہے۔   لیاقت جمنازیم کی تعمیر میں زلزلے سے بچاؤ کی ٹیکنالوجی استعمال کی گئی۔[157][158]

تعلیم ترمیم

 
بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی
 
قائد اعظم یونیورسٹی کا داخلی دروازہ

اسلام آباد میں خواندگی کی شرح 98% ہے اور پاکستان کے جدید ترین تعلیمی ادارے موجود ہیں۔[159] سرکاری اور نجی شعبے کے تعلیمی اداروں کی ایک بڑی تعداد یہاں موجود ہے۔ دارالحکومت کے اعلیٰ تعلیمی ادارے یا تو وفاقی طور پر چارٹرڈ ہیں یا نجی اداروں کے زیر انتظام ہیں اور ان میں سے تقریباً سبھی کو ہائر ایجوکیشن کمیشن آف پاکستان نے تسلیم کیا ہے۔[160] ہائی اسکول اور کالج فیڈرل بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اینڈ سیکنڈری ایجوکیشن سے وابستہ ہیں۔[160][161]

 
نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی

اکیڈمی آف ایجوکیشنل پلاننگ اینڈ مینجمنٹ کی رپورٹ کے مطابق 2009ء میں اسلام آباد میں کل 913 تسلیم شدہ ادارے تھے (31 پری پرائمری، 2 مذہبی، 367 پرائمری، 162 مڈل، 250 ہائی، 75 ہائیر سیکنڈری اور انٹرمیڈیٹ کالجز اور 26۔ ڈگری کالجز )۔ [162] اسلام آباد میں اساتذہ کی تربیت کے سات ادارے ہیں جن میں کل 604,633 طلبہ اور 499 فیکلٹی کا داخلہ ہے۔ [162] اسلام آباد میں صنفی برابری کا انڈیکس 0.95 قومی اوسط کے مقابلے میں 0.93 ہے۔ اسلام آباد میں لڑکوں کے لیے 178 ادارے اور لڑکیوں کے لیے 175 ادارے اور 551 مخلوط ادارے ہیں۔ [163] تمام زمروں میں طلبہ کی کل تعداد 267,992 ہے۔ لڑکوں کے لیے 138,272 اور لڑکیوں کے لیے 129,720۔ [163] اسلام آباد میں 16 تسلیم شدہ یونیورسٹیاں ہیں جن میں کل 372,974 طلبہ اور 30,144 اساتذہ شامل ہیں۔ [163] زیادہ تر اعلیٰ درجہ کی یونیورسٹیاں؛ نیشنل یونیورسٹی آف سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی، کومسٹس انسٹی ٹیوٹ آف انفارمیشن ٹیکنالوجی اور پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ اینڈ اپلائیڈ سائنسز کا صدر دفتر بھی دار الحکومت میں ہے۔ [164] اندراج کے لحاظ سے دنیا کی دوسری بڑی جنرل یونیورسٹی، علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی فاصلاتی تعلیم کے لیے اسلام آباد میں واقع ہے۔ دیگر یونیورسٹیوں میں ایئر یونیورسٹی، بحریہ یونیورسٹی، سینٹر فار ایڈوانسڈ اسٹڈیز ان انجینئرنگ، فیڈرل اردو یونیورسٹی آف آرٹس، سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، ہمدرد یونیورسٹی، نیشنل یونیورسٹی آف کمپیوٹر اینڈ ایمرجنگ سائنسز، کیپیٹل یونیورسٹی آف سائنس اینڈ ٹیکنالوجی، نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی، شفا تمیر شامل ہیں۔ ملت یونیورسٹی، نیشنل یونیورسٹی آف ماڈرن لینگویجز، اقراء یونیورسٹی، انٹرنیشنل اسلامک یونیورسٹی، ورچوئل یونیورسٹی آف پاکستان، محمد علی جناح یونیورسٹی، دی یونیورسٹی آف لاہور، اباسین یونیورسٹی اور دی ملینیم یونیورسٹی کالج شامل ہیں۔

بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی ترمیم

 
بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی

بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی، اسلام آباد 1980ء بمطابق 1400ھ میں قائم ہوئی۔ 1985ء بمطابق 1405ھ میں اسے قانونی طور پر بین الاقوامی حیثیت عطا کی گئی، جس کے بعد وہ پاکستانی آئین کے تحت انتظامی طور پر مستقل ادارے کی حیثیت سے کام کر رہی ہے۔ پاکستانی آئین کے تحت پاکستان کے صدر مملکت بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کے چانسلر ہیں۔ بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کا بورڈ آف ٹرسٹیز عالم اسلام کی چوالیس معروف شخصیات پر مشتمل ہے۔ بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی اسلام آباد 9 فیکیلٹیز، 39 شعبہ جات اور 6 اکیڈمیوں پر مشتمل ہے اور 131 تعلیمی پروگراموں میں دنیا کے پچاس سے زائد ممالک سے آنے والے 30 ہزار کے قریب طلبہ و طالبات کو زیورِتعلیم سے آراستہ کر رہی ہے۔ اسلام آباد میں حکومتِ پاکستان کی طرف سے بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی کو ایک ہزار ایکڑ پر مشتمل وسیع رقبہ عطا کیا گیا ہے۔[165]

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی ترمیم

علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی اسلام آباد میں واقع ہے جو فاصلاتی نظام تعلیم کی ایشیا کی بڑی جامعات میں شمار کی جاتی ہے۔ اس یونیورسٹی کو 1974ء میں پارلیمنٹ کے ایک قانون کے تحت پیپلز اوپن یونیورسٹی کے طور پر قائم کیا گیا تھا۔ 1977ء کواس یونیورسٹی کو علامہ اقبال کے اعزاز میں پیپلز اوپن یونیورسٹی سے علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کا نام دے دیا گیا۔[166][167][168]

وفاقی اردو یونیورسٹی برائے فنون، سائنس اور ٹیکنالوجی ترمیم

وفاقی اردو یونیورسٹی برائے فنون، سائنس اور ٹیکنالوجی، سابق سربراہ ہائر ایجوکیشن کمیشن ڈاکٹر عطاءالرحمن کی ذاتی کوششوں سے سابقہ وفاقی اردو کالج برائے سائنس، گلشن اقبال اور سابقہ وفاقی اردو کالج برائے فنون و تجارت (مولوی عبد الحق کیمپس) کو ترقی دے کر وفاقی اردو یونیورسٹی برائے فنون، سائنس و ٹیکنالوجی کا قیام عمل میں لایا گیا۔ 13نومبر 2002ء کو صدر پاکستان پرویز مشرف نے وفاقی اردو یونیورسٹی کی باضابطہ بنیاد رکھی۔[169][170][171]

ذرائع ابلاغ ترمیم

اسلام آباد سے بہت سے روزنامے اردو، انگریزی اور مقامی زبانوں میں شائع ہوتے ہیں۔ ایسوسی ایٹیڈ پریس آف پاکستان کا مرکزی دفتر اسلام آباد میں واقع ہے اور ملک کے تمام اہم اخباروں کے صحافی اسلام آباد میں موجود رہتے ہیں۔[172]

