جیمز اے جے نوسباومر, [1] جسے جیمی نسباؤمربھی کہا جاتا ہے، (پیدائش 27 جون 1987) ایک کرکٹ کھلاڑی ہے جو گرنسی کرکٹ ٹیم کے لیے کھیلتا ہے۔ [1] اس نے 2014ء آئی سی سی ورلڈ کرکٹ لیگ ڈویژن فائیو ٹورنامنٹ میں کھیلا۔ [2] اس نے 2016ء کے آئی سی سی ورلڈ کرکٹ لیگ ڈویژن فائیو ٹورنامنٹ میں کھیلا۔ [3]

جیمی نسباؤمر
ذاتی معلومات
پیدائش (1987-06-27) 27 جون 1987 (عمر 36 برس)
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
ماخذ: Cricinfo، 19 جولائی 2015

جیمی نسباؤمر آسٹریا کے ٹونی نسباؤمر کا بیٹا ہے، جو گرنسی میں بزنس مین تھا۔ [4] اس نے گرنسی کے الزبتھ کالج میں اسکول میں تعلیم حاصل کی۔ اسکول میں اپنے وقت کے دوران، اس نے کرکٹ میں اسکول کی نمائندگی کی، اس نے اپنے پہلے میچ میں پہلی سنچری اسکور کی جس کے بعد ایک کھلاڑی کو تبدیل کرنے کے لیے بلایا گیا جو ساؤتھمپٹن کے روز باؤل میں آسٹریلیا کے خلاف انگلینڈ دیکھنے گیا تھا۔ [5] انھوں نے کوبو کرکٹ کلب کے لیے کلب کرکٹ بھی کھیلی۔ 2009ء میں، انھیں جنوبی افریقہ میں پری سیزن کے تربیتی کیمپ میں سسیکس کاؤنٹی کرکٹ کلب میں شامل ہونے کی دعوت دی گئی۔ [6] 2010ء میں، وہ ایک روزہ ٹورنامنٹ میں سسیکس کی اکیڈمی کے لیے کھیلا۔ [7] 2012 ءمیں لندن میں 2012ء کے سمر اولمپکس کے دوران، انھوں نے ایک تبصرہ کا اظہار کیا کہ " ڈریسیج صرف ایک کھیل نہیں ہے" کے بعد سارک میں پیدا ہونے والے کارل ہیسٹر نے ٹیم ڈریسج ایونٹ میں طلائی تمغا جیتا تھا۔ [8]

حوالہ جات

ترمیم
  1. ^ ا ب "Jamie Nussbaumer"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جولا‎ئی 2015 
  2. "ICC World Cricket League Division Five, Cayman Islands v Guernsey at Kuala Lumpur, Mar 6, 2014"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 جولا‎ئی 2015 
  3. "ICC World Cricket League Division Five, 3rd Place Playoff: Guernsey v Vanuatu at St Martin, May 28, 2016"۔ ESPN Cricinfo۔ اخذ شدہ بتاریخ 28 مئی 2016 
  4. "Cobo history"۔ Cobo Bay Hotel۔ 20 جون 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020 
  5. "Cobo Jamie comes of age"۔ Guernsey Press۔ 14 June 2005۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020 
  6. "Guernsey crickets get "lifetime chance""۔ BBC Sport۔ 24 December 2009۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020 
  7. "Sussex call on our Jamie"۔ Guernsey Press۔ 31 July 2010۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020 
  8. Simon De La Rue (8 August 2012)۔ "Sport that won historic Olympic gold fights for respect"۔ BBC Sport۔ اخذ شدہ بتاریخ 01 مارچ 2020