"ایران میں سنیت سے شیعت کی صفوی تبدیلی" کے نسخوں کے درمیان فرق

(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
(ٹیگ: ترمیم از موبائل موبائل ویب ترمیم)
* 1501ء میں ، اسماعیل نے ایران سے باہر بسنے والے تمام شیعوں کو ایران آنے کی دعوت دی اور انہیں سنی اکثریت سے تحفظ کی یقین دہانی کروائی گئی۔ <ref>Iraq: Old Land, New Nation in Conflict. William Spencer, p. 51.</ref>
 
== سنی اور شیعہ علمائے کرام (علمائے کرام) کا انجام ==
 
=== سنی علماء ===
فتح کے بعد ، اسماعیل نے ایرانی آبادی پر اثناعشری کو مسلط کرکے ایران کے مذہبی منظر نامے کو تبدیل کرنا شروع کیا۔ چونکہ اس آبادی نے سنی اسلام قبول کیا تھا اور چونکہ اس وقت ایران میں شیعیت کی شکل ایک کم تعلیم یافتہ صورت میں تھی، اسماعیل نے عربی بولنے والے علاقوں کے روایتی تشیعی مراکز سے نئے شیعہ علماء کو ، مذہبی قیادت تشکیل دینے کے لئے زیادہ تر جنوبی [[لبنان|لبنان کے]] [[جبل عامل |جبل عامل]]، [[کوہ لبنان|لبنان]] ، [[سوریہ|شام]]، [[سرزمین بحرین|مشرقی عربستان]] اور [[جنوبی عراق |جنوبی عراق]] سے درآمد کیا۔ <ref>{{حوالہ کتاب|url=https://books.google.com/books?id=HZNpBgAAQBAJ&dq=safavids+imported+lebanon&hl=nl&source=gbs_navlinks_s|title=Iran and the World in the Safavid Age|last=Floor|first=Willem|last2=Herzig|first2=Edmund|date=2015|publisher=I.B.Tauris|isbn=978-1780769905|page=20|quote=In fact, at the start of the Safavid period Twelver Shi'ism was imported into Iran largely from Syria and Mount Lebanon (...)}}</ref> <ref>{{حوالہ کتاب|url=https://books.google.com/books?id=v4Yr4foWFFgC&dq=safavids+imported+syria&hl=nl&source=gbs_navlinks_s|title=Iran Under the Safavids|last=Savory|first=Roger|date=2007|publisher=Cambridge University Press|isbn=978-0521042512|location=Cambridge|page=30}}</ref> <ref>{{حوالہ ویب|last=Abisaab|first=Rula|title=JABAL ʿĀMEL|url=http://www.iranicaonline.org/articles/jabal-amel-2|website=Encyclopaedia Iranica|accessdate=15 May 2016}}</ref> <ref>{{حوالہ کتاب|url=https://books.google.com/books?id=IWxZAQAAQBAJ&dq=safavids+jabal+amil&hl=nl&source=gbs_navlinks_s|title=The Shifts in Hizbullah's Ideology: Religious Ideology, Political Ideology and Political Program|last=Alagha|first=Joseph Elie|date=2006|publisher=Amsterdam University Press|isbn=978-9053569108|location=Amsterdam|page=20}}</ref> اسماعیل نے وفاداری کے بدلے میں انہیں زمین اور رقم کی پیش کش کی۔ ان علمائے کرام نے اثناعشری شیعہ کے نظریے کی تعلیم دی اور اسے عوام تک رسائ دی اور سرگرمی سے تبدیلی [[فقہی مذہب|مذہب]] کی ترغیب دی۔ <ref name="Islam pg.170">The failure of political Islam, By Olivier Roy, Carol Volk, pg.170</ref> <ref>The Cambridge illustrated history of the Islamic world, By Francis Robinson, pg.72</ref> <ref>The Middle East and Islamic world reader, By [[Marvin Gettleman|Marvin E. Gettleman]], Stuart Schaar, pg.42</ref> <ref name="Peter N. Stearns pg.360">The Encyclopedia of world history: ancient, medieval, and modern ... By Peter N. Stearns, William Leonard Langer, pg.360</ref> اس بات پر زور دینے کے لئے کہ ایران میں اثناعشری کی تعداد کتنی کم تھی ، ایک سرگزشت ہمیں بتاتا ہے کہ اسماعیل کے دارالحکومت تبریز میں اسے صرف ایک شیعہ عبارت مل سکی ۔ <ref name="Iran pg.91">Iran: religion, politics, and society : collected essays, By Nikki R. Keddie, pg.91</ref> یہ بات مشتبہ ہے کہ اسماعیل اور اس کے پیروکار کیونکر عرب شیعہ علمائے کرام کی حمایت کے بغیر تمام ایرانی لوگوں کو ایک نیا عقیدہ اپنانے پر مجبور کرنے میں کامیاب ہوسکتے ہیں؟ <ref name="Iran pg.90">Iran: a short history : from Islamization to the present, By Monika Gronke, pg.90</ref> صفوی فارس کے حکمرانوں نے بھی ان غیر ملکی شیعہ مذہبی علماء کو فارس پر اپنی حکمرانی کے جواز فراہم کرنے کے لئے اپنی عدالت میں مدعو کیا۔ <ref>[https://books.google.com/books?id=l1ybylkCCLAC&pg=PA13&dq=safavid+persia+conversion&lr=&as_brr=3&cd=66#v=onepage&q=&f=false Shi‘ite Lebanon: transnational religion and the making of national identities, By Roschanack Shaery-Eisenlohr, pg.12–13]</ref>
 
[[عباس اول]] نے بھی اپنے دور حکومت میں زیادہ سے زیادہ عرب شیعہ علماء کو ایران درآمد کیا، ان کے لئے بہت سے [[مدرسہ (اسلام)|مدراس]] (دینی مدارس) سمیت دیگر مذہبی ادارے بنائے اور حکومت میں حصہ لینے کے لئے راضی کرنے میں کامیاب ہوا،([[محمد بن حسن مہدی|امام غائب]] کے عقیدہ پر) جس سے ماضی میں انہوں نے دستبرداری اختیار کر رکھی تھی۔ ۔ <ref>[https://books.google.com/books?id=G-M3IRh22moC&pg=PT52&dq=sunni+iran&lr=&as_brr=3&cd=300#v=onepage&q=sunni%20iran&f=false Science under Islam: rise, decline and revival, By S. M. Deen, pg.37]</ref>
 
== ایران سے باہر تبدیلیاں ==