انٹرنیٹ ترمیم

شہر میں انٹرنیٹ کے لیے براڈ بینڈ انٹرنیٹ اور ویڈیو کانفرینسنگ کی سہولت دستیاب ہیں۔ گھریلو صارفین اور کارپوریٹ صارفین کے لیے اچھی رفتار کا براڈبینڈ انٹرنیٹ کنکشن دستیاب ہوتا ہے۔ شہر میں بہت سے انٹرنیٹ کیفے بھی موجود ہیں۔

اردو اخبارات ترمیم

اسلام آباد سے اردو اخبارات جو شائع ہوتے ہیں۔[173]

انگریزی اخبارات ترمیم

اسلام آباد سے انگریزی اخبارات جو شائع ہوتے ہیں۔[173]

ریڈیو ترمیم

ریڈیو پاکستان کا مرکزی دفتر اسلام آباد میں واقع ہے۔ یہاں میڈیم ویوز پر نشریات کی جاتی ہیں۔ اس وقت مندرجہ ذیل ریڈیو اسٹیشن چل رہے ہیں۔[174]

  • صوت القرآن
  • ایف ایم 101اسلام آباد
  • ایف ایم 87.6پلانٹ
  • ایف ایم 94 اسپورٹص

ٹیلی ویژن/ فلم/ ڈراما ترمیم

پاکستان ٹیلی ویژن اسلام آباد سینٹر کی بنیاد 1967ء میں رکھی گئی۔ پاکستان ٹیلی ویژن کا مرکزی دفتر اسلام آباد میں واقع ہے۔[175]

سینما گھر ترمیم

اسلام آباد میں درج ذیل سینما گھر ہیں۔[176][177]

  • سینٹورس سینی پلیکس
  • سینی پیکس ورلڈ ٹریڈ سینٹر
  • جاکارنڈا فیملی کلب (جے ایف سی) سینی پلیکس
  • رائیحہ سینی گولڈ پلیکس
  • دی ایرینا

ڈاکخانہ ترمیم

جنرل پوسٹ آفس (General Post Office / GPO) اسلام آباد کا مرکزی ڈاک خانہ ہے۔[178]

شہر/قصبہ رمزِ ڈاک ضلع/صدر ڈاک خانہ صوبہ/عملداری
اسلام آباد GPO 44000 وفاقی دارالحکومت وفاقی
اسلام آباد وزیرِ اعظم Sectt 44010 وفاقی دارالحکومت وفاقی
اسلام آباد جامعہ قائداعظم 45320 وفاقی دارالحکومت وفاقی

سیاحت ترمیم

 
فیصل مسجد

اسلام آباد میں بہت سے سیاحی مقامات ہیں جن میں دامن کوہ، مارگلہ چڑیا گھر، پاکستان یادگار، فیصل مسجد اور راول بند قابل ذکر ہیں۔[179] فیصل مسجد شہر کا ایک اہم ثقافتی نشان ہے اور جو روزانہ بہت سے سیاحوں کو راغب کرتی ہے۔ فیصل مسجد 1986ء میں تعمیر کی گئی تھی، اس کا نام سعودی عرب کے بادشاہ فیصل بن عبدالعزیز کے نام پر رکھا گیا تھا۔[180] اس مسجد میں 24,000 افراد نماز ادا کر سکتے ہیں۔ فیصل مسجد جسے ترکوں نے ڈیزائن کیا ہے اور سعودی عرب کی طرف سے مالی اعانت فراہم کی گئی ہے، مسجد کی دیواروں پر قرآنی آیات کی خطاطی شامل ہے۔ سیاحوں کے لیے تاریخی مقامات میں سے ایک پاکستان یادگار ہے جو 2007ء میں تعمیر کی گئی۔ یہ سیاحتی مقام پاکستان کی حب الوطنی اور خود مختاری کی نمائندگی کرتا ہے۔ ڈیزائن کو گنبد کی شکل دی گئی ہے جس میں پنکھڑیوں کی شکل کی دیواریں ہیں جو پاکستان کے دیگر سیاحتی مقامات جیسے بادشاہی مسجد، مینارِ پاکستان اور قلعہ لاہور کی تصویر کشی کرنے والے فنون سے کندہ ہیں۔[181]

 
یادگار پاکستان

اسلام آباد میں پاکستان کے کچھ مشہور عجائب گھر ہیں جن میں لوک ورثہ عجائب گھر، انسٹی ٹیوٹ آف فوک اینڈ ٹریڈیشنل ہیریٹیج شکر پڑياں پارک اور نیشنل آرٹ گیلری شامل ہیں۔ اسلام آباد میوزیم میں گندھارا دور کے بہت سے آثار اور نمونے موجود ہیں، جو بدھ مت اور گریکو-رومن طرزوں پر مشتمل ہیں۔ اسلام آباد اور پاکستان کی ثقافت کو لوک ورثہ عجائب گھر کے ساتھ شکرپڑیاں پارک میں انسٹی ٹیوٹ آف فوک اینڈ ٹریڈیشنل ہیریٹیج میں دیکھا جا سکتا ہے۔ اسلام آباد 10ویں صدی سے لے کر جدید دور تک کی تہذیب اور فن تعمیر پر قائم ہے۔ چونکہ اسلام آباد سطح مرتفع پوٹھوہار پر واقع ہے، اس لیے پتھر کے زمانے کی تہذیب کی باقیات میں اچیولین اور سوانیائی روایات شامل ہیں اور یہ سیاحتی مقامات ہیں۔ اسلام آباد میں تاریخی نشانات ہندو تہذیب کی عکاسی کرتی ہے جس کی باقیات 16 ویں صدی سید پور گاؤں میں موجود ہے۔ سید پور میں مندر موجود ہے جہاں ہندو مغل کمانڈر پوجا کرتے تھے۔[182]

مارگلہ ہلز نیشنل پارک اسلام آباد کے شمالی سیکٹر میں واقع ہے اور ہمالیہ کے قریب ہے۔ نیشنل پارک میں دلکش وادیوں اور قدرتی پہاڑیوں پر مشتمل ہے جس میں مختلف جنگلی حیات جیسے ہمالیائی گورل، ہرن اور چیتے شامل ہیں۔ جنگلی حیات اور پودوں سے بھرے مارگلہ ہلز نیشنل پارک میں سیاحوں کے لیے رہائش اور کیمپنگ گراؤنڈ بھی شامل ہیں۔

لوک ورثہ عجائب گھر ترمیم

 
F-9 فاطمہ جناح پارک

لوک ورثہ عجائب گھر، تاریخی آرٹ اور ثقافت سے تعلق رکھتا ہے۔ یہ عجائب گھر 1974ء میں کھولا گیا اور 2002ء میں  یہ ایک خود مختار ادارہ بن گیا۔ عجائب گھر کئی  عمارتوں پر مشتمل ہے۔ یہ شکر پڑیاں کی پہاڑیوں اسلام آباد میں واقع ہے۔[183]

