شاہ عبدالرزاق ہانسوی

شاہ عبدالرزاق ہانسوی سلسلہ قادریہ رزاقیہ کے بانی ہیں۔

ولادتترميم

سید عبدالرزاق کی ولادت کا سال 1048ھ بمطابق 1638ء ہے

نسبترميم

شاہ عبدالرزاق کا سلسلہ نسب 25 واسطوں سے امام محمد الباقر تک پہنچتا ہے آپ کے مورث اعلیٰ بدخشاں سے ہندوستان آئے تھے

مولدترميم

سید سید عبدالرزاق کا ننہال وطن ہانسہ ضلع بارہ بنکی اور ددھیال دریاباد ضلع بارہ بنکی سے متصل ایک قصبہ محمودآباد کا ایک گاؤں رسول پور میں تھا۔

ہجرتترميم

آپ کی ولادت دریاباد ضلع بارہ بنکی میں ہوئی جہاں سے ان کے والد سید عبدالرحیم ترک وطن کرکے اپنے سسرال چلے آئے

تعلیم و تربیتترميم

شاہ عبدالرزاق کم عمری میں اپنے وطن ہانسہ ضلع بارہ بنکی سے برائے تعلیم رودلی ضلع بارہ بنکی بھیجے گے راستہ میں ایک درویش شاہ عنایت اللہ سے ملاقات ہوئی جس کی وجہ سے سفر کی سمت سے دستبردار ہوکر اس منزل کی طرف قدم بڑھا دیے جہاں سے ان کو فرائض انجام دینا تھا جو انھیں تفویض کیا گیا ملا نظام الدین مناقب رزاقیہ میں فرماتے ہیں بچپن میں حروف وخط ( لکھائی پڑھائی) سے شناسائی نہیں ہو سکی سوائے اس کے خورد سالی میں قرآن شریف پڑھا تھا اور زبان فارسی سے اس طرح شناسائی پیدا کی جیسا کہ ہند میں رواج تھا کہ بچوں کو فارسی زبان سے صرف مانوس کراتے ہیں یوں کے پہلے حروف کے تلفظ اور نقوش سے واقف کراتے ہیں اور جب سمجھ اس سے مانوس ہو جاتی ہے تو جو اس سے نقوش کے معنی بتاتے ہیں

بیعتترميم

شاہ عنایت اللہ کی تلاش میں احمد آباد گجرات گئے اور وہاں جاکر میرسید عبدالصمد خدا نما سے قادریہ سلسلے میں مرید ہوئے۔سلسلہ قادریہ رزاقیہ کے بانی بھی آپ ہیں

ملازمتترميم

ملازمت کے سلسلے میں کچھ حصہ فوج کی ملازمت میں بھی گزارا جب گھر میں واپس آئے تو بھائیوں نے شادی کرلی تھی والدین فوت ہو گے اس لیے گھر کو خیر باد کہا

وفاتترميم

شاہ عبدالرزاق ہانسوی کی بدھ 6 شوال 1136ھ بمطابق 17 جون 1724ء کو 86 سال کی عمر میں ہوا [1]

  1. بانی درس نظامی، محمد رضا انصاری فرنگی محلی، انصاری فاؤنڈیشن پاکستانفیض پور خورد ضلع شیخو پورہ