فیصل مسجد ترمیم

 
فیصل مسجد

فیصل مسجد، اسلام آباد میں قائم ایک عظیم الشان مسجدہے جسے جنوبی ایشیا کی سب سے بڑی مسجد ہونے کا اعزاز حاصل ہے۔ یہ عظیم مسجد اپنے انوکھے طرز تعمیر کے باعث تمام مسلم دنیا میں معروف ہے۔ مسجد کا سنگ بنیاد شوال 1396ھ/ اکتوبر 1976ء کو رکھا گیا اور تکمیل 1987ء میں ہوئی۔[184] سعودی حکومت کی مدد سے دس لاکھ سعودی ریال (کم و بیش ایک کروڑ بیس لاکھ امریکی ڈالر) کی لاگت سے 1976 میں مسجد کی تعمیر کا آغاز کیا گیا۔ تعمیری اخراجات میں بڑا حصہ دینے پر مسجد اور کراچی کی اہم ترین شاہراہ 1975ء میں شاہ فیصل کی وفات کے بعد ان کے نام سے موسوم کردی گئی۔ تعمیراتی کام 1987ء میں مکمل ہوا اور احاطہ میں بین الاقوامی اسلامی یونیورسٹی بنائی گئی۔ سابق صدر پاکستان جنرل محمد ضیاء الحق کے مزار کی چھوٹی سی عمارت مسجد کے مرکزی دروازے کے قریب واقع ہے۔

پاکستان یادگار ترمیم

پاکستان یادگار ایک قومی یادگار ہے جو ملک کے چاروں صوبوں اور تین علاقوں کی نمائندگی کرتی ہے۔ یادگارکھلے پھول کی شکل میں ایک تیزی سے ترقی پزیر ملک کے طور پر پاکستان کی پیش رفت کی نمائندگی کرتا ہے۔ یادگار کی چار اہم پنکھڑیاں چاروں صوبوں کی نمائندگی کرتی ہیں (بلوچستان، خیبر پختونخوا، پنجاب اور سندھ)، جبکہ تین چھوٹی پنکھڑیاں تین علاقوں کی نمائندگی کرتی ہیں (گلگت بلتستان، آزاد کشمیر اور قبائلی علاقہ جات )۔ فضا سے یادگار ایک ستارہ (وسط میں) اور ایک چاند (پنکھڑیوں کی دیواروں سے بنا) کی طرح دکھتا ہے، جو پاکستانی پرچم میں ستارہ و ہلال کی نمائندگی کرتا ہے۔[185]

شاہ اللہ دتہ کی غاریں ترمیم

شاہ اللہ دتہ گاؤں ایک صدیوں پرانا گاؤں اور اسلام آباد کیپیٹل اتھارٹی کی یونین کونسل ہے۔ اس گاؤں کا نام ایک درویش کے نام پر رکھا گیا ہے جو مغل دور سے تعلق رکھتا تھا۔ یہ گاؤں 650 سال پہلے آباد ہوا تھا۔ یہاں قدیم غاریں موجود ہیں جو پچھلی تہذیبوں کی عکاسی کرتی ہیں۔ مارگلہ پہاڑیوں کے دامن میں 2500 سال پرانی بدھ غاریں ٹیکسلا کے مغرب میں، اسلام آباد کے مشرق میں اور خان پور کے وسطی علاقے میں واقع ہیں۔ شاہ اللہ دتہ غاروں کے قریب ایک چشمہ، ایک تالاب اور ایک باغ اب بھی موجود ہے۔ باغ میں برگد کے کچھ درخت ہیں جبکہ باقی تمام پھل دار درخت ختم ہو چکے ہیں۔ اسی چشمے کا پانی غاروں سے ملحقہ باغ کو سیراب کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا تھا۔ مغلیہ دور میں جب ہندوستان عرب اور وسطی ایشیا سے نکلنے والے تصوف کا مرکز تھا، شاہ اللہ دتہ نامی ایک ولی نے اس باغ میں قیام کیا اور یہاں ان کی تدفین ہوئی۔ وہ جگہ جو پہلے سادھوؤں، راہبوں یا جوگیوں سے منسوب تھی آج شاہ اللہ دتہ کے نام سے منسوب ہے۔ ان غاروں سے تھوڑے فاصلے پر کنتھیلا گاؤں میں ایک قدیم باولی بھی ہے جس کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ اسے شیر شاہ سوری نے بنایا تھا۔[186]

نیشنل آرٹ گیلری ترمیم

نیشنل آرٹ گیلری اسلام آباد, پاکستان میں ملک کی پہلی قومی آرٹ گیلری ہے۔ جسے مجلس شوریٰ (پاکستان کی پارلیمنٹ) اور ایوان صدر (ایوان صدر) کے سامنے ایک چھوٹی پہاڑی پر بنایا گیا ہے۔ اسے 26 اگست 2007ء بروز اتوار کو عوام کے لیے کھولا گیا۔ نیشنل آرٹ گیلری، پاکستان ایک بڑی تنظیم کا حصہ ہے جسے پاکستان نیشنل کونسل آف دی آرٹس کہا جاتا ہے۔[187]

سید پور ویلج ترمیم

سید پور ویلج، مارگلہ کے دامن میں واقع ہے۔ اس گاؤں میں یونانی، گندھارا اور مغل دور کے آثار ملتے ہیں۔ 2006ء میں اس گاؤں کو ماڈل ولیج میں تبدیل کر دیا گیا۔ تمام تاریخی عمارتوں کی ازسرِنو آرائش کی گئی۔ یہاں پر مختلف ہوٹل اور آرٹ گیلریاں قائم کی گئیں ہیں۔

پاکستان میوزیم آف نیچرل ہسٹری ترمیم

 
پاکستان میوزیم آف نیچرل ہسٹری

پاکستان میوزیم آف نیچرل ہسٹری کا قیام 1976 ء میں پاکستان سائنس فاؤنڈیشن اور وزارت سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے زیر انتظام عمل میں لایا گیا، یہ 4 مختلف شعبہ جات پر مشتمل ہے،۔ جن میں نباتات، حیوانات، ارضیات اور عوامی خدمت شامل ہیں۔ پہلے تین شعبہ جات کا مقصد پاکستان میں موجود پودوں، جانوروں، معدنیات، چٹانوں اور فاسلز کے نمونے اکٹھے کرنا ان کی پہچان اور ان پر تحقیق کرنا ہے، جبکہ چوتھا شعبہ ترتیب و تشہیر سے متعلق ہے۔

ٹریل 3 ترمیم

 
ٹریل 3 اسلام آباد

اسلام آباد کا سب سے مشہور اور قدیم ترین ہائیک ٹریک ٹریل 3 ہے۔ یہ سیکٹر F-6/3 میں مارگلہ روڈ سے شروع ہوتا ہے اور پیر سوہاوہ پر ختم ہوتا ہے۔ یہ ٹریک تقریباً 30 - 50 منٹ کا ٹریک ہوتا ہے۔ ویو پوائنٹ کے بعد یہ مزید 45-60 منٹ تک جاری رہتا ہے اور پیر سوہاوہ پہنچ جاتا ہے، جہاں کھانے کے دو ریستوراں مونال اور لا مونٹانا ہیں۔ مجموعی طور پر، یہ تقریباً ایک گھنٹہ تیس منٹ کی پیدل سفر ہے۔[188]

اہم سیاحتی مقامات ترمیم

اسلام آباد میں درج ذیل اہم سیاحتی مقامات ہیں۔[189]

پارک ترمیم

مساجد ومزارات/عبادت گاہیں ترمیم

قبرستان ترمیم

  • H-8 قبرستان
  • H-9 قبرستان
  • H-11 قبرستان
  • سی ڈی اے قبرستان، برما ٹاؤن
  • ڈی ایچ اے فیز 2 قبرستان، جناح بلیوارڈ
  • گولڑہ شریف قبرستان

حکومتی عمارتیں ترمیم

 
ایوان صدر پاکستان

شاپنگ مالز کی فہرست ترمیم

 
سینٹورس مال
 
گیگا مال، اسلام آباد
  • سینٹورس مال[192]
  • گیگا مال، اسلام آباد
  • صفا گولڈ مال
  • ایمیزون مال
  • اولمپس
  • دی میگنس مال، گلبرگ
  • دی سکتسھ بلیوارڈ
  • نیکسس مال
  • گلبرگ مال اینڈ سگنیچر لیونگ، گلبرگ
  • اسکائی پارک ون، گلبرگ
  • اوپل مال
  • گلبرگ ایرینا، گلبرگ
  • گلبرگ ہائٹس، گلبرگ
  • پرزم ہائٹس، گلبرگ
  • گیوورا انٹرنیشنل ہوٹل اینڈ مال
  • ونسٹن مال
  • دی گیٹ
  • J7 آئیکن
  • J7 ایمپوریم
  • مال آف اسلام آباد
  • شاپنگ مال (TSM)
  • ایکواٹک مال

قابل ذکر رہائشی ترمیم

مشاہیر ترمیم

مشہور شخصیات ترمیم

جڑواں شہر اور سفارت خانے ترمیم

اس وقت اسلام آباد کے سفارتی انکلیو میں مختلف ممالک کے سفارت خانے کام کر رہے ہیں۔[193]

سفارتخانے / ہائی کمیشن ترمیم

  1.   افغانستان
  2.   الجزائر
  3.   ارجنٹائن
  4.   آسٹریلیا
  5.   آسٹریا
  6.   آذربائیجان
  7.   بحرین
  8.   بنگلادیش
  9.   بلجئیم
  10.   بوسنیا و ہرزیگووینا
  11.   برازیل
  12.   برونائی دارالسلام
  13.   بلغاریہ
  14.   کینیڈا
  15.   چین
  16.   کیوبا
  17.   چیک جمہوریہ
  18.   ڈنمارک
  19.   مصر
  20.   اریتریا
  21.   فن لینڈ
  22.   فرانس
  23.   جرمنی
  24.   یونان
  25.   ویٹیکن سٹی
  26.   مجارستان
  27.   بھارت
  28.   انڈونیشیا
  29.   ایران
  30.   عراق
  31.   اطالیہ
  32.   جاپان
  33.   اردن
  34.   قازقستان
  35.   کینیا
  36.   شمالی کوریا
  37.   جنوبی کوریا
  38.   کویت
  39.   کرغیزستان
  40.   لبنان
  41.   لیبیا
  42.   ملائیشیا
  43.   مالدیپ
  44.   موریشس
  45.   المغرب
  46.   میانمار
  47.   نیپال
  48.   نیدرلینڈز
  49.   نائجیریا
  50.   ناروے
  51.   سلطنت عمان
  52.   فلسطین
  53.   فلپائن
  54.   پولینڈ
  55.   قطر
  56.   رومانیہ
  57.   روس
  58.   سعودی عرب
  59.   صومالیہ
  60.   جنوبی افریقا
  61.   ہسپانیہ
  62.   سری لنکا
  63.   سوڈان
  64.   سویڈن
  65.   سویٹزرلینڈ
  66.   سوریہ
  67.   تاجکستان
  68.   تھائی لینڈ
  69.   تونس
  70.   ترکیہ
  71.   ترکمانستان
  72.   یوکرین
  73.   متحدہ عرب امارات
  74.   مملکت متحدہ
  75.   ریاستہائے متحدہ
  76.   ازبکستان
  77.   ویت نام
  78.   یمن

اسلام آباد کے جڑواں شہر ترمیم

یہ شہر اسلام آباد کے شراکت دار (Twin Cities) شہر ہیں۔[194]

اسلام آباد - راولپنڈی جڑواں شہر ترمیم

اسلام آباد اور راولپنڈی کو پاکستان کے جڑواں شہر کہا جاتا ہے۔[206] بلکہ بعض جگہوں پر آج بھی دونوں شہروں کے تھانوں کو مسئلہ ہوتا ہے کہ یہ حدود اسلام آباد کی ہے یا راولپنڈی کی۔ دو ہزار سال پہلے بھی گندھارا سندھ کی تہذیب کا ایک جیتا جاگتا مرکز تھا اور آج پھر تاریخ نے جو انگڑائی لی ہے اور اسلام آباد کو پاکستان کا مرکز بنا دیا ہے۔ یہی نہیں بلکہ یہاں دنیا کی دو بڑی تجارتی شاہراہوں کا ملاپ ہو رہا ہے۔ ایک چین کو مشرقِ وسطیٰ سے ملاتی ہے تو دوسری بھارت اور بنگلہ دیش سمیت جنوبی ایشیاء کو کابل اور ماسکو تک لے جاتی ہے۔ ان دونوں شاہراہوں پر ابھی بین الاقوامی تجارت شروع نہیں ہوئی لیکن جب بھی ہو گی راولپنڈی اور اسلام آباد پاکستان کا سب سے بڑا شہری علاقہ بن جائیں گے۔ یہاں دنیا بھر سے تاجر اور سیاح آئیں گے.[207]

شہر نتائج ترمیم

درجہ شہر آبادی (1998 مردم شماری) آبادی (2017 مردم شماری) اضافہ صوبہ
1 کراچی 9,856,318 16,051,521 [208] 62.86% سندھ
2 لاہور 5,143,495 11,126,285  116.32% پنجاب، پاکستان
3 فیصل آباد 2,008,861 3,203,846 59.49% پنجاب، پاکستان
4 راولپنڈی 1,409,768 2,098,231 48.84% پنجاب، پاکستان
5 گوجرانوالہ 1,132,509 2,027,001 78.98% پنجاب، پاکستان
6 پشاور 982,816 1,970,042 100.45% خیبر پختونخوا
7 ملتان 1,197,384 1,871,843  56.33% پنجاب، پاکستان
8 حیدرآباد، سندھ 1,166,894 1,732,693 48.49% سندھ
9 اسلام آباد 529,180 1,014,825 91.77% اسلام آباد وفاقی دارالحکومت علاقہ
10 کوئٹہ 565,137 1,001,205 77.16% بلوچستان

تصاویر ترمیم

مزید دیکھیے ترمیم

حوالہ جات ترمیم

  1.    "صفحہ اسلام آباد في GeoNames ID"۔ GeoNames ID۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 مئی 2024ء 
  2. "Islamabad"۔ UK English Dictionary۔ Oxford University Press۔ 18 مئی 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  3. "رتبها"۔ rattibha.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  4. Peter Shirley، J. C. Moughtin (11 August 2006)۔ Urban Design: Green Dimensions (بزبان انگریزی)۔ Routledge۔ ISBN 978-1-136-35055-9 
  5. Atle Hetland (23 March 2014)۔ "Islamabad – a city only for the rich?"۔ DAWN.COM 
  6. ^ ا ب "Safe City Project gets operational: Islooites promised safety – The Express Tribune"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 6 June 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جون 2016 
  7. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "POPULATION BY RELIGION" (PDF)۔ 17 جون 2006 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  8. ^ ا ب "PML-Q opposes Hindu temple in Islamabad"۔ Dawn۔ 2 July 2020۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 نومبر 2020 
  9. "SALIENT FEATURES OF FINAL RESULTS CENSUS-2017" (PDF)۔ 29 اگست 2021 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2021 
  10. "اسلام آباد: پاکستان کے وفاقی دارالحکومت کا نام کس نے اور کیسے تجویز کیا؟ - BBC News اردو"۔ BBC News اردو۔ Bbc.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 فروری 2022 
  11. "Capital Development Authority"۔ www.visitislamabad.net۔ 12 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جون 2016 
  12. "National Monument: Structure reflects history of Pakistan – The Express Tribune"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 29 August 2013 
  13. "Crime rate in Islamabad drops, claim police"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 28 مارچ 2015 
  14. HEC, Pakistan۔ "HEC University Rankings by Category"۔ 27 فروری 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  15. HEC, Pakistan۔ "HEC University Rankings by Category"۔ 27 فروری 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  16. "Safe City Project gets operational: Islooites promised safety – The Express Tribune"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 6 June 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 جون 2016 
  17. "Crime rate in Islamabad drops, claim police"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 28 March 2015 
  18. "اسلام آباد: پاکستان کے وفاقی دارالحکومت کا نام کس نے اور کیسے تجویز کیا؟ - BBC News اردو"۔ BBC News اردو۔ Bbc.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 فروری 2022 
  19. Adrian Room (13 December 2005)۔ Placenames of the World۔ McFarland & Company۔ صفحہ: 177۔ ISBN 978-0-7864-2248-7 
  20. Pakistan Defence Ministry۔ "Potohar"۔ 06 نومبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 اگست 2009 
  21. LEAD۔ "Background on the Potohar Plateau"۔ 20 جولا‎ئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  22. Iqbal Amjid (29 February 2016)۔ "Taxila: Mughal-era coin & 'longest staircase' unearthed near Ban Faqiran"۔ Daily Dawn News 
  23. https://tribune.com.pk/author/54 (2016-03-27)۔ "Saidpur Village – a witness to history"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 مئی 2023 
  24. "Sacred rocks of Islamabad"۔ Dawn۔ 2 August 2009۔ 07 اگست 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 جون 2010 
  25. "Shah Allah Ditta Caves" 
  26. "Islamabad: Shah Allah Ditta caves need immediate preservation | Pak Tea House"۔ pakteahouse.net۔ 26 اکتوبر 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  27. "Another Buddhist site found in Islamabad"۔ 14 April 2011 
  28. Martina Nicolls (1 December 2010)۔ Kashmir on a Knife-Edge۔ Eloquent Books۔ صفحہ: 124۔ ISBN 978-1-60976-413-5۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2012 
  29. Sarina Singh، Lindsay Brown، Paul Clammer، Rodney Cocks، John Mock (1 May 2008)۔ Lonely Planet Pakistan and the Karakoram Highway (7th ایڈیشن)۔ Lonely Planet۔ صفحہ: 72۔ ISBN 978-1-74104-542-0۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2012 
  30. Ayesha Shahid (25 February 2012)۔ "What's in a name?"۔ Dawn۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 فروری 2018 
  31. آصف محمود (جنوری 2021ء)۔ "باغ کلاں کی آب پارہ"۔ ماہنامہ سوئے حرم۔ اخذ شدہ بتاریخ 10 اپریل 2023ء 
  32. "باغ کلاں کی آب پارہ"۔ suayharam.com (بزبان عربی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  33. Muhammad Fahad Ul Hassan (2022-09-18)۔ "History Of Islamabad in Urdu"۔ Urdu Articles (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  34. "اسلام آباد کےنادیدہ گاؤں | Tanqeed"۔ www.tanqeed.org (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  35. Muhammad Fahad Ul Hassan (2022-09-18)۔ "History Of Islamabad in Urdu"۔ Urdu Articles (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  36. قلب علی (12 جون 2016ء)۔ "Rawal Dam — where nature thrives"۔ ڈان نیوز 
  37. Bahria University۔ "Official website"۔ 01 مارچ 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  38. Air University۔ "Official website"۔ 08 فروری 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 ستمبر 2009 
  39. National Defence University۔ "Official website" 
  40. "Govt to set up 24 electric vehicle charging stations across country, says Omar Ayub"۔ Pakistan Today۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 اگست 2020 
  41. "First electric vehicle charging station begins functioning in Islamabad"۔ Express Tribune۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 اگست 2020 
  42. Maneesha Tikekar (1 January 2004)۔ Across the Wagah: An Indian's Sojourn in Pakistan۔ Promilla۔ صفحہ: 32–39۔ ISBN 978-8185002347۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2012 
  43. ^ ا ب پ "Islamabad Capital Territoty Map (Master Plan Of Islamabad) on Capital Development Authority website"۔ cda.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 جنوری 2021 
  44. Zones and sectors of Islamabad on Capital Development Authority website Retrieved 21 January 2021
  45. Zones and sectors of Islamabad on Capital Development Authority website Retrieved 21 January 2021
  46. ^ ا ب Asad Elahi (2006)۔ "2: Population"۔ Pakistan Statistical Pocket Book 2006۔ Islamabad, Pakistan: Government of Pakistan: Statistics Division۔ صفحہ: 28۔ 30 مارچ 2018 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 29 مارچ 2018 
  47. DISTRICT WISE CENSUS RESULTS CENSUS 2017. Pakistan Bureau of Statistics. 2017. p. 13. Archived from the original on 2017-08-29. https://web.archive.org/web/20170829164748/http://www.pbscensus.gov.pk/sites/default/files/DISTRICT_WISE_CENSUS_RESULTS_CENSUS_2017.pdf۔ اخذ کردہ بتاریخ 29 مارچ 2018. 
  48. "پاکستان کے 10بڑے شہر، آبادی کتنی؟"۔ Urdu News – اردو نیوز۔ 2017-08-28۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  49. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "POPULATION BY RELIGION" (PDF)۔ 17 جون 2006 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  50. "SALIENT FEATURES OF FINAL RESULTS CENSUS-2017" (PDF)۔ 29 اگست 2021 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2021 
  51. PBC 2017 Statistics (PDF) 
  52. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "MIGRANT POPULATION BY PLACE OF BIRTH" (PDF)۔ 13 نومبر 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  53. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "POPULATION BY SELECTIVE AGE GROUPS" (PDF)۔ 27 اگست 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  54. "Literacy Rate" (PDF)۔ Pakistan Bureau of Statistics۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 ستمبر 2013 
  55. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "Population by Level of Education"۔ 20 جولا‎ئی 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  56. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "LABOR FORCE PARTICIPATION RATES" (PDF)۔ 27 اگست 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  57. Population Census Organization, Govt. of Pakistan۔ "UN-EMPLOYMENT RATES" (PDF)۔ 27 اگست 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  58. "Islamabad Climate, Weather By Month, Average Temperature (Pakistan) - Weather Spark"۔ weatherspark.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  59. "Islamabad Climate Normals 1961-1990"۔ National Oceanic and Atmospheric Administration۔ اخذ شدہ بتاریخ January 16, 2012 
  60. "Extremes of Islamabad"۔ Pakistan Meteorological Department۔ اخذ شدہ بتاریخ February 1, 2015 
  61. "THE BEST Islamabad Capital Territory Dams (Updated 2023)"۔ Tripadvisor (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اگست 2023 
  62. "Chirah Dam: Senators annoyed over inordinate delays"۔ 3 January 2017 
  63. "Urban growth monitoring along Islamabad Highway"۔ GIS Development 
  64. Jonathan M. Bloom، مدیر (23 March 2009)۔ The Grove Encyclopedia of Islamic Art & Architecture۔ USA: Oxford University Press۔ صفحہ: 309۔ ISBN 978-0-19-530991-1 
  65. "City of Islamabad"۔ Capital Development Authority, Govt. of Pakistan۔ 12 اکتوبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2014 
  66. CDA Islamabad۔ "History of Islamabad"۔ 12 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  67. "Islamabad | City, Population, & Meaning | Britannica"۔ www.britannica.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  68. Zones and sectors of Islamabad on Capital Development Authority website Retrieved 21 January 2021
  69. National Monument — a symbol of unity آرکائیو شدہ 15 جنوری 2009 بذریعہ وے بیک مشین. Daily Times. 30 March. Retrieved 23 March 2008
  70. Allison Lee Palmer (12 October 2009)۔ The A to Z of Architecture۔ Scarecrow Press۔ صفحہ: 149۔ ISBN 978-0-8108-6895-3۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2012 
  71. Archnet۔ "Faisal Mosque"۔ 03 مئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  72. Islamabad Stock Exchange-Official Website۔ "Islamabad Stock Exchange Towers"۔ 04 فروری 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  73. Pakistan Software Export Board۔ "Islamabad"۔ 05 مئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  74. "Islamabad to get IT Park by 2020"۔ Express Tribune۔ 9 July 2017۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 دسمبر 2017 
  75. "Doing Business in Islamabad"۔ Doing Business۔ Doing Business (World Bank)۔ 2010۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 دسمبر 2017 
  76. Pakistan Software Export Board۔ "Islamabad"۔ 05 مئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  77. ISE-Official website۔ "About ISE"۔ 17 جون 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  78. "PM lays foundation stone of Islamabad Model Special Economic Zone"۔ www.radio.gov.pk 
  79. "CPEC 2013-2023: PM Shehbaz lays foundation of Islamabad Model Special Economic Zone"۔ July 18, 2023 
  80. NESPAK۔ "Faizabad Interchange"۔ 10 اگست 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  81. ^ ا ب National Highway Authority Pakistan۔ "Motorway's of Pakistan"۔ 06 اکتوبر 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 04 اپریل 2023 
  82. "Capital Development Authority Projects"۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 نومبر 2016 
  83. NESPAK۔ "Faizabad Interchange"۔ 10 اگست 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  84. Hareem Qamar (2022-03-21)۔ "Popular Roads in Islamabad: Facts, Routes & More"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 مئی 2023 
  85. A Reporter (28 January 2014)۔ "Shahbaz to inaugurate work on Metro Bus Service on Feb 28"۔ dawn.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2016 
  86. "PM Shehbaz Sharif confident his 'speedy work' will frighten ex-premier Imran Khan"۔ GEO News (بزبان انگریزی)۔ 2022-04-18۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2022 
  87. "Metro Bus extension: NHA assures timely completion - The Express Tribune"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2017-11-16۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 مارچ 2018 
  88. "PM directs CDA to start Islamabad metro bus"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2022-04-14۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جولا‎ئی 2022 
  89. Minaal Shamimi (2022-03-27)۔ "Islamabad and Rawalpindi Metro Bus Routes"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  90. "Metro bus project: Capital's civic managers cave in to pressure from Punjab govt"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2014-03-11۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 اپریل 2022 
  91. "CDA to hand over metro bus service operations to private company"۔ The News International (بزبان انگریزی)۔ 20 July 2022۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2022 
  92. "وزیراعظم نے5 روز میں اسلام آباد میٹرو بس ائیرپورٹ تک چلانےکا حکم دیدیا"۔ urdu.geo.tv (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2022 
  93. ^ ا ب "Green, Blue line metro bus services to start operation in next 45 days: CDA"۔ Dawn (بزبان انگریزی)۔ 2022-06-09۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 جولا‎ئی 2022 
  94. https://www.nha.gov.pk۔ "Islamabad-Peshawar Motorway (M-1)"۔ www.nha.gov.pk (بزبان انگریزی)۔ 18 مئی 2023 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  95. https://nha.gov.pk۔ "Lahore-Islamabad Motorway (M-2)"۔ nha.gov.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  96. Ali Gulrez (2021-12-25)۔ "List of Motorways in Pakistan"۔ INCPak (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  97. "Fwo Smart Motorways"۔ fwosmartmotorways.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  98. Islamabad Airport۔ "Islamabad Airport"۔ Islamabad Airport 
  99. "New Islamabad airport finally operational after years of delay"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 3 May 2018۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2018 
  100. "Islamabad International Airport - IIAP - اسلام آباد انٹرنیشنل ائیرپورٹ"۔ islamabadairport.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  101. "Airports Near Me - Rawalpindi, Pakistan | Travelmath"۔ www.travelmath.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  102. "Benazir Bhutto International Airport - BBIAP Timeline"۔ caapakistan.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  103. "Public Transport Fares"۔ ICT Administration (بزبان انگریزی)۔ 02 اگست 2022 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2022 
  104. "Golra Railway Station, museum not appealing any more"۔ Pakistan Today۔ اخذ شدہ بتاریخ April 21, 2012 
  105. "Guided tours on double-decker buses to launch in Islamabad and Rawalpindi"۔ Islamabad scene (بزبان انگریزی) 
  106. WikiMapia۔ "Pharwala Fort" 
  107. ^ ا ب Ministry of Tourism, Government of Pakistan۔ "Forts of Pakistan"۔ 27 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  108. "Sidpur Village"۔ The Daily Times 
  109. "Golra Sharif" 
  110. Viamigo۔ "RAWALPINDI/ISLAMABAD CITIES TOUR"۔ 17 جولا‎ئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 اگست 2009 
  111. "Jang Epaper Lahore اسلام آباد ادبی میلہ جاری ،ملک کے نامور لکھاریوں، شعراء،فنکاروں کی شرکت"۔ e.jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2023 
  112. "اکادمی ادیبات پاکستان"۔ pal.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2023 
  113. "ادارۂ فروغِ قومی زبان :: سرورق"۔ nlpd.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2023 
  114. Kashif Abbasi (June 9, 2019)۔ "Islamabad's main library has all that a reader needs"۔ DAWN.COM 
  115. Stuart Murray (2012)۔ "National Library of Pakistan" (google books)۔ Library: an illustrated history۔ New York: W W Norton۔ ISBN 978-1-61608-453-0۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 اگست 2014 
  116. "Independence Day: Pakistan celebrates diamond jubilee with patriotic zeal and fervour"۔ Dawn (بزبان انگریزی)۔ 2022-08-14۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2023 
  117. Danish Hussain (2015-07-20)۔ "Loss-making entity : Govt goes back on plan to privatise Jinnah Convention Centre"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2023 
  118. "1,255 graduates awarded degrees at FJWU convocation"۔ The News International (بزبان انگریزی)۔ 2023-01-28۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 اپریل 2023 
  119. National Archives of Pakistan website آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ nap.noirworks.com (Error: unknown archive URL) , Retrieved 27 June 2017
  120. Mission and Vision of National Archive of Pakistan آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ nap.gov.pk (Error: unknown archive URL) , Retrieved 27 June 2017
  121. 'National Archives of Pakistan: Practical issues limit access to historic documents', The Express Tribune newspaper, Published 28 March 2011, Retrieved 27 June 2017
  122. "Upcoming Pakistan Public Holidays (Asia)"۔ The qppstudio.net website (بزبان انگریزی)۔ 2023-07-01۔ اخذ شدہ بتاریخ 30 جولا‎ئی 2023 
  123. "The Official Web Gateway to Pakistan"۔ pakistan.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  124. "National Assembly of Pakistan"۔ na.gov.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  125. Irfan Haider (29 July 2015)۔ "NA passes Islamabad local government bill"۔ Dawn۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2016 
  126. Muhammad Anis (2 March 2016)۔ "70% CDA employees to be transferred to Islamabad Metropolitan Corporation"۔ The Nation۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2016 
  127. Shamshad Mangat (9 September 2016)۔ "Islamabad mayor seeks explanation from latecomers"۔ Daily Times۔ 16 نومبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2016 
  128. Kashif Abbasi (6 September 2016)۔ "CDA handed over to Islamabad's mayor"۔ Dawn۔ اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2016 
  129. Kashif Abbasi (2022-08-27)۔ "ECP issues final list of capital's 101 union councils"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  130. Malik Asad (2023-02-15)۔ "IHC seeks fresh schedule for local govt polls"۔ DAWN.COM (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اگست 2023 
  131. MM News Staff (2023-05-09)۔ "Islamabad LG elections delimitation list released, EVMs not to be used in elections"۔ MM News (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اگست 2023 
  132. Dulyapak Preecharushh (6 April 2011)۔ "Myanmar's New Capital City of Naypyidaw"۔ $1 میں Stanley D. Brunn۔ Engineering Earth: The Impacts of Megaengineering Projects (1st ایڈیشن)۔ Springer۔ صفحہ: 1041۔ ISBN 978-9048199198 
  133. Muhammad۔ "Planning of Islamabad and Rawalpindi" (PDF) 
  134. "Margalla Avenue to benefit commuters of KPK, traffic on Kashmir Highway"۔ OnePakistan۔ 04 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 07 اکتوبر 2013 
  135. profilbaru.com۔ "Islamabad-Rawalpindi metropolitan area - Profilbaru.Com"۔ profilbaru.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  136. TheNews website۔ "Punjab tops in infant mortality, poverty, income inequality"۔ 06 نومبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 27 دسمبر 2021 
  137. PIMS-Official website۔ "About PIMS"۔ 27 دسمبر 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  138. PIMS-Official website۔ "Departments at PIMS"۔ 28 فروری 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  139. PIMS-Official website۔ "Islamabad Hospital"۔ 27 دسمبر 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  140. PIMS-Official website۔ "Children Hospital"۔ 15 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  141. PIMS-Official website۔ "Maternal & Child Health Care Center"۔ 01 نومبر 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  142. PIMS-Official website۔ "Quaid-i-Azam Postgraduate Medical College"۔ 15 جولا‎ئی 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  143. ^ ا ب PAEC General Hospital-Official website۔ "About PAEC Hospital"۔ 06 جنوری 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  144. PAEC General Hospital-Official website۔ "Functions of Major Departments"۔ 06 جنوری 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  145. SHIFA International Hospital-Official website۔ "SHIFA History"۔ 23 اپریل 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  146. Federal Bureau of Statistics۔ "Hospitals/Dispensaries and Beds by Province" (PDF)۔ 13 نومبر 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  147. Federal Bureau of Statistics۔ "Hospitals/Dispensaries and Beds by Province" (PDF)۔ 13 نومبر 2010 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  148. SHIFA International Hospital-Official website۔ "SHIFA History"۔ 23 اپریل 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  149. PIMS-Official website۔ "Quaid-i-Azam Postgraduate Medical College"۔ 15 جولا‎ئی 2005 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  150. PAEC General Hospital-Official website۔ "Functions of Major Departments"۔ 06 جنوری 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  151. Sports facilities at Pakistan Sports Complex http://www.sports.gov.pk/SportsFacilities/sportsfacilities.htm#cycling آرکائیو شدہ 8 مئی 2016 بذریعہ وے بیک مشین
  152. "ARY Digital Network President Salman Iqbal congratulates Islamabad United over winning PSL"۔ arynews.tv۔ 24 February 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2016 
  153. "Ronchi, Shadab seal Islamabad's second PSL title"۔ ESPNcricinfo (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 25 مارچ 2019 
  154. John Arran (2012)۔ "A Guide to Climbing in Margalla" (PDF)۔ Rock Climbing Islamabad۔ Pakistan Alpine Institute۔ 22 اکتوبر 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2013 
  155. Sports facilities at Pakistan Sports Complex http://www.sports.gov.pk/SportsFacilities/sportsfacilities.htm#cycling آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ sports.gov.pk (Error: unknown archive URL)
  156. "Pakistan Sports Board, Islamabad"۔ Pakistan Sports Board۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 جنوری 2022 
  157. http://www.sports.gov.pk/SportsFacilities/sportsfacilities.htm آرکائیو شدہ (Date missing) بذریعہ sports.gov.pk (Error: unknown archive URL) , Sports Facilities, Government of Pakistan website, Retrieved 11 Aug 2016
  158. http://mapcarta.com/26422906, Liaquat Gymnasium map in Islamabad on mapcarta.com website, Retrieved 11 Aug 2016
  159. Charles S. Benson (1972)۔ "New Cities and Educational Planning"۔ $1 میں Dennis L. Roberts۔ Planning Urban Education: New Techniques to Transform Learning in the City۔ Educational Technology Publications۔ صفحہ: 111۔ ISBN 978-0-87778-024-3۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 جولا‎ئی 2012 
  160. ^ ا ب AEPAM۔ "Pakistan Education Statistics 2008–09" (PDF)۔ 17 جنوری 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  161. "A-Z list of Islamabad CT (Pakistan) Universities"۔ www.4icu.org (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  162. ^ ا ب AEPAM۔ "Pakistan Education Statistics 2008–09" (PDF)۔ 17 جنوری 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  163. ^ ا ب پ AEPAM۔ "Pakistan Education Statistics 2008–09" (PDF)۔ 17 جنوری 2013 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ 
  164. HEC, Pakistan۔ "HEC University Rankings by Category"۔ 27 فروری 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  165. "About – International Islamic University" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2023 
  166. "Brief history"۔ 15 ستمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 مئی 2020 
  167. "25 Years of Allama Iqbal Open University, Islamabad (scroll down to this section with University Profile)"۔ paknetmag.com website۔ اخذ شدہ بتاریخ 02 مئی 2020 
  168. "AIOU AT A GLANCE | Education For All"۔ www.aiou.edu.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 جون 2023 
  169. Google maps۔ "Address of Federal Urdu University"۔ Google Maps۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 مئی 2018 
  170. Amanullah Bashar (6 October 2006)۔ "Urdu University: A Gift Of The Present Government"۔ Pakistan Economist (magazine)۔ 12 مئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 مئی 2018 
  171. "Prof Athar Ata appointed as permanent Fuuast VC"۔ The News International۔ 26 May 2022۔ اخذ شدہ بتاریخ 06 جون 2022 
  172. "All Pakistani Urdu Newspapers - Online Pakistan Newspapers list | Pk Govt.approved Online Newspapers | تمام اردو اخبارات، پاکستانی اخبارات کے ساتھ ساتھ"۔ pakistaninewspaperlist.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  173. ^ ا ب "All Pakistan Newspapers Society | Home"۔ www.apns.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  174. "Radio Pakistan"۔ www.radio.gov.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  175. "PTV's Official Web Portal"۔ www.ptv.com.pk (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  176. Narmeen Taimoor (2022-05-27)۔ "Best Cinemas in Islamabad and Rawalpindi"۔ Graana.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 اگست 2023 
  177. BookItNow۔ "Cinemas In Islamabad | Bookitnow.pk"۔ Bookitnowpk۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 اگست 2023 
  178. "Explore Pakistan | Pakistan Post | Federal Capital Islamabad Pakistan post code directory"۔ www.findpk.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  179. "Faisal Mosque Historical Facts and Pictures | The History Hub"۔ www.thehistoryhub.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2018 
  180. "Shah Faisal Mosque: The Biggest Mosque in Pakistan | Urdu Pakistan"۔ 28 ستمبر 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020 
  181. "Let's Visit Pakistan National Monument and Museum in Islamabad Pakistan by Gulrukh Tausif | Traveler's Guide 360"۔ 07 اپریل 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2014 
  182. "Archived copy"۔ 28 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2020 
  183. "لوک ورثہ میوزیم اسلام آباد، پاکستانی ثقافت کی منہ بولتی تصویر"۔ Urdu News – اردو نیوز۔ 2020-09-12۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  184. "پاکستان کی 'قومی مسجد' جس کی تعمیر کا ذمہ لینے والے سعودی بادشاہ اسے مکمل ہوتا نہ دیکھ سکے"۔ BBC News اردو۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  185. "پاکستان مونومنٹ میوزیم... ایک قومی یادگار"۔ jang.com.pk۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 مئی 2023 
  186. "Shah Allah Ditta caves – relic of ancient Buddhism"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 2022-06-09۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2023 
  187. "About – Pakistan National Council of the Arts" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولا‎ئی 2023 
  188. "Hiking Trail 3"۔ 11 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  189. Maham Tahir (2021-04-09)۔ "اسلام آباد کے مشہور سیاحتی مقامات"۔ Graana.com۔ اخذ شدہ بتاریخ 18 مئی 2023 
  190. "Pakistan National Monument Historical Facts and Pictures | The History Hub"۔ www.thehistoryhub.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2018 
  191. "Faisal Mosque Historical Facts and Pictures | The History Hub"۔ www.thehistoryhub.com (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 11 جولا‎ئی 2018 
  192. "Which Are The Top Islamabad Shopping Malls?" 
  193. "» List of Embassies in Pakistan" (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  194. "Sister cities of Islamabad — sistercity.info"۔ en.sistercity.info۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  195. "Twin towns of Minsk"۔ حقوق نسخہ 2008 The department of protocol and international relations of Minsk City Executive Committee۔ 30 اگست 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 8 دسمبر 2008 
  196. Greater Amman Municipality-Official website۔ "Twin city agreements"۔ 14 دسمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  197. ^ ا ب پ "The making of a slum city"۔ The Express Tribune (بزبان انگریزی)۔ 9 دسمبر 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2020 
  198. ^ ا ب پ "Islamabad to get new sister city"۔ ڈان (اخبار)۔ 5 جنوری 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2020 
  199. Greater Municipality of Ankara۔ "Sister Cities of Ankara"۔ 5 جولائی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ 
  200. Beijing International-Official website۔ "Sister cities"۔ 26 مئی 2010 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 مئی 2015 
  201. "Daily Times"۔ Daily Times 
  202. BeritaSatu.com۔ "KONI DKI Jalin Kerja Sama "Sister City" dengan 21 Kota Dunia"۔ beritasatu.com (بزبان انڈونیشیائی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2020 
  203. Zaffar Abbas، مدیر (5 جنوری 2016)۔ "Islamabad to get new sister city"۔ ڈان (اخبار)۔ Karachi, Pakistan: ڈان میڈیا گروپ 
  204. "Islamabad declared sister city of Minsk"۔ The Nation (بزبان انگریزی)۔ 5 جنوری 2016۔ اخذ شدہ بتاریخ 31 جولائی 2020 
  205. Fazal Sher – Daily Times۔ "Islamabad, Seoul to be made sister cities" 
  206. "What are the twin cities of Pakistan? How many twin cities are there in the world? Write names."۔ Quora (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  207. "What are twin cities in Pakistan?"۔ www.calendar-uk.co.uk۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 مئی 2023 
  208. "آرکائیو کاپی" (PDF)۔ 16 جون 2020 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 15 جنوری 